نظم

آبنائے

         اقتدارجاوید

آنکھ کے آبنائے میں
ڈوبا مچھیرا نہ جانے
فلک تاز دھارے میں
گاتی ‘ نہاتی ہوئی سرخ لڑکی کی جاں
اس مچھیرے میں ھے
لڑکی کے گیتوں میں
لنگر انداز کشتی ھے ‘
لہروں کی کروٹ ھے ‘
ساحل کا پھل ھے ‘
مچھیرے کی تازہ جوانی ھے ‘
مستی بھرا نیلا پانی ھے

لڑکی امنڈتی ھوئی وقت کی دھار ھے
جس کے ریلے سے
محشر بپا کرتی لہریں نکلتی ھیں
لڑکی سمندر ھے
گہرے سمندر کی گھمبیر خاموشی’
پانی سے اڑتی ہوئی ڈاریں’
چکنے کنارے
ہر اک چیز لڑکی کے گیتوں کے اندر ھے
لڑکی’پرندہ ھے ۔۔۔۔۔۔۔ آبی پرندہ
سمندر کے بے انت سینے پہ
اڑتا ھے صدیوں سے
صدیوں سے لمبی معمر چٹانوں سے جڑتا ھے
مڑتا ھے واپس
سمندر کے بے انت پھیلاو کی سمت
لڑکی کوئی معجزہ ھے
سمندر میں جونہی اترتی ھے
پانی کو رنگین کرتی ھے
لہروں کی چادر اٹھا تی ھے
موتی بناتی ھے
موتی بناتے ھوے گیت گاتی ھے
لڑکی کے گیتوں کے معنی
فقط اس مچھیرے پہ روشن ھیں
جو آنکھ کے آبنائے میں ڈوبا پڑا ھے !!!

km

About Author

1 Comment

  1. TigoBigem

    جولائی 13, 2019

    azithromycin methylprednisolone obat gusi bengkak Гў When I got to Vancouver, the twins, Hank and Danny Sedin, were both 25 years old 36 hour cialis online Qualitest Respa Pharmaceuticals Inc

Leave a comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

You may also like

نظم

ایک نظم

  • جولائی 11, 2019
       از : یوسف خالد اک دائرہ ہے دائرے میں آگ ہے اور آگ کے روشن تپش آمیز
نظم

ایک نثری نظم

  • جولائی 14, 2019
از : یونس خیال اس بار ساون میں مرے کچے مکان کی دیواریں زمین بوس ہوگئیں ان کی مٹی گھل