ہواکے ہاتھوں میں برچھیاں ہیں


    آصف شفیق
ہَوا کے ہاتھوں میں برچھیاں ہیں
جو سرد راتوں میں
شب اسیروں کے
ننگے جسموں کو
سرد مہری سے کاٹتی ہیں
ہَوا کے ہاتھوں میں برچھیاں ہیں
جو زرد موسم میں
خشک پتوں کے زرد لاشوں کو
بھوکی دھرتی کا رزق بننے کو
چھوڑ دیتی ہیں راستوں میں
ہَوا کے ہاتھوں میں برچھیاں ہیں

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post