غزل ۔۔۔ شاعرہ : فرح خان


        فرح خان
ربط بیکار مسافت    کا سمٹ جائے فرح                      ایک سایہ مرے پاؤں سے لپٹ    جائے فرح
عکس دیوار پہ سر پٹخیں بکھر جائیں اور                      یاد    کی گرد سے اک    آئنہ    اٹ جائے فرح
کان دستک کو ترستے رہیں اک عمر مگر                     ہاتھ    دروازے تلک    آئے , پلٹ جائے فرح
ہجر آباد ہو      امید کی شاخیں چھو کر                     وصل کا پیڑ کچھ اس طرح سے کٹ جائے فرح
ایک مدت سے نہیں خواب میں آیاوہ شخص               اب یہ بہتر ہے مری آنکھ ہی پھٹ جائے فرح

You might also like
  1. نثار محمود تاثیر says

    کیا کہنے….. بہت عمدہ غزل ہے

  2. نثار محمود تاثیر says

    فرح صاحبہ کو اتنی عمدہ غزل پہ. مبارکباد پیش کرتا ہوں

  3. Zubyr Qaisar says

    Kia kehny

  4. Zubyr Qaisar says

    واااہ

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post