کُچھ کھٹی میٹھی یادیں(47)


نیلما ناہید درانی
میرے استاد ۔۔۔ میرے راہنما
لوگ کہتے ہیں محبت زندگی میں ایک بار ھوتی ہے۔۔۔۔لیکن میرا خیال ہے کہ ہم محبت میں بار بار مبتلا ہوتے ھیں۔۔۔اور ھر محبت میں اتنی ھی شدت اور سچائئ ھوتی ہے۔۔۔۔یہ الگ بات ھے کہ ھر محبت کا دورانیہ مختلف ھوتا ہےاور جس سے محبت ھو جائے اس کی جنس ،نسل، زندہ یا مردہ ہونا بھی کوئی معنی نہیں رکھتا۔۔۔۔
ویسے بھی ہم ماضی پرست لوگ ہیں۔۔۔ماضی میں رہنا اور ماضی کے کرداروں سے محبت کرنا پسند کرتے ہیں۔۔۔
میری پہلی محبت ۔۔۔۔میری پہلی کلاس کی ٹیچر تھی۔۔۔۔ھم پڑھنے سے زیادہ اس کو دیکھتے۔۔۔۔اور گھر آ کر اپنا سبق بھی اس لیے یاد کرتے ۔۔۔۔کہ اگلے روز ٹیچر کی داد پا سکیں۔۔۔۔لیکن جونہی ھم نے پہلی کلاس پاس کی۔۔۔۔ھماری ٹیچر کی بھی ترقی ھو گئی۔۔۔ان کو تیسری کلاس کی ٹیچر لگا دیا گیا۔۔۔۔
ھم دوسری کلاس میں تھے۔۔۔روزانہ صبح بستہ پکڑ کر سکول جاتے مگر اپنی کلاس میں بیٹھنے کی بجائے۔۔۔۔تیسری جماعت کے دروازے پر کھڑے ھو جاتے۔۔۔۔ھمیں تیسری کلاس میں داخل ھونے کی اجازت نہیں تھی۔۔۔ھم دن بھر دروازے میں کھڑے رھتے۔۔۔ھماری کلاس ٹیچر ھمیں بلانے آتیں۔۔۔مگر ھم ان کے ساتھ نہ جاتے۔۔۔سکول کی پرنسپل نے بلا کر سمجھایا۔۔۔ڈانٹا۔۔۔مگر سب ھماری ضد کے سامنے ہار گئے۔۔۔
آخر کار پرنسپل نے میرے والد کو خط لکھا کہ مجھے تیسری جماعت کی کتابیں لے دیں۔۔۔۔گھر پر خصوصی محنت کروائیں۔۔۔اب ھم آپ کی بیٹی کو اگلی کلاس میں داخل کر رھے ہیں۔۔۔۔
میری ڈبل پروموشن ھو چکی تھی۔۔۔مگر اب میری پسندیدہ ٹیچر نے مجھے ڈانٹنا شروع کر دیا تھا۔۔۔۔شاید وہ جان بوجھ کر ایسا کر رہی تھیں۔۔۔۔
کیونکہ جب اگلے سال میں نے امتحان پاس کیا تو میں اس ٹیچر سے ملے بغیر اپنی نئی کلاس میں چلی گئی۔۔۔۔
مجھے ان کا نام تک یاد نہیں۔۔۔شاید میری اس پہلی محبت کی معیاد ختم ہو چکی تھی۔۔۔۔
بچوں کی کہانیاں تو چوتھی کلاس میں ہی لکھنی شروع کر دیں۔۔۔۔دیواروں کے لکھے اشتہارات پڑھنا۔۔۔پسندیدہ مشغلہ تھا۔۔۔۔گھر میں موجود بچوں کے رسالوں، ادبی کتابوں کے ساتھ مذھبی کتابیں پڑھ پڑھ کر لکھنے کی تحریک ہوتی۔جب پہلی کہانی جناب نظر زیدی نے اپنے رسالے ھدایت میں چھاپی۔۔۔۔تو مزید کہانیاں لکھنی شروع کیں۔۔۔
ساتویں جماعت میں ریڈیو پاکستان لاھور میں بچوں کے بیت بازی کے پروگرام میں حصہ لیا۔۔۔۔جس کے لیے ھماری ٹیچر گلشن نے ھمیں تیاری کروائی تھی۔۔۔۔انھی دنوں ریڈیو پر مہدی حسن کی گائی ہوئی فیض احمد فیض کی غزل۔۔۔’’چلے بھی آو کہ گلشن کا کاروبار چلے ‘‘۔۔۔ نشر ہوتی۔۔۔۔تو ھم پہروں سوچتے۔۔۔کہ ھماری مس گلشن کا ایسا کون سا کاروبار ہے۔۔۔۔جو چل نہیں رہا۔۔۔۔۔
مس گلشن کی شادی نہیں ھوئی تھی۔۔۔ھمارا خیال تھا کہ ان کا منگیتر کہیں دور رھتا ہے ۔۔۔وہ آئے گا تو ان کا کاروبار چلے گا۔۔۔۔میں نے ریڈیو کے لیے بچوں کی کہانیاں لکھنی شروع کیں۔۔۔۔جو عفت انعام کی آواز میں روزانہ شام کو ریڈیو پر نشر ھوتی تھیں۔۔۔۔
ہائی سکول میں گرل گائیڈ بھی بن گئی۔۔۔جہاں میری استاد مسز برکی تھیں۔۔۔میری کلاس ٹیچر ایک دھان پان سی لڑکی تھیں۔۔۔جن کا نام مس شمیم کرمانی تھا۔۔۔۔سکول کی پرنسپل مسز زیدی تھیں۔۔۔اور وائس پرنسپل مسز لطیف۔۔۔
مسز زیدی گوری چٹی مہربان صورت پرنسپل تھیں۔۔۔۔ان کے بر عکس مسز لطیف لحیم شحیم خاتون تھیں جن کے چہرے کی سنجیدگی ہی طالبات کو ھراساں کرنے کے لیے کافی تھی۔۔۔۔
مس کرمانی بہت اچھی استاد تھیں۔۔ وہ ھمیشہ میری حوصلہ افزائی کرتیں۔۔۔ میرے لکھے مضامین پر داد دیتیں۔۔۔کیونکہ میرے لکھے ھوئے نصابی مضامین بھی ساری کلاس سے مختلف ہوتے تھے۔۔۔مگر ان سے محبت نہیں ہوئی۔۔۔
مسز برکی میری بہت حوصلہ افزائی کرتی تھیں۔۔۔تقریری مقابلے ہوں۔۔۔گرل گائیڈ کے پروگرام ھوں۔۔۔ڈرامہ ھو ۔۔۔کوئی ورائٹی پروگرام ھو۔۔۔یا سکول کا مینا بازار۔۔۔۔ھر موقع پر مسز برکی۔۔۔مجھ پر اعتماد کرتیں۔۔۔اور میں ھر جگہ نمایاں ھوتی۔۔۔
گیمز کے میدان میں مس گلشن مجھے ڈھونڈتیں۔۔۔بیڈ منٹن کے مقابلوں کے لیے وہ مجھے ساتھ رکھتیں۔۔۔
گائیڈ ھاوس میں گرل گائیڈ کا کیمپ لگایا گیا۔۔۔۔میں کیمپ میں بیمار ہو گئی۔۔۔کیمپ انچارج نے میرا بہت خیال رکھا۔۔۔مجھے گھر تک چھوڑنے آئیں۔۔۔۔ھم اس کی محبت میں مبتلا ہو گئے۔۔۔
لیکن کچھ دن بعد ان کو بھول کر۔۔۔اپنے سکول کی ٹیچر مسز طاھرہ۔۔۔سے عشق ہو گیا۔۔۔۔میری کلاس فیلو صوفیہ بھی اس محبت میں میری شریک تھی۔۔۔مسز طاھرہ ھماری کلاس ٹیچر نہیں تھیں۔۔۔
میں اور صوفیہ اپنے فارغ پیریڈ میں مسز طاھرہ کی کلاس کے باھر کھڑے ہو کر انھیں دیکھتے رہتے۔۔۔
پھر وائس پرنسپل مسز لطیف کی گرجدار آواز سے ڈر کر واپس اپنی کلاس میں آجاتے۔۔۔۔
ریڈیو پر ایک دن اک سانولی سلونی دبلی پتلی نہایت سمارٹ چمکتی آنکھوں والی لڑکی سے ملاقات ھوئی۔۔۔اس کے بال، اس کی آواز، اس کا لباس غرض وہ ھر انداز سے اتنی پیاری تھی۔۔۔کہ اس سے عشق ھو گیا۔۔۔۔
وہ حسینہ ادیبہ، صحافی اور صداکارہ۔۔۔۔سلمی جبین تھی۔۔۔۔
سلمی جبین کو میرے لکھنے کا پتہ چلا تو انھوں نے مجھےاپنے اخبار کوھستان کے بچوں کے صفحے کے لیے لکھنے کی دعوت دی۔۔۔۔وہ مجھے اپنے ساتھ کوھستان اخبار کے دفتر لے کر گئی۔۔۔۔جہاں کوھستان اخبار کے مالک اشرف طاھر سے ملوایا۔۔۔اور کہا کہ یہ بچوں کے صفحے کے لیے لکھا کریں گی
اشرف طاھر ٹی وی کی معروف اداکارہ روبینہ اشرف کے والد تھے۔۔۔۔ابھی کچھ دن ھی گزرے تھے کہ سلمی جبین اخبار کی ملازمت چھوڑ کر چلی گئیں۔۔۔۔
میرے لیے یہ ایک صدمہ تھا۔۔۔۔وہ کہاں گئیں کسی نے مجھے نہیں بتایا۔۔۔اشرف طاھر نے مجھے کہا کہ آپ خواتین صفحے کی انچارج بن جائیں۔۔۔
میں نے کہا میرے لیے ممکن نہیں۔۔۔انھوں نے اپنے پاس بیٹھے شخص کا تعارف کرواتے ہوئے کہا۔۔۔۔یہ اعجاز رضوی ہیں۔۔۔۔یہ آپ کی مدد کریں گے۔۔۔۔
لیکن اتنی بڑی ذمہ داری اٹھاتے ھوئے میں گھبرا رہی تھی۔۔۔۔اعجاز رضوی ھمارے گھر آئے انھوں نے میرے ڈیڈی سے بات کی۔۔۔۔اور ان کو یقین دلایا کہ میری پڑھائی کا حرج نہیں ھوگا۔۔۔۔میں اس کی پڑھائی میں بھی اس کی رھنمائی کروں گا۔۔۔۔
اس دن سے معروف صحافی اعجاز رضوی میرے استاد بن گئے۔۔۔اور میں ان کو اعجاز بھائی کہنے لگی۔۔۔۔
دو ماہ بعد ھی کوھستان بند ہوگیا۔۔۔۔لیکن اعجاز بھائی ایک اچھے استاد ، اچھے گائیڈ کی طرح ھر مشکل وقت میں میرا حوصلہ بڑھاتے رہے۔۔۔کچھ دن پہلے طفیل اختر دادا نے یاد دلایا۔۔۔۔تو بہت سی پرانی یادیں تازہ ھوئیں۔۔۔۔
سلمی جبین۔۔۔۔مشہور فلمی اداکار سید نور کی بھی استاد رہی تھیں۔۔۔اور کوھستان کے بچوں کے صفحے میں ان سے بھی لکھوایا کرتی تھیں۔۔بہت سالوں بعد۔۔۔۔سلمی جبیں سے دوبارہ ملاقات ھوئی۔۔۔۔وہ جرمنی میں رھتی تھیں۔۔۔۔وائس آف جرمنی کے لیے کام کرتی تھیں۔۔۔
اظہر جاوید کے دفتر تخلیق میں۔۔۔پرانی انارکلی میں بیٹھی ھوئی تھیں۔۔۔۔اتنے برس گزرنے کے بعد بھی وہ اتنی ہی حسین اور پر کشش تھیں۔۔۔میں نے ان سے اپنی پرانی عقیدت کا اظہار کیا۔۔۔۔وہ بہت خوش ھوئیں۔۔۔
میں ان کو ویمن پولیس ٹریننگ سکول قربان لائین لے گئی۔۔۔انھوں نے سکول کی ڈاکومنٹری بنائی۔۔۔۔وہ جب تک پاکستان میں ٹھہریں ۔۔۔کئی بار مجھے ملنے آئیں۔۔۔۔
اشرف طاھرنے کوھستان کے بعد بہت برا وقت گزارا۔۔۔۔مشرق اخبار میں بطور سب ایڈیٹر کام کیا۔۔۔۔سخت علالت کے باعث ھسپتال میں داخل ھوئے۔۔۔۔مشرق کے مالک۔۔۔ ھسپتال میں ان کی بیمار پرسی کے لیے گئے۔۔۔ تو اشرف طاھر کی بیگم پسند آگئیں۔۔۔۔اشرف طاھر کے مرنے کے بعد۔۔۔انھوں نے اشرف طاھر کی بیوہ سے شادی کرلی۔۔۔۔
حنیف رامے کی ادارت میں پیپلز پارٹی کا اخبار مساوات جاری ھوا تو
اعجاز رضوی نے مساوات اخبار میں ملازمت کرلی۔۔۔اور اس کے بعد۔۔۔۔فرنٹئیر پوسٹ۔۔۔خبریں۔۔۔
شورش کاشمیری کے بیٹے ۔۔۔مسعود شورش۔۔۔۔نے اخبار “چٹان “کا دوبارہ اجرا کیا تو اس میں آ گئے۔۔۔۔
میری ان سے آخری ملاقات “چٹان ” کے دفتر میں ھی ھوئی۔۔۔
مسعود شورش کا چار سالہ بیٹا۔۔۔۔شوکت خانم ھسپتال میں داخل تھا۔۔۔۔
میں اس کی بیمار پرسی کے لیے گئی تھی۔۔۔
پھر کئی برس گزر گئے۔۔۔ایک روز خاور نعیم ھاشمی کی پوسٹ سے پتہ چلا کہ اعجاز رضوی بھائی بیمار ہیں۔۔۔۔
میں اپنی بہن عنبرین کے ساتھ۔۔۔ان کے گھر گئی۔۔۔۔اندرون لاھوری گیٹ میں۔۔۔ایک تنگ گلی میں وہ گھر۔۔۔جس کی نچلی منزل امام بارگاہ تھی۔۔۔۔
دروازہ کھٹکھٹانے پر ان کی سب سے چھوٹی بیٹی شازیہ نے دروازہ کھولا۔۔۔اس نے بتایا کے اس کے والد وفات پا چکے ہیں۔۔۔۔۔اور کچھ دن بعد ہی ان کی والدہ بھی وفات پا چکی ہیں۔۔۔۔۔اعجاز رضوی کی چار بیٹیاں تھیں۔۔۔کوئی اولاد نرینہ نہیں تھی۔۔۔ان کے ساتھی صحافی بہت امیرانہ زندگی گزار رھے تھے۔۔۔۔مگر انھوں نے ساری زندگی اسی آبائی گھر میں گزاری۔۔۔ان کے پاس کوئی ٹرانسپورٹ بھی نہیں تھی۔۔۔۔وہ ھمیشہ پیدل چلتے ھوئے لاھوری گیٹ سے مال روڈ تک جاتے۔۔۔۔یا پھر رکشہ اور پبلک ٹرانسپورٹ میں سفر کرتے رہے۔۔۔۔ان کی بیماری کے ایام میں ان کے پاس اتنی رقم نہیں تھی کہ ان کا اچھی طرح علاج ھو سکتا۔۔۔۔
ان کی دو بیٹیاں ڈاکٹر ھیں۔۔۔۔ایک امریکہ میں مقیم ہے۔۔۔۔لیکن ان کی خود داری۔۔۔۔نے انھیں کسی سے مدد مانگنے نہیں دی۔۔۔۔
ایسے درویش لوگ بھی اسی دنیا میں ہمارے ساتھ رہتے ہیں۔۔۔۔مگر ہم ان کو پہچان نہیں سکتے۔۔۔۔
     ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جاری ہے
نیلما ناہید درانی

You might also like
Loading...