کُچھ کھٹی میٹھی یادیں(۱۹)


از: نیلما ناہید درانی 
انسانی رشتوں کا زوال۔۔۔۔۔کالجوں کے گرد چکر لگانے والے بابے ۔
ہم گڑھی شاھو لاھور کی فضل سٹریٹ میں رہ رھے تھے۔۔۔۔دن پولیس کی ڈیوٹی میں گزرتا۔۔ شام پی ٹی وی کی اناونسمنٹ کرتے ھوئے، صبح سات بجے گھر سے جا کر رات گیارہ بجے واپسی ہوتی۔۔۔نیند کا ایسا غلبہ ھوتا کہ دوسرے روز صبح ہی آنکھ کھلتی۔۔۔۔
اچانک اطلاح ملی۔۔سسر صاحب بیمار ہیں۔۔۔
ان کی بیمار پرسی کو گئے تو انھوں نے زاروقطار رونا شروع کردیا۔۔۔
“میں لاوارث ہو گیا ہوں ” وہ اس جملے کی تکرار کر کے روتے جا رہے تھے۔۔۔ان کی بیگم۔بیٹیاں اور داماد ان کے ارد گرد بیٹھے تھے۔۔۔مگر کوئی ان کا علاج نہ کروا رھا تھا۔۔۔میں نے ان کو تسلی دی ” ان کے بیٹے ھیں بیٹیاں ھیں بیوی ہے۔۔وہ ایسا کیوں سوچ رھے ہیں۔”۔۔۔۔ اسی وقت پولیس لائن سے ایمبولینس منگوائی اور ان کو فیملی ھسپتال جو مزنگ کے قریب تھا لے گئی۔۔۔ ڈاکٹرز نے چیک اپ کرنے کے بعد انھیں ھسپتال میں داخل کر لیا۔۔۔علاج شروع ہو گیا۔۔۔۔
ہم روزانہ شام کو ان کی بیمار پرسی کو ھسپتال جاتے۔۔ ایک دن گئے تو وہ ھسپتال میں موجود نہیں تھے۔۔۔عملے نے بتایا کہ ان کی بیٹیاں ان کو لے گئی ھیں۔۔۔ڈاکٹرز نے چھٹی نہیں دی۔۔۔ھم گھر پہنچے تو ان کے گرد سب بیٹیاں اور داماد بیٹھے تھے ایک وکیل بھی تھا۔۔۔وہ ان سے مکان بیٹیوں کے نام لگوانے پر اصرار کر رھے تھے۔۔۔اور سسر صاحب ان کی کسی بات کا جواب نہیں دے رھے تھے۔۔۔میں حیران تھی یہ کیسے لوگ ھیں جو باپ کی صحت و سلامتی کی دعا کرنے کی بجائے۔۔۔ان کو زندگی میں ھی یہ احساس دلا رھے ھیں کہ وہ مرنے والے ھیں۔۔۔۔میں نے ان سے کہا “پہلے ان کا علاج ھونے دیں۔۔۔اس کے بعد جو چاھے لکھوا لیں۔۔۔ھمارا واپس آنے کا کوئی ارادہ نہیں”۔۔۔۔میں نے دوبارہ ایمبولینس منگوائی۔۔۔۔سسر صاحب کو ھسپتال داخل کروایا۔۔۔ان کا کامیاب آپریشن ھوا۔۔۔۔۔ان کا بڑا بیٹا جو فوج میں میجر تھا اور کراچی میں رھتا تھا۔۔۔وہ بھی آگیا۔۔اس نے ھمارے گھر آ کر کہا” میں نے تو لاھور میں رھنا نہیں۔۔۔ایسا کرتے ھیں مکان بیچ دیتے ھیں۔”۔۔میں نے حیران ھو کر کہا “اپنے والد کی زندگی میں آپ ایسا کیسے سوچ رھے ھیں”۔۔۔۔اپنی چھٹی گزار کر وہ تو چلا گیا لیکن اپنی بیوی اور دو بچوں کو چھوڑ گیا۔۔۔۔
اس کی بیوی اپنے بچے لے کر ھمارے گھر آجاتی۔۔۔میں تو گھر پر موجود نہیں ھوتی تھی۔۔۔شام کو میرے گھر آنے سے پہلے واپس چلی جاتی۔۔۔۔مجھے اس کا اس طرح آنا عجیب لگتا تھا۔۔۔۔اس کا کہنا تھا کہ وہ نندوں کی باتوں سے گھبرا کر آتی ہے۔۔۔۔ کچھ دن رہ کر وہ بھی کراچی واپس چلی گئی۔۔۔
سسر صاحب ھسپتال میں تھے ان کی حالت بہتر ھو رھی تھی۔۔۔وہ میرے شوھر سے کہتے گھر واپس آجاو۔۔۔۔لیکن وہ مسلسل انکار کرتے۔۔۔
آخر والد کے اصرار پر واپس گھر جانے کا ارادہ کر لیا۔۔۔
جبکہ میں اس فیصلہ پر خوش نہیں تھی۔۔۔۔جس روز ھم نے اپنا سامان۔۔۔شفٹ کیا۔۔۔اور ھسپتال جاکر ان کو بتایا آج ھم گھر واپس آ گئے ھیں۔۔۔
اسی رات ھسپتال سے فون آگیا کہ شاہ صاحب وفات پا گئے ھیں۔۔۔۔
میں اسی وقت ھسپتال پہنچی اور ان کی ڈیڈ باڈی کو گھر لے کر آئی۔۔
وہ محکمہ آبپاشی سے ایکس ای این ریٹائرڈ تھے۔۔۔آٹھ بچوں کے باپ تھے۔۔۔۔ مگر کسی کو ان سے کوئی دلچسپی نہیں تھی۔۔۔نا کوئی آنکھ ان کے لیے اشکبار تھی۔۔۔۔۔انسانی رشتوں کے زوال کی ایسی داستان میں نے اس سے پہلے کبھی نہیں دیکھی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں سوچ رھی تھی ساری زندگی کی محنت اور ریاضت سے انھوں نے کیا کمایا تھا۔۔۔۔۔۔صرف ایمانداری یا نیک نامی۔۔۔۔اپنے سب ان سے نالاں تھے۔۔۔۔
زندگی میں بھی ان کی حیثیت ایک کمرے کے قیدی کی تھی۔۔۔جہاں سے وہ ھر ماہ کی پہلی تاریخ کو پنشن لینے کے لیے نکلتے اور پنشن لاکر اپنی بیگم کے ھاتھ میں رکھ کر۔۔۔اپنے کمرے میں اپنے پلنگ پر لیٹ جاتے۔۔۔۔وہ نا تو کہیں آتے جاتے تھے۔۔۔نا کسی سے بات کرتے تھے۔۔۔۔ان کے کمرے میں چاروں طرف کتابوں سے بھرے ھوئے ریک تھے۔۔۔۔جو کتاب انھوں نے پڑھی ھوتی اس پر تاریخ کے ساتھ دستخط کیے ھوتے۔۔۔
ان کی وفات کے چند دن بعد ھی ایک کباڑیے کو بلا کر سب کتابیں بیچ دی گئیں۔۔۔۔
ایک روز میرے شوھر کو عدالت کا نوٹس موصول ھوا۔۔۔۔۔جس میں لکھا تھا کہ وہ مکا ن پر ناجائز قابض ھے جبکہ شریعت کے حساب سے والدہ، بھائی اور بہنوں کے حصے بنتے ھیں جو مکان کو نیلام کر کے سب کو ادا کئے جائیں۔۔۔
سب لوگ اسی گھر میں رہ رہے تھے۔۔۔ھمارے پاس صرف بالائی منزل کے دو کمرے تھے۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسی دوران مجھے ایس ایس پی لاھور جہانگیر مرزا نے ایک نئی ذمہ داری سونپی۔۔۔
لاھور کے خواتین کے سب کالجوں کے باھر کھڑے ھو کر۔۔۔۔طالبات کو تنگ کرنے اور چھیڑنے والےلڑکوں کے خلاف آپریشن کرنا تھا۔۔۔۔مجھے اس آپریشن کے لیے10 خواتین پولیس آفیسرز کے ساتھ 10 مرد ای ایس آئی بھی دیے گئے۔۔۔جن میں رانا منیر، شہزادہ سلیم، بابر اعوان اور طاھر عالم خان شامل تھے۔۔۔
ان کو لاھور کالج۔۔اپوا کالج اور کنیرڈکالج کے باھر تعینات کر دیا گیا۔۔۔جوں ھی کوئی منچلا لڑکیوں کو چھیڑنے کی کوشش کرتا۔۔۔یہ کمانڈوز اس کو پکڑ لیتے۔۔۔اور سول لائن پولیس اسٹیشن لے آتے۔۔۔جنہیں ڈرا دھمکا کر چھوڑ دیا جاتا۔۔۔میں روزانہ کارکردگی کی رپورٹ دینے ایس ایس پی لاھور کے آفس جاتی۔۔۔
اس پندرہ روزہ آپریشن کے دوران بڑے انکشافات ہوئے۔۔۔۔نو عمر لڑکے تو جیب میں رقعہ لکھ کر آتے ۔۔۔جو “جان من ” جیسے القاب سے شروع ھوتا اور وہ کسی بھی دکھائی دینے والی لڑکی کے پاس پھینک کر بھاگ جاتے۔۔۔۔یہ عام طور پر سائیکل یا موٹر سائیکل پر ہوتے۔۔۔
لیکن لڑکیوں کے کالجوں کے باھر چکر کا ٹنے والے زیادہ تر ادھیڑ عمر لوگ ہوتے۔۔۔۔جو کسی شعبہ میں افسر ھوتے یا پھر کاروباری۔۔۔یہ گاڑیوں میں آتے تھے۔۔۔اور لڑکیوں کو دیکھ کر اپنی گاڑی کا دروازہ کھول دیتے اور انھیں ساتھ بیٹھنے کی پیشکش کرتے۔۔۔۔
کئی چہرے بےنقاب ھوئے اور پھر یہ آپریشن بند کردیا گیا۔۔۔
                                                                                         (جاری ہے)
نیلما ناھید درانی

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post