I had a bad habit

I had a bad habit

Poem By: Bilal Ahmed

Translated into English by Salma Jilani

I had a bad habit

How teased and annoyed you were, by my habit

when used to walk with you by holding the finger of amazement

Vines of sweet smile

used to climbed all over my body with dispensation

and a deep singing water of touch
lit up every vein
glowworms of touch and butterflies of smile were my toys

Tied on them into her scarf’s edges,
whenever she gone far away

I had to run behind,
encircled into a string of speculative fear

From all the people and every path,
used ask your address

Now,
by holding the finger of amazement
you have gone to such a place

all the markets and alleys, all the houses and terraces

are wrapped up into a deep fog

Are ascribed with the yester

Standing at this square of fog,
I am wondering with moist eyes

whom should I stop?
And ask? ’ve you seen my mother

this was the path she had taken.

With a bad habit of mine,
how teased and annoyed I’m

میری ایک بری عادت تھی
شاعر: بلال احمد
میری ایک بری عادت تھی
تُو میری عادت کے ہاتھوں کیسی زچ اور کتنی دق تھی
جب حیرت کی انگلی تھامے تیرے ساتھ چلا کرتا تھا
اک شیریں مسکان کی بیلیں
میرے تن بوٹے کے اوپر استحقاق سے چڑھتی تھیں
اور اک لمس کا گاتا پانی نس نس دیپ جلاتا تھا
لمس کے جگنو اور مسکان کی تتلی میرے کھلونے تھے
ان کو پلو میں باندھے تو جب بھی دور کہیں جاتی تھی
میں وسواس کی ڈور سے لپٹا پیچھے پیچھے آجاتا تھا
سب لوگوں سے، ہر رستے سے تیرا پتہ پوچھا کرتا تھا
اب حیرت کی انگلی تھامے تُو اک ایسے دیس گئی ہے
جس کے سب بازار اور گلیاں، سارے گھر اور سب چوبارے
گہری دھند میں سربستہ ہیں
گزرے کل سے پیوستہ ہیں
میں اس دھند کے چوراہے پر نم آنکھوں سے سوچ رہا ہوں
کس کو روکوں؟ کس سے پوچھوں؟ کیا میری ماں کو دیکھا ہے
اس رستے سے ہو کے گئی تھی
اپنی ایک بری عادت سے کیسا زچ اور کتنا دق ہوں
-‍—————-

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post