Wall of Kaaba

Wall of Kaaba

Poem By : Bilal Ahmed

Translated into English by Salma Jilani

While holding me,
you used to visit friends,
loved ones, markets and the office

I’ve remembered all of this

often in semi-opacous alleys of the city

I used to listen a footfall of fright
coming from behind my childhood’s translucent,
innocent eyes feared ruthless familiar faces

The glass of my heart
started chipping with this unspecified fear
which even hadn’t any sound

This was the fear,
couldn’t have a single interpretation

But in my babyish heart,

There was an haunted Bo-tree’s root

(That one day you will leave me all alone, somewhere there)

whose branches,
ridging out through the terrified eyes
kept me shivering like an aspen leaf

Your chest was like the wall of Kaaba,
while embracing to it
I had to be liberated from all kind of earthly worries

Your benign lips were like the doors of paradise
this was just not a kiss that opened the door of tenderness

through which a warmness all wrapped up into sweet softness

kept my days brightened, my nights balmy

Fear,
the fear of darkness,
the fear of city’s dark and narrow alleys
has always been part of my childhood,

Fear,
the fear of a creepy person standing in the way of school

Who himself feared with us

Fear,
the fear of witches possessing the forbidden terraces
which is been the story of all times

Well, these fears always been part of the childhood

Even now have fear of ruthless, but familiar faces

the scared child within me,
still searching that wall of Kaaba,
the safe haven

The city,
market, friends’ corner, and office are all there,
the wall of Kaaba is no more

In this day of cold November, I still used to shiver

when you left me all alone

Poet: Bilal Ahmed

Translated into English by Salma Jilani

دیوارِکعبہ 
تُو مجھے گود میں لے کے یاروں، عزیزوں میں، بازار و دفتر میں جاتا
مجھے یاد ہے یہ
شہر کی نیم تاریک گلیوں میں اکثر
میں سنتا تھا اک ڈر کی چاپ اپنے پیچھے سے آتی
میرے بچپن کی شفاف، معصوم آنکھوں میں نامہرباں جانے پہچانے چہروں کا ڈر تھا
میرے دل کا یہ شیشہ اک انہونے ڈر سے تڑخنے لگا تھا
کہ جس کی صدا تک نہیں تھی
یہ وہ ڈر تھا کہ جس کی کوئی ایک تشریح ممکن نہیں تھی
مگر میرے کچے سے دل میں،
ایک آسیبی پیپل کی جڑ تھی
(کہ مجھ کو تُو اک دن انہی میں اکیلا کہیں چھوڑ دے گا)
جس کی شاخیں، ہراساں سی آنکھوں سے نکلی وہ شاخیں
مجھ بیدِ مجنوں سے لرزائے رکھتیں
تیرا سینہ وہ دیوارِکعبہ تھا جس سے چمٹ کر
میں دنیا کے ہرڈر سے بیگانہ ہوتا
تیرے مشفق دو لب گویا بابِ حرم تھے
وہ بوسہ نہیں تھا حلاوت کا در اِک کُھلا تھا
جس سے شیریں لطافت میں گوندھی تمازت
مرے دن کو تاباں، مری رات کو گرم رکھتی
ڈر، اندھیرے کا ڈر شہر کی تنگ و تاریک گلیوں کا ڈر
میرے بچپن کا حصہ رہا ہے،
ڈر، وہ اسکول کے راستے میں کھڑے ایک مجہول انساں کا ڈر
جس کو خود ہم سے ڈر تھا
ڈر، وہ متروک بالیں پہ ڈیرا کیے کچھ چڑیلوں کا ڈر
جو ہمیشہ کا قصہ رہا ہے
خیر یہ ڈر تو بچپن کا حصہ ہوئے
بے مروت، شناسا سے چہروں کا ڈر ہے ابھی بھی
میرے اندر کا سہما سا بچہ وہ دیوارکعبہ ابھی ڈھونڈتا ہے
کہ جس میں اماں تھی
شہر و بازار و کوچہ و دفتر سلامت، وہ دیوارِکعبہ مگر اب نہیں ہے
میں نومبر کے اُس سرد دن میں ٹھٹھرتا ہوں اب بھی
کہ جب تُو اکیلا مجھے کر گیا تھا۔
شاعر: بلال احمد

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post