چلو پھر یاد کرتے ہیں


شاعر : محمد جاوید انور
چلو پھر بات کرتے ہیں
کسی تنہا شجر کو ہم
کہ جس کی سبز شاخوں نے
کبھی ہم کو چھپایا تھا
کہ جس کے گیلے پتوں سے
تمہارے گال چپکے تھے
چلو ہم یاد کرتے ہیں
کسی منہ زور بارش کو
کہ جس کی تیز بوندوں نے
اچانک آ لیا تھا اور
کوئی تنہا شجر تھا
جس کی شاخیں
ہم پہ جھکتی تھیں
ہمیں خود میں چھپاتی تھیں
ہمیں خود میں سمو کر
یوں کہ جیسے اک بناتی تھیں
جھکی شاخوں کی چھتری میں
امر اک پل بتایا تھا
چلو پھر یاد کرتے ہیں
کسی تنہا شجر کو ہم
جو اک رستے میں آیا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جاوید انور۔

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post