لوح بھی تو قلم بھی تو تیرا وجود الکتاب


علامہ محمداقبال ؒ
لوح بھی تو قلم بھی تو تیرا وجود الکتاب
گنبدِ آبگینہ رنگ تیرے محیط میں حجاب
عالمِ آب وخاک میں تیرے حضورکافروغ
ذرہء ریگ  کو  دیا  تو   نے طلوعِ آفتاب
شوکتِ سنجر وسلیم تیرے جلال کی نمود
فقرِ  جنید و با یزید تیرا جمال  بے نقاب
شوق  تیرا اگر نہ ہو میری نماز کا اِمام
میرا قیام بھی حجاب، میراسجود بھی حجاب
تیری  نگاہِ ناز  سے  دونوں مراد پا  گئے
عقل غیاب و جستجو،عشقِ حضورواضطراب

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post