غزل ۔۔۔ شاعر:احمدفراز

احمد فراز
سکوتِ شامِ خزاں ہے قریب آ جاؤ
بڑا    اداس سماں ہے قریب    آ جاؤ
نہ تم کوخود پہ بھروسا نہ ہم کوزعمِ وفا
نہ    اعتبارِ جہاں    ہے    قریب آ جاؤ
رہِ طلب میں کسی کوکسی کادھیان نہیں
ہجومِ ہم سفراں    ہے    قریب آ جاؤ
جودشتِ عشق میں بچھڑے وہ عمربھرنہ ملے
یہاں دھواں ہی دھواں ہے قریب آ جاؤ
یہ آندھیاں ہیں تو شہرِ وفا کی خیر نہیں
زمانہ    خاک     فشاں ہے قریب    آ جاؤ
فقیہِ شہر کی مجلس نہیں    کہ دور    رہو
یہ    بزمِ پیرِ مغاں    ہے    قریب آ جاؤ
فراز دور کے سورج    غروب سمجھے    گئے
یہ دورِ کم نظراں    ہے    قریب    آ جاؤ
You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post