جوتری بزم سے نکلا،سو پریشاں نکلا


شاعر: اسد اللہ خان غالبؔ
شوق ، ہر رنگ رقیبِ سروساماں    نکلا
قیسؔ ،تصویر کے پردے میں بھی عریاں نکلا
زخم نے داد نہ دی تنگیِ دل کی یارب!
تیربھی  سینہٗ بسمل سے    پرافشاں نکلا
بوئے گل، نالہٗ دل، دودِ چراغِ محفل
جوتری بزم سے نکلا ،  سو پریشاں نکلا
تھی نہ آموزِ فنا ہمتِ دشوار پسند
سخت مشکل ہے کہ یہ کام بھی آساں نکلا
دل میں پھرگریے نے اک شوراٹھایاغالبؔ
آہ! جوقطرہ نہ نکلا تھا ، سو طوفاں نکلا
   

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post