کیاآج وہی کشمیر ہے یہ…نظم:ابن عظیم ؔ فاطمی


ابن عظیم ؔ فاطمی
وادی کیوں سُونی سُونی ہے سب لڑکے، بالے کہاں گئے
کیوں چُپ ہے چناروں کی سرگم، وہ چاند، وہ ہالے کہاں گئے
کیوں مجھ کو فضا سے ۤآتی ہے بارُود کی بُو سی سانسوں میں
گُل مینا، سوسن و چمپا کے وہ سارے حوالے کہاں گئے
میں جی اُٹھتا تھاجا ۤکے جہاں  وہ دھرتی میرے وِیر ہے یہ
اک جنتِ ارضی تھی دھرتی کیا ۤآج وہی کشمیر ہے یہ
اک ظالم و جابر کے ہاتھوں تاراج ہوئی ہے یہ وادی
مائیں، بہنیں، بچـے، بوڑھے سب ۤآج بنے ہیں فریادی
اک جسم کی صورت سُنتے تھے دنیا میں مسلماں ہوتے ہیں
پھر تنہا ہیں ہم کیوں اب تک کیوں رُکتی نہیں ہے بربادی
اب کون بتائے گا ہم کو کیوں بگڑی ہوئی تصویر ہے یہ
اک جنتِ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم قید ہوئے ہیں یوں گھر میں، مجرم ہیں سبھی، زندانی ہیں
اک رب کے سوا کوئی بھی نہیں، باہر لشکر شیطانی ہیں
اُجڑا ہے چمن، نامُوس لُٹی، اور تار ہیں سارے پیراہن
اور ۤآس لگائے بیٹھے ہیں کرگس ، چمگادڑ،زاغ،زغن
اس دہر میں ہم انسانوں کی جو ہوتی ہے توقیر ہے یہ
اک جنتِ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جاری ہے ہماری نسل کُشی، خاموش تماشائی ہیں سب
سب اپنی غرض کے مارے ہیں انھیں ہم سے نہیں ہے کچھ مطلب
سب عیش و طرب کے متوالے، کیوں ابنِ عظیمؔ ہے شکوہ بہ لب
اور کانپ رہا ہے خوف سے تُونازل نہ ہو رب کا غیض و غضب
جو کاٹ رہی ہے سینوں کو اک پوشیدہ شمشیر ہے یہ
اک جنتِ ارضی تھی دھرتی کیا ۤج وہی کشمیر ہے یہ
ابن عظیم ؔ فاطمی۔۔کراچی

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post