کبھی اُس سے پُوچھنا ہے : محمدجاویدانور


محمدجاویدانور
کبھی اُس سے پُوچھنا ھے
کہ بتا بھلا تُو کیا ھے
کسی چاندنی کی چادر
کسی گُل کی دھیمی خُوشبُو
کسی حُور کا تبسم
کسی موج کی روانی
کسی پیار کی نشانی
کسی ھاتھ کی بُناوٹ
کسی قہقہے کی مستی
کسی آنکھ کی شرارت
کسی شام کا دُھندھلکا
کسی صُبح کی تراوت
کسی سارباں کا نغمہ
کسی کہکشاں کی دُوری
کسی شوخ کاتکلم
کوئی نُور کا ھیولی’
کوئی بے سبب اُداسی
کوئی بے زُبان شکوہ
کوئی ناتمام حسرت
کوئی پُرسرُور بوسہ
گئے ساونوں کی رم جھم
نئی کونپلوں کی نرمی
وجد آفریں اشارہ
کبھی اُس سے پُوچھنا ھے
کبھی پُوچھنا ھے اُس سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post