غزل : ڈاکٹرخورشید رضوی

مَیں سوچتا تھا کہ وہ زخم بھر گیا کہ نہیں
کُھلا دریچہ ‘ دَر آئی صبا ‘ کہا کہ ” نہیں “

ہَوا کا رُخ تو اُسی بام و دَر کی جانِب ہے
پہُنچ رہی ہے وہاں تک مِری صدا کہ نہیں

لبوں سے آج سَر ِ بزم آ گئی تھی بات
مگر وہ تیری نگاہوں کی اِلتجا کہ ” نہیں “

زباں پہ کچھ نہ سہی ‘ سُن کے میرا حال ِ تباہ
تِرے ضمیر میں اُبھری کوئی دُعا کہ نہیں

خود اپنا حال سُناتے حجاب آتا ہے
ہے بزم میں کوئی دیرینہ آشنا کہ نہیں

ابھی کچھ اِس سے بھی نازُک مقام آئیں گے
کرُوں مَیں پھر سے کہانی کی اِبتداؑ کہ نہیں

پڑو نہ عشق میں خُورشیدؔ ! ہم نہ کہتے تھے
تُمہی بتاؤ کہ جی کا زِیاں ہُوا کہ نہیں

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post