جون ایلیا کی غزلیں (۱)


جون ایلیا
(۱)
نہیں نباہی خوشی سے ، غمی کو چھوڑ دیا
تمہارے بعد بھی میں نے کئی کو چھوڑ دیا
ہوں جو بھی جان کی جاں وہ گمان ہوتے ہیں
سبھی تھے جان کی جاں اورسبھی کوچھوڑدیا
شعور ایک  شعورِ فریب  ہے  سو  تو  ہے
غرض  کہ  آگہی ، نا آگہی  کو  چھوڑ دیا
خیال وخواب کی اندیشگی کے سُکھ جھیلے
خیال و خواب کی اندیشگی کو چھوڑ دیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(۲)
مہک  سے اپنی  گَلِ تازہ  مست رہتا  ہے
وہ رنگِ رُخ ہے کہ خود غازہ مست رہتا ہے
نگاہ سے کبھی گزرا نہیں وہ مست انداز
مگر خیال   سے ، اندازہ مست رہتا ہے
کہاں سے ہے رَسدِ نشہ،اس کی خلوت میں
کہ رنگ مست کا اندازہ  مست رہتا ہے
یہاں کبھی کوئی آیا  نہیں مگر سرِ شام
بس اک گمان سے دروازہ مست رہتا ہے
مجھے خیال کی مستی میں کس کا اندازہ
خدا  نہیں  جو باندازہ  مست  رہتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(۳)
چلو  بادِ بہاری جا رہی  ہے
پِیاجی کی سواری جا رہی ہے
شمالِ جاودانِ سبز جاں  سے
تمنا کی عماری جا رہی ہے
فغاں اے دشمنی دارِِ دل و جاں
مری حالت سُدھاری جارہی ہے
جو اِن روزوں مراغم ہے وہ یہ ہے
کہ غم سے بُردباری جا رہی   ہے
ہے سینے میں عجب اک حشر برپا
کہ دل سے بے قراری جا رہی ہے
میں  پیہم  ہار کر یہ  سوچتا  ہوں
وہ کیا شہ ہے جو ہاری جارہی ہے
دل اُس کے رُو برو ہے اور گُم صُم
کوئی عرضی گزاری جا رہی  ہے
وہ سید بچہ ہو اور شیخ کے ساتھ
میاں عزت  ہماری  جا  رہی ہے
ہے  برپا  ہر گلی میں شورِ نغمہ
مری  فریاد  ماری جا  رہی ہے
وہ یاد اب ہورہی ہے دل سے رُخصت
میاں پیاروں کی پیاری جا رہی ہے
دریغا ! تیری نزدیکی میاں جان
تری دوری پہ واری جا رہی ہے
بہت  بدحال  ہیں بستی ترے لوگ
تو پھر تُوکیوں سنواری جا رہی ہے
تری  مرہم نگاہی  اے   مسیحا!
خراشِ دل پہ واری جا رہی ہے
خرابے میں عجب تھا شور برپا
دلوں سے انتظاری جا رہی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(۴)
دل جو دیوانہ نہیں آخر کو  دیوانہ بھی تھا
بھُولنے پر اس کو جب آیا تو پہچانا بھی تھا
جانیے کس شوق میں رشتے بچھڑ کررہ گئے
کام تو کوئی   نہیں تھا  پر ہمیں جانا بھی تھا
اجنبی سا ایک موسم ایک بے موسم سی شام
جب اُسے آنا نہیں تھا ، جب اُسے آنا بھی تھا
جانیے کیوں دل کی وحشت درمیاں میں آ گئی
بس یونہی ہم کو بہکنا بھی تھا بہکانا بھی تھا
اک مہکتا سا وہ لمحہ تھا کہ جیسے اک خیال
اک زمانے تک اسی لمحے کو تڑپانا بھی تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(۵)
عیشِ اُمید  ہی  سے  خطرہ ہے
دل کواب دل دہی سے خطرہ ہے
ہے کچھ ایساکہ اس کی جلوت میں
ہمیں  اپنی  کمی  سے  خطرہ ہے
جس  کے  آغوش  کا ہوں  دیوانہ
اس کے آغوش ہی سے خطرہ ہے
یاد کی دھوپ تو ہے روز کی بات
ہاں مجھے چاندنی سے خطرہ ہے
ہے عجب  کچھ   معاملہ  درپیش
عقل  کو  آگہی  سے  خطرہ ہے
شہر غدار جان  لے کہ  تجھے
ایک امروہوی سے خطرہ ہے
ہے  عجب  طورِ  حالتِ گریہ
کہ مژہ کو نمی سے خطرہ ہے
حال  خوش لکھنو  کا  دلّی کا
بس انہیں مصحفی سے خطرہ ہے
آسمانوں     میں  ہے  خدا  تنہا
اور ہر آدمی  سے  خطرہ ہے
میں کہوں کس طرح یہ بات اس سے
تجھ کو جانم مجھی سے خطرہ ہے
آج  بھی  اے   کنارِ بان  مجھے
تیری اک سانولی سے خطرہ ہے
ان  لبوں  کا  لہو نہ  پی  جاؤں
اپنی تشنہ لبی سے خطرہ ہے
اب  نہیں  کوئی بات خطرے کی
اب سبھی کو سبھی سے خطرہ ہے
جونؔ ہی تو ہے جونؔ کے درپے
میرؔ کو میرؔ ہی سے خطرہ ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(۶)
کب   پتا یار کو  ہم  اپنے لکھا کرتے ہیں
جانے ہم خودمیں کہ ناخودمیں رہاکرتے ہیں
اب  تم   شہر کے آداب   سمجھ  لو جانی
جو مِلا ہی نہیں کرتے وہ مِلا کرتے ہیں
جہلا علم   کی  تعظیم   میں برباد  گئے
جہل کا عیش جو ہے وہ علما کرتے ہیں
لمحے لمحے میں جیو جان اگر جینا ہے
یعنی ہم حرصِ بقا کو بھی فنا کرتے ہیں
جانے اس کوچۂ حالت کاہے کیاحال کہ ہم
اپنے حجرے سے بہ مشکل ہی اُٹھاکرتے ہیں
میں جوکچھ بھی نہیں کرتاہوں یہ ہے میراسوال
اور سب لوگ جو کرتے ہیں وہ کیا کرتے ہیں
اب  یہ  ہے حالتِ احوال  کہ  اک یاد  سے  ہم
شام  ہوتی  ہے  تو  بس  رُوٹھ  لیا  کرتے ہیں
جس  کو  برباد  کیا  اس  کے  فدا کاروں نے
ہم  اب  اس  شہر کی  رُوداد  سنا  کرتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(۷)
کام کی بات میں نے کی ہی نہیں
یہ  میرا  طورِ زندگی  ہی  نہیں
اے  اُمید ، اے  اُمیدِ  نو   میداں
مجھ سے میّت تیری اُٹھی ہی نہیں
میں جو تھا اِس گلی کا مست خرام
اس گلی میں میری چلی ہی نہیں
یہ سنا ہے کہ میرے کوچ کے بعد
اُس کی خوشبو کہیں بسی ہی نہیں
تھی  جو اِک  فاختہ  اُداس  اُداس
صبح وہ شاخ سے اُڑی ہی نہیں
مجھ میں اب میرا جی  نہیں لگتا
اور ستم یہ کے میرا جی ہی نہیں
جائیے  اور  خاک  اڑائیں   آپ
اب وہ گھرکیا کہ وہ گلی ہی نہیں
ہائے وہ شوق جو نہیں تھا کبھی
ہائے وہ زندگی جو تھی ہی نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(۸)
سب چلے جاؤ مجھ میں تاب نہیں
نام  کو  بھی اب اِضطراب نہیں
خون کردوں تیرے شباب کا میں
مجھ  سا قاتل  تیرا  شباب نہیں
اِک کتابِ وجود ہے تو صحیح
شاید اُس میں دُعا  کا باب نہیں
توجوپڑھتا ہے بو علی کی کتاب
کیا  یہ عالم  کوئی  کتاب نہیں
ہم  کتابی صدا  کے  ہیں لیکن
حسبِ منشا  کوئی کتاب نہیں
بھول  جانا  نہیں  گناہ  اُسے
یاد  کرنا  اُسے  ثواب نہیں
پڑھ لیا  اُس کی یاد  کا نسخہ
اُس میں شہرت کاکوئی باب نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(۹)
اب  کسی سے  میرا  حساب  نہیں
میری آنکھوں میں کوئی خواب نہیں
خون  کے  گھونٹ پی رہا ہوں میں
یہ مِرا خون   ہے   ،  شراب  نہیں
میں سرابی ہوں میری آس نا چھین
تو  میری   آس  ہے ، سراب  نہیں
غم ابد  کا نہیں ہے  اُن کا ہے
اور اس کا  کوئی حساب نہیں
بودش اک رَو ہے ایک رَو یعنی
اس کی فطرت میں انقلاب نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(۱۰)
زخمِ امید  بھر  گیا  کب  کا
قیس تو اپنے گھر گیا کب کا
اب تومنہ اپنا مت دکھاؤمجھے
ناصحو میں سدھر گیا کب کا
آپ اب پوچھنے کو آئے ہیں
دل مری جان مر گیا کب کا
آپ اک اور نیند  لے لیجے
قافلہ  کوچ   کر گیا  کب کا
میرا فہرست سے نکال دو نام
میں توخود سے مُکرگیاکب کا

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post