کرونا اور انکل کیوں : سیدہ آمنہ ریاض

آج میں بنک گئی اور پیسے نکلوانے کے بعد گروسری کرنے کے لئے سٹور کا رخ کیا۔ ۔۔سٹور کے باہر لمبی لائن تھی ۔جب میری باری آئی تو داخلی دروازے پر کھڑے گن مین نے میرے ہاتھوں پر سپرے کیا،اس کے ہاتھوں میں بندوق کی بجائے ہینڈ سینیٹائزر دیکھا تو سوچا۔۔۔۔۔یعنی اب ہمیں چوروں ڈاکووں سے خطرہ نہیں۔ ۔۔۔۔۔۔وااااہ رے کرونا تو ،تو بڑا مہان نکلا۔ ۔۔۔
خیر جب اندر داخل ہو گئی تو ہر شخص نے ماسک پہنا ہوا تھا اور دوسرے کو ایسی نظروں سے دیکھ رہا تھا جیسے کرونا کے جراثیم پھیلانے کا سبب وہی ہے۔
سچ پوچھییے۔۔۔۔۔۔تو میرا دل خون کے آنسو رونے لگا۔ ۔۔۔۔میرا دل کیا کہ میں اس ماحول۔ سے نکل کر کئی سال پیچھے پلٹ جاوں۔ ۔۔۔۔ان سالوں میں۔ ۔۔۔۔جب نظر آنے والی چیزوں کا خوف تھا۔ ۔۔۔ان سالوں میں۔ ۔۔۔۔۔۔۔جب محفلیں سجتی تھیں۔ ۔۔۔۔ان سالوں میں۔۔۔۔۔۔جب قہقہے گونجتے تھے۔ ۔۔۔۔۔۔۔ان سالوں میں۔ ۔۔۔۔۔جب عید پر رونقیں لگا کرتی تھیں۔ ۔۔۔۔۔ان سالوں میں۔ ۔۔۔۔۔جب رمضان میں مسجدوں میں گہما گہمی ہوا کرتی تھی۔
نہ جانے سالے۔ ۔۔۔وہ سال کہاں چلے گئے؟؟؟؟؟۔ ۔۔۔۔کیوں؟؟؟؟ ہم۔ سے وہ خوشیاں چھین لی گئیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔کیوں؟؟؟؟ہمیں الگ الگ جانوروں کی طرح رہنے پر مجبور کر دیا گیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔کیوں؟؟؟؟آخر کیوں؟ ؟؟؟کئی سال پہلے ایک مشہور ڈرامہ شب دیگ یاد آگیا۔ ۔۔۔جس میں مستانہ نے ایک حساس شہری کا کردار ادا کیا تھا۔ ۔۔جو ہر وقت اس معاشرے کی بے حسی پر سوال کرتا رہتا تھا کہ اس کا نام ہی انکل کیوں پڑ گیا۔ ۔۔۔۔۔۔مجھے لگا کہ جیسے میں وہ انکل کیوں ہوں۔ ۔۔۔۔۔اچانک مجھے اپنا آپ ہوا میں تحلیل ہوتا محسوس ہوا۔ ۔۔۔۔اور میں دیوانہ وار سٹور میں کھڑے ہر ہر شخص کے پاس جا کر پوچھنے لگی۔ ۔۔۔۔۔کیوں؟ ؟؟تم نے ماسک کیوں پہن رکھا ہے۔ ۔۔۔۔۔۔کیوں؟ ؟؟؟بازار سنسان ہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔کیوں؟ ؟؟تعلیمی ادارے بند ہیں۔ ۔۔۔۔۔۔کیوں؟ ؟؟؟میل ملاپ بند ہیں۔ ۔۔۔۔۔۔پھر مجھے لگا میری آواز کسی کو نہیں آ رہی۔ ۔۔۔۔۔۔میں نے شدت سے چلانا شروع کیا کہ۔۔۔۔کیوں؟ ؟؟میری آواز کوئی سن نہیں پا رہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یک دم مجھے محسوس ہوا کہ لوگ مجھے دیکھ کر قہقہے لگا رہے ہیں۔۔۔۔۔۔۔ارے پکڑو اس کو۔ ۔۔۔۔۔۔بڑی آئی۔ ۔۔کیوں کیوں کرنے والی۔ ۔۔۔۔۔۔۔
پھر مجھے لگا۔ ۔۔۔میں سب کی۔ نگاہوں کا مرکز بن گئی ۔۔۔۔۔۔آو ہم بتائیں تمہارے سارے کیوں؟ کا جواب۔ ۔۔۔۔۔۔کون سی رونقیں؟ کون سی محفلیں؟ کون سے میل ملاپ؟ سب جھوٹ تھا وہ۔ ۔۔۔۔۔۔ایک جنم تھا جو ختم ہوا۔ ۔۔۔۔۔اب یہ دوسرا جنم ہے۔ ۔۔۔۔یہاں کیوں۔۔۔۔۔ کہنے والے پر زندگی تنگ کر دی جائے گی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ارے یہ وہی زندگی ہے۔ ۔۔۔۔جس کی برسوں خواہش کی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔میری زندگی۔ ۔۔۔۔۔۔۔میرا لائف سٹائل۔ ۔۔۔۔۔۔میری گاڑی۔ ۔۔۔۔میرے بچے۔ ۔۔۔۔۔۔میں، میں کا ہی تو راگ الاپا ہے برسوں۔ ۔۔۔۔۔اب۔۔۔۔۔ہم۔۔۔۔۔۔نہیں ہو گا۔ ۔۔۔۔۔اب اس۔۔۔۔۔میں۔۔۔۔۔ کا مزہ چکھو۔ ۔۔۔۔اس ماحول کو ہم سب نے بڑے زور سے ریفلیکٹ کیا ہے۔ ۔۔۔۔۔اب، میں ۔۔۔۔۔ہی۔۔۔۔۔ میں ہے۔ ۔۔۔۔۔
میں زور زور سے رونے لگی تو پاس کھڑی عورت نے مجھ سے پوچھا خیرہے؟جب میرے آنسو گالوں پر بہ نکلے تو اپنا چہرہ ٹٹولنے لگی۔ ۔۔۔۔کہ وہ سب کیا تھا؟ ؟؟؟شائد جاگتے میں خواب دیکھا؟اگر وہ خواب تھا؟تو کبھی پورا نہ ہو۔ ۔۔۔۔۔😥

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post