رومان :  محمد جاوید انور


محمد جاوید انور
چاندنی آج پھر چاند سے مفرور میرے جیون آ کاش پر بکھری اپنا سکون کشید کرنے کے درپے تھی ۔
میں نے اندھیروں سے مہلت مانگ کر کہکشاؤں کی شاہراہ پر پھسلتے چاند نگر کی اس کٹیا میں پریم گھونسلا آباد کیا جو پریت گڑھ سے سانس بھر دوری پر تھا ۔
چاندنی کی ٹھنڈک اور سحر میری رگ رگ میں اُترتے جا رہے تھے ۔ میری آنکھوں کے رستے ، میری سانسوں کے ساتھ ، میری جلد کے پور پور میں سے سرائت کرتے ۔ یہ واردات میرے جسم تک محدود نہیں تھی ۔ مسحور کن روشنی میری روح کے بھی اندر تک گھستی جا رہی تھی ۔
خوشبودار روشنی سنی ہے کبھی ؟
دیکھی ہے کبھی ؟
محسوس کی ہے کبھی ؟
ان شبنمی راتوں میں میں نے چاندنی کی خوشبو سونگھی ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post