کُچھ کھٹی میٹھی یادیں (۳۶)


از:نیلما ناہید درانی
بیگم کلثوم نواز سے پہلی اور آخری ملاقات۔۔۔
ہماری رھائش گڑھی شاھو لاہور میں تھی۔۔۔بیگم احسان نے محلے کی تمام خواتین کو اپنے گھر مدعو کیا۔۔۔
جب میں وھاں پہنچی۔۔۔۔تو بیگم احسان کے صحن میں۔۔۔۔۔بیگم کلثوم۔۔۔بیگم عباس اور بیگم نصرت۔۔۔بہت ساری خواتین میں گھری بیٹھی تھیں۔۔۔۔سب خواتین ان سے ملنے پر خوش اور پر جوش دکھائی دے رہی تھیں۔۔۔۔وہ اپنے لیڈروں کی بیگمات کو دیکھ رھی تھیں ۔۔۔۔ان سے ہاتھ ملا رھی تھیں۔۔۔
بیگم نصرت کی نظر مجھ پر پڑی تو انھوں نے میرا نام پکارا۔۔۔۔مجھے خوشی ھوئی کہ انھوں نے سکول کے زمانے سے مجھے یاد رکھا ھوا ہے۔۔۔میرا نام سنتے ھی بیگم کلثوم میری طرف متوجہ ہوئیں۔۔۔۔اور انھوں نے کنفرم کرنے کے لیے پوچھا۔۔۔۔نیلما۔۔۔۔
جب میں نے اثبات میں سر ہلایا۔۔۔۔
تو انھوں نے میری نظم سنائی۔۔۔۔
میری گواھی آدھی ہے تو
میرا جرم بھی آدھا ہوگا
میرا حصہ آدھا ہے تو
میری سزا بھی آدھی ہو گی؟
میں نے حیرت سے پوچھا۔۔۔۔آپ کو یہ کیسے یاد ہے۔۔۔۔انھوں نے ھنستے ھوئے کہا۔۔۔
“میں ڈاکٹر سہیل احمد خان کی سٹوڈنٹ ھوں۔۔۔آپ کی کتاب انھوں نے مجھے دی تھی۔۔۔۔”
میں حیران تھی کہ اتنی پڑھی لکھی اور باذوق خاتون اس خاندان میں کیا کر رھی تھی۔۔۔
بیگم کلثوم نواز رستم ھند گاماں پہلوان کے خاندان سے تھیں۔۔۔اکی پہلوان۔۔۔جھارا پہلوان نے بھی اس خاندان کا نام آگے بڑھایا تھا۔۔۔
میں اپنی سکول کی سہیلی اتفاق فونڈری کے میاں بشیر کی بیٹی عظمت سے ملنے ان کے گھر چوک دالگراں جایا کرتی تھی۔۔۔جہاں سات بھائی اور ان کے خاندان اکھٹے رھتے تھے۔۔۔
کبھی کبھار عظمت کی والدہ اپنی بچیوں کو سکول سے لینے آتیں۔۔۔تو چھٹی سے پہلے دروازہ کھلنے کے انتظار میں اکثر ھمارے گھر ٹھہر جاتیں۔۔ ۔ ( ھمارا گھر سکول کے سامنے تھا )۔وہ بھی بہت سادہ اور معصوم خاتون تھیں۔۔۔۔ایکبار ان کو ھمارے محلے کی ایک عورت نے پوچھا۔۔۔
“آپ سات دیورانیاں جھیٹھانیاں ایک گھر میں رھتی ھیں۔۔۔آپ کا کبھی جھگڑا نہیں ھوا۔۔۔”
اس پر انھوں نے جواب دیا۔۔۔” جھگڑا وھاں ھوتا ہے۔۔جہاں ایک کے پاس ھو اور دوسرے کے پاس نہ ھو۔۔۔۔ھمیں ھر چیز ایک جیسی میسر ہے۔۔۔اس لیے اختلاف کی کوئی صورت نہیں ہوتی۔۔۔”
سال میں ایک یا دو بار اتفاق فونڈری والے ایک بڑے کھانے کا انتظام کرتے۔۔۔جس میں بہت سارے لوگ مدعو ھوتے۔۔۔۔عظمت کی دعوت پر ایک دو بار میں نے بھی شرکت کی۔۔۔مردوں کا انتظام گھر کی نچلی منزل پر ہوتا۔۔۔۔خواتین اور بچوں کے لیے گھر کی چھت پر کھانے کا انتظام کیا جاتا۔۔۔
یہاں گاماں پہلوان کے خاندان کی خواتین بھی شریک ھوتیں۔۔۔۔جو سب سے صحت مند، سرخ و سفید اور خوش لباس ھونے کے ساتھ سونے کے زیورات سے لدی ھوتیں۔۔۔۔
مجھے سونے کے زیورات میں لدی عورتیں بہت اچھی لگتی تھیں۔۔۔۔
ھمارے بچپن میں خواتین میں بھاری زیورات پہننے کا رواج بھی تھا۔۔۔میری پھوپھیاں۔۔۔دونوں ھاتھوں میں سونے کی چوڑیاں پہن کر لیہ سے لاھور کا سفر کرتیں۔۔۔۔ اور گرمیوں میں مری کا سفر کرتیں۔۔ گو سفری سہولیات اچھی نہیں تھیں۔۔۔۔لیکن کبھی کوئی ناخوشگوار واقعہ نہیں ہوا تھا۔۔۔۔
جرائم کم تھے لوگ صبر شکر سے زندگی گزارنے کے عادی تھے۔۔۔کوئی اپنے وسائل سے بڑھ کر زندگی گزارنے کی کوشش نہیں کرتا تھا۔۔۔۔
ایک دن مجھے عظمت کا فون آیا وہ مجھے ملنا چاھتی تھی۔۔۔میں ان کے گھر ماڈل ٹاون پہنچی۔۔۔۔وھاں عجیب منظر تھا۔۔۔۔۔
میاں بشیر کے گھر کو پولیس نے گھیرا ھوا تھا۔۔۔۔ خواتین پولیس بھی موجود تھی۔۔۔۔میں گھر کے اندر داخل ھوئی۔۔۔اتفاق فونڈری کی خواتین نے اپنے کزن نواز شریف کے خلاف جلوس نکالا ہوا تھا۔۔۔جس پر انھیں گھر سے باھر نکلنے نہیں دیا جارھا تھا۔۔۔۔
عظمت کا کہنا تھا۔۔۔۔ان سے پیسوں کا حساب لینا ہے۔۔۔ھمارے حصے کے پیسے استعمال کرکے یہ الیکشن لڑتے ھیں ۔۔۔۔اور اقتدار کے مزے لوٹتے ھیں۔۔۔۔
میاں شریف نے اپنے بیٹوں کو پڑھایا۔۔۔اور ھمارے بھائیوں کو ملوں میں لگائے رکھا۔۔۔ھم ان سے اپنے پیسوں کا حساب چاھتے ھیں۔۔۔۔
یہ ایسا مسٗلہ تھا ۔۔۔جس میں ۔۔۔میں عظمت کی کوئی مدد نہیں کر سکتی تھی۔۔۔
میں نے اس کو سمجھایا۔۔۔کہ یہ گھر کے معاملات ھیں بہتر ھے انھیں مل بیٹھ کر حل کر لیا جائے۔۔۔
واپسی پر میں سوچ رھی تھی۔۔۔۔عظمت کی والدہ نے ٹھیک کہا تھا۔۔۔لڑائی اس وقت ھوتی ھے۔۔۔جب تقسیم میں غلطی ہو۔۔۔۔۔اس وقت سب کو یکساں حصہ ملتا تھا۔۔۔
اب تقسیم غلط ھو گئی تھی۔۔۔۔اس لیے اتفاق ۔۔۔۔ ناتفاقی میں بدل چکا تھا۔۔۔۔
                                                                                                   (جاری ہے )
نیلما ناہید درانی

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post