کُچھ کھٹی میٹھی یادیں(۴۴)۔۔۔از: نیلمادرانی


از:نیلما ناہیددرانی
کہاں تک سنو گے۔۔۔۔ کہاں تک سناوں
داستان لمبی ھوتی جارہی ھے۔۔۔سوچتی ھوں پڑھنے والے تھک نہ جائیں۔۔۔یا بوریت نہ محسوس کریں۔۔۔اس کو مختصر کر دوں۔۔۔۔ یا اپنی پٹاری بند کر کے۔۔۔۔ باقی کہانی آیندہ کے لیے۔۔۔۔ چھوڑ دوں
میرے پسندیدہ شاعر ساحر لدھیانوی نے کہا تھا۔۔۔۔
وہ  افسانہ جسے انجام تک لانا نہ ھو ممکن
اسے اک خوبصورت موڑدے کرچھوڑنا اچھا۔
1997 کے آغاز میں جاپان کا سفر ھوا۔۔۔۔۔ جس کی یادیں۔۔۔ سفر نامہ جاہان کی صورت میں محفوظ ہیں۔۔۔
وھاں سے پاکستان واپسی ھوئی ۔۔۔ تو ایران کا سفر تیار تھا۔۔۔۔۔امام خمینی کی برسی کے موقع پر۔۔۔خانہ فرھنگ ایران کے ڈائرکٹر جنرل محمد علی بی تقصیر نے بلایا۔۔۔۔ میں نے روزنامہ پاکستان میں ۔۔۔آقائے صادق گنجی کے بارے میں کالم لکھا تھا۔۔۔۔۔جو ان کی نظر سے گزرا۔تھا۔۔۔۔
انھوں نے کہا ۔۔۔۔امام خمینی کی برسی کے موقع پر ھم ۔۔۔۔۔۔۔شاعروں، ادیبوں اور صحافیوں کا ایک وفد ایران بھیج رھے ھیں۔۔۔۔آپ کو اپنی فیملی کے ساتھ جانے کی خصوصی دعوت ھے۔۔۔
میں نے اپنے بچوں کے ساتھ اپنی امی اور بھائی آغا مزمل کانام بھی دے دیا۔۔۔۔مئی 1997 کے آخر میں بذریعہ ٹرین کوئٹہ اور کوئٹہ سے زاھدان گئے۔۔۔پندرہ روزہ سفر میں۔۔۔۔قم۔۔مشہد۔۔تہران۔۔کرج۔۔۔طوس۔۔اور نیشاہور دیکھا۔۔۔۔۔شاھنامہ فردوسی لکھنے والے شاعر فردوسی کا مزار دیکھا۔۔۔۔۔
فردوسی نے محمود غزنوی کی فرمائش پر شاھنامہ فردوسی لکھا تھا۔۔۔۔ محمود غزنوی نے ان سے ہر شعر کے بدلے سونے کا سکہ دینے کا وعدہ کیا تھا۔۔۔۔۔
مگر جب وہ شاھنامہ لکھ کر محمود غزنوی کے دربار میں گئے۔۔۔۔تو اس نے ھر شعر کے بدلے چاندی کا سکہ دیا۔۔۔۔ جس کو فردوسی نے قبول نہیں کیا اور دلگرفتہ واپس لوٹ گئے۔۔۔۔
کہتے ھیں بعد میں محمود غزنوی نے انھیں سونے کے سکے بھجوائے۔۔۔۔ لیکن جب یہ سکے وھاں پہنچے اس وقت فردوسی وفات پا چکے تھے۔۔۔۔۔ بعد ازاں ان کی بیٹی نے وہ سکے لینے سے انکار کر دیا۔۔۔۔
عمر خیام کا مزار دیکھنا میری دیرینہ خواھش تھی۔۔۔۔عمر خیام کی شاعری اور رباعیات مجھے پسند ھیں۔۔۔ وہ بھی میرے پسندیدہ شاعروں اور ادیبوں کی فہرست میں شامل ھیں۔۔۔۔
عمر خیام ماھر نجوم بھی تھے انھوں نے اپنی زندگی میں ہیپیش گوئی کی تھی کہ ان کی قبر ایسی جگہ ھو گی جہاں اس پر پھول گرتے رھیں گے۔۔۔۔
نیشاپور میں ان کا مزار بہترین آرکیٹکچر کا نمونہ ھے۔۔۔ جس پر چھت نہیں ھے۔۔۔۔چاروں طرف پھولوں والے درخت ھیں ۔۔۔ جہاں سے ان کی قبر پر ھر وقت پھول برستے رھتے ہیں۔۔۔۔
طوس میں وہ مقام دیکھا۔۔۔۔ جہاں ساتویں امام۔۔۔۔۔امام موسی کاظم کو زندان میں رکھا گیا تھا۔۔۔۔ مشھد مقدس۔۔۔۔۔فقہ جعفریہ کے آٹھویں امام ۔۔۔۔علی رضا کی نسبت سے زیارت گاہ خاص و عام ہے۔۔۔ان کا روضہ اقدس دن رات زائرین سے بھرا رھتا ہے۔۔۔۔
قم میں امام رضا کی بہن فاطمہ بنت موسی کاظم کا روضہ ہے۔۔۔۔ قم کے قریب۔۔۔۔ مسجد جمکران واقع ھے۔۔۔۔ایک روایت کے مطابق۔۔۔۔ ہر بدھ کی شب۔۔۔امام مہدی وھاں تشریف لاتے ھیں۔۔۔۔اور کسی ایک زائر کو اپنی زیارت سے شرف یاب کرتے ھیں۔۔۔۔۔
ایران کا شہر قم۔۔۔۔علمی درسگاہ کی نسبت سے بھی مشہور ھے۔۔۔ کرج ایک خوبصورت ماڈرن شہر تھا۔۔۔ جہاں یونیورسٹی بھی تھی۔۔۔ یہ شہر تہران کے قریب بسایا گیا ھے۔۔۔ تہران جو ایران کا دارالسلطنت ھے۔۔۔
یہاں حضرت امام خمینی کا عالیشان مزار ہے۔۔۔جہاں ان کی برسی کی مناسبت سے سیمینار۔۔۔اور جلسہ منعقد کیا گیا تھا۔۔۔۔
پندرہ روزہ سفر میں ۔۔۔۔میں صرف یہ سوچتی رھی کہ۔۔۔۔آقائے صادق گنجی نے اپنا وعدہ مرنے کے بعد بھی پورا کیا ہے۔۔۔۔ انھوں نے آخری ملاقات میں کہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔آئندہ ایران میں ملاقات ھوگی۔۔۔۔۔۔۔
میں نے جب لکھنا سیکھا تھا۔۔۔۔تو پہلے کہانیاں لکھنی شروع کیں۔۔۔۔پھر چھوٹی چھوٹی نظمیں۔۔۔۔۔ھمارے گھر میں ھر قسم کے رسالے آیا کرتے تھے۔۔۔۔ بچوں کے لیے۔۔۔بچوں کی دنیا۔۔۔تعلیم و تربیت۔۔۔ھدایت۔۔۔آتے ۔
امی کے لیے۔۔۔حور۔۔۔ذیب انسا۔۔۔اور اخبار خواتین۔۔۔۔
ڈیڈی۔کے لیے۔۔۔ شمع لاھور ۔۔۔ شمع دھلی۔۔۔اور۔۔۔ چاند
دادا جان کے لیے۔۔۔معارف اسلام۔۔۔ شہید۔۔۔ اور۔۔ اسد۔۔۔آتے
شہید کے ایڈیٹر مظفر علی شمسی تھے اور یہ رسالہ۔۔۔نسبت روڈ لاھور سے نکلتا تھا۔۔۔۔مظفر علی شمسی کے اسسٹنٹ۔۔۔جعفر علی میر تھے۔۔۔ جعفر علی میر۔۔۔۔۔مظفر علی شمسی کی وفات کے بعد بھی۔۔۔۔شہید نکالتے رھے۔۔۔۔اسد۔۔۔ کے ایڈیٹر۔۔۔شائق انبالوی تھے۔۔۔اور اس کا دفتر برف خانہ چوک میں تھا۔۔۔
گھر پر کتابوں کا بہت بڑا ذخیرہ تھا۔۔۔ میں نے سکول کے زمانے میں ھی بہت سے شاعروں ادیبوں کی تخلیقات ہڑھ لی تھیں۔۔۔۔
میں نے “واقعہ کربلا میں خواتین کا کردار ” کے عنوان سے مضمون لکھا۔۔۔
جس کو دیکھ کر دادا جان بہت خوش ھوئے۔۔۔اور انھوں نے وہ مضمون۔۔۔۔مظفر علی شمسی کو دیا۔۔۔جو شہید میں چھپ گیا۔۔۔۔ ابھی میں سکول میں ھی تھی کہ دادا جان وفات پاگئے۔۔۔۔ انھوں نے بہت سی کتابیں لکھی تھیں۔۔۔جو چھپ کر گھر آیا کرتی تھیں۔۔۔۔ لیکن افسوس۔۔۔ان کی وفات کے بعد کسی نے ان کتابوں کو نہیں سنبھالا۔۔۔
جب ھمیں شعور آیا۔۔۔۔ تو ان کتابوں کو ڈھونڈنے کی کوشش کی۔۔۔۔ لیکن بے سود۔۔۔
ایک روز میں۔۔۔۔اندرون موچی دروازہ جعفر علی میر کے گھر۔۔۔۔دادا جان کی کتابوں کا پتہ کرنے گئی۔۔۔۔تو ان کی بیٹی مریم سے دوستی ھوگئی۔۔۔ مریم بہت پیاری لڑکی تھی۔۔۔۔اس کی والدہ بھی بہت ملنسار تھیں۔۔۔
لاھور کے اندرون شہر میں رھنے والے۔۔۔ خالص لاھوریے۔۔۔۔ ملنسار اور مہمان نواز۔۔۔
انھوں نے۔۔۔۔اہنے ھاں منعقد ھونے والی۔۔۔۔ مجلس کی دعوت دی۔۔ھر سال28 صفر کو امام حسن کی شہادت کے موقع پر۔۔۔۔ان کے گھر کے باھر مجلس ھوتی تھی۔۔۔۔۔جو محسن نقوی اور علامہ عرفان حیدر عابدی پڑھتے تھے۔۔۔۔
میں اس موقع پر ان کے گھر گئی۔۔۔۔ مجلس کے اختتام پر۔۔۔۔۔علامہ عرفان حیدر عابدی۔۔۔ان کی بیگم سیدہ نیر۔۔۔بیٹی تمکین زھرہ سے بھی ملاقات ھوئی۔۔۔۔ ایک بار جعفر علی میر کی بیگم اپنی بیٹی مریم اور علامہ عرفان حیدر عابدی کی بیگم اور بیٹی کے ساتھ ھمارے گھر بھی آئیں۔۔۔۔
اس ملاقات کو برسوں بیت گئے تھے۔۔۔ان لوگوں سے کوئئ رابطہ نہیں تھا۔۔۔ ایک روز دفتر ٹائم کے بعد میں آفس میں تھی۔۔۔۔۔گھر جانے کی تیاری کر رھی تھی۔۔۔۔ کہ اردلی نے آ کر کہا۔۔۔آپ سے کچھ لوگ ملنے آئے ھیں۔۔۔۔ میں نے کہا ۔۔۔۔بلا لو
جب وہ کمرے میں داخل ھوئے تو میں حیرت زدہ ھو گئی۔۔۔۔ وہ علامہ عرفان حیدر عابدی تھے۔۔۔ان کے ساتھ ایک حسن نامی لڑکا تھا۔۔۔
وہ لڑکا کہہ رھا تھا۔۔۔ بہت دنوں سے علامہ صاحب نے اس کےذمہ لگا رکھا تھا۔۔۔۔کہ کسی طرح پتہ کرو نیلما کی ڈیوٹی کہاں پر ہے۔۔۔۔۔۔ وہ کچھ دیر میرے دفتر میں رکے۔۔۔م یں نے چائے کا پوچھا مگر انھوں نے منع کر دیا۔۔۔۔۔ میں نے سب کا حال احوال پوچھا۔۔۔ان کی بیٹی کی شادی ھو چکی تھی۔۔۔مریم بھی شادی کے بعد امریکہ جا چکی تھی۔۔۔۔
محسن نقوی کی شہادت کا ان سے افسوس کیا۔۔۔
انھوں نے بازو میں بڑے سے عقیق والی چاندی کی ایک کڑی۔۔۔پہن رکھی تھی۔۔۔ میں نے تعریف کی۔۔۔۔
جب وہ جانے لگے تو۔۔۔نا جانے کیا سوچ کر وہ کڑی بازو سے اتار کر مجھے دے دی۔۔۔۔
ابھی اس ملاقات کو چند دن ھی ھوئے تھے۔۔۔کہ خبر آئی۔۔۔علامہ عرفان حیدر عابدی کا ایکسیڈنٹ ھو گیا ہے۔۔۔ جس میں ان کی اہلیہ اور وہ جان بحق ھو گئے ھیں۔۔۔۔۔۔۔ خیر پور سے واپس کراچی آتے ھوئے ان کی گاڑی ٹول پلازہ کے پاس کھڑے ٹرالر سے ٹکرائی تھی۔۔۔۔۔۔۔
مریم کی سالگرہ 16 مئی کو ھوتی تھی۔۔۔۔مریم تو امریکہ میں تھی۔۔۔ان دنوں فیس بک۔۔۔ یا واٹس ایپ تو تھا نہیں۔۔۔۔۔میں نے سوچا۔۔۔جعفر علی میر کو فون کرکے۔۔۔۔اس کا حال دریافت کرتی ھوں۔۔۔۔ میں نے جعفر علی میر کو فون کیا۔۔۔ کہنے لگے مریم اہنا بچہ ھمارے پاس چھوڑ گئی ہے۔۔۔۔وہ میری گود میں بیٹھا ہے۔۔۔۔ سمجھ رھا ھے اس کی ماں کا فون ہے۔۔۔۔مجھ سے ریسیور چھین رھا ہے۔۔۔۔
میں نے انھیں بتایا ۔۔۔۔۔آج مریم کی سالگرہ ھے۔۔۔۔کہنے لگے اچھا کیا مجھے یاد کرا دیا۔۔۔۔میں ابھی اس کو فون کرتا ھوں۔۔۔۔ اگلے روز میں کسی کام سے موچی دروازہ گئی۔۔۔۔۔تو دیواروں پر جلی حروف میں اعلان لکھا تھا۔۔۔۔
جعفر علی میر وفات پاگئے ھیں۔۔۔ان کی نماز جنازہ بعد نماز عصر ھوگی۔۔۔ دنیا کی بے ثباتی پر دل پریشان تھا اور حیران بھی۔۔۔۔
کہ تین دوست۔۔۔ جعفر علی میر۔۔۔محسن نقوی۔۔۔علامہ عرفان حیدر عابدی۔۔۔۔۔جو عمروں کے تفاوت کے باوجود ھمہ وقت اور ھر جا اکھٹے رھتے تھے۔۔۔۔یکے بعد دیگرے۔۔۔۔۔دنیا سے رخصت ھوگئے تھے۔۔۔۔۔۔
(جاری ہے )
نیلما ناہید درانی

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post