کُچھ کھٹی میٹھی یادیں(۳۸)


از:نیلما ناہید درانی
نگاہیں۔۔۔۔۔اور کرونک میجر
         مجھے کچھ دن سے نگاہیں بہت یاد آرھی ہے۔۔۔۔۔۔ھر جمعرات کو وہ دروازے پر آ کر صدا لگاتی۔۔۔ میں اس کا حال پوچھتی۔۔۔۔اور وہ ڈھیروں دعائیں دے کر چلی جاتی۔
اس کا نام نگاہیں تھا۔۔۔۔جو اس کے گرو نے رکھا تھا۔۔۔۔سانولی رنگت ، عمر 24 یا 25 برس۔۔۔چھریرا بدن۔۔۔
نہایت سلیقے سے لباس پہنے۔۔۔ بیگ پکڑ کر۔۔۔ میک اپ سے سجے چہرے کے ساتھ وہ ھنستی ھوئی آتی۔۔۔اور ھنستی ھوئی۔۔۔۔واپس چلی جاتی۔۔۔عید پر نئے جوڑے کی فرمائش کرتی۔۔۔جو میں نے اس کے لیے پہلے سے لے کر رکھا ھوتا۔۔۔۔۔وہ اس کو بہت اھتمام سے سلوا کر پہنتی۔۔۔اور مجھے دکھانے آتی۔
ایک روز میں شام کو ایک سڑک سے گزر رھی تھی۔۔۔۔ایک رکشہ آکر میرے پاس رکا۔۔۔۔اس سے نگاھیں نیچے اتری۔۔۔۔اس نے مجھے کہا۔۔۔”۔دیکھیں میں نے آپ والا سوٹ پہنا ھے”۔۔۔۔ رکشہ میں اس کے علاوہ بھی اس کی دو ساتھی۔۔۔۔ زرق برق لباس میں بیٹھی تھیں۔۔۔۔اس نے ایک کی طرف اشارہ کر کے کہا۔۔۔” ۔یہ میری گرو ھے۔۔”۔۔
اس کی گرو بہت خوش شکل تھی۔۔۔اور نیلے چمکدار لباس میں بہت جچ رھی تھی۔۔۔۔
پھر یوں ھوا کہ۔۔۔۔کئی جمعراتیں گزر گئیں۔۔۔۔ نگاھیں نہیں آئی۔۔۔۔ سارا محلہ اس سے واقف تھا۔۔۔۔ میں نے مختلف لوگوں سے اس کے متعلق پوچھا۔۔۔
آخر کار مجھے اس کے گھر کا پتہ معلوم ھو گیا۔۔۔۔ایک دن میں اس کا گھر ڈھونڈتے ھوئے اس کا احوال معلوم کرنے چل پڑی۔۔۔۔
دل میں انجانا سا خوف بھی تھا۔۔۔ کہ ناجانے ان کا رھن سہن کیسا ھوگا۔۔۔۔ اور اس کے اقارب۔۔۔ میرے آنے کو کیسا محسوس کریں گے۔۔۔۔
میں اس بلڈنگ تک پہنچ گئی۔۔۔۔فلیٹ نمبر پانچ کی بیل بجائی۔۔۔۔ تو کسی نے اوپر سے چابی پھینک دی۔۔۔
میں نے گلی میں کھڑے ایک بچے کی مدد سے دروازہ کھولا ۔۔۔۔اور سیڑھیاں چڑھ گئی۔۔۔۔۔ نگاھیں کی پوری ٹانگ پر پلستر تھا۔۔۔۔اس نے مجھے دیکھ کر اٹھنے کی کوشش کی۔۔۔ مگر میں نے اسے منع کیا۔۔۔۔اس نے بتایا۔۔۔ کہ ایک روز پروگرام سے واپسی پر ان کا رکشہ الٹ گیا تھا۔۔۔۔ جس سے اس کی ٹانگ کی ھڈی ٹوٹ گئی تھی۔۔۔۔اس کی ساتھی۔۔۔اس کو ھسپتال لے کر گئیں جہاں سے اس کو پلستر لگا کر ادویات لکھ دی گئیں۔۔۔۔اب تین ماہ بعد یہ پلستر کھلے گا۔۔۔۔
میں نے اس کو کچھ پیسے دیے اور واپس آگئی۔۔۔۔میں مہینے میں ایکبار اس کا حال پوچھنے جاتی۔۔۔۔
میں نے محسوس کیا کہ میرے جانے پر محلے کی عورتیں۔۔۔ دروازوں کھڑکیوں سے جھانکنے لگتی ھیں۔۔۔
اور مجھے کئی نظریں خود کو گھورتی ھوئی محسوس ھو تیں۔۔۔۔ایکبار میں سیڑھیاں اتر رھی تھی۔۔۔کہ مجھے نگاھیں کی آواز آئی۔۔۔۔وہ بلند آوار میں کہہ رھی تھی۔
۔”۔۔آپا جی میں ٹھیک ھو کر آپ کے بیٹے کی خوشی میں ناچنے آوں گی۔”
مجھے لگا کہ یہ بات اس نے محلے کی کھڑیوں سے جھانکتی عورتوں کو سنانے کے لیے کی ھے۔۔۔۔اس کی یہ بات مجھے سالوں پیچھے لے گئی۔۔۔۔
جب میرا بیٹا پیدا ھوا تو۔۔۔ گلی میں ھیجڑے ناچنے آئے۔۔۔۔۔
مجھے ان کا آنا اچھا لگا۔۔۔ میں نے ان کو پیسے دیے۔۔۔تو انھوں نے بچے کی لوری گانا شروع کی۔۔۔۔
ان دنوں میرے شوھر کے بڑے بھائی آیے ھوے تھے۔۔۔ اور ان کو مکان کا بٹوارا کر کے۔۔۔اپنا حصہ وصول کرنے کی جلدی تھی۔۔۔۔وہ فوج میں میجر تھے۔۔۔۔۔ آٹھ بہن بھائیوں میں دوسرے نمبر پر۔۔۔۔جبکہ میرے شوھر کا ساتواں نمبر تھا۔۔۔۔ یوں ان دونوں کی عمر میں بارہ سال کا فرق تھا۔۔۔۔
آرٹلری کے میجر صاحب خاندان کے پہلے لڑکے تھے جنہیں فوج میں کمیشن ملا تھا۔۔۔۔لہزا سات خالاوں کی بیٹیاں ان سے رشتہ کی امید میں تھیں۔۔۔۔۔ سادات میں سیدانیوں کی تعداد زیادہ تھی۔۔۔اس لیے ایک انار اور صد بیمار والا معاملہ تھا۔۔
انھوں نے سب کو ٹھکرا کر۔۔۔۔آخر کار اپنی تایا زاد سے منگنی رچا لی۔۔۔۔
اور پھر اس منگیتر کو بھی چھوڑ کر کسی فوجی کی بیٹی سے شادی کرا لی۔۔۔۔اس دوران ان کی عمر بھی زیادہ ھو چکی تھی۔۔۔۔اور وہ میجر بھی بن چکے تھے۔۔۔۔۔فوج میں ان کو کرونک میجر کہا جاتا تھا۔۔۔۔
جب میری شادی ھوئی تو ان کا ایک بیٹا تھا۔۔۔۔اس کے بعد دو بیٹیاں بھی پیدا ھو چکی تھیں۔۔۔۔
بیوی زیادہ پڑھی لکھی نہیں تھی۔۔۔اس لیے مجھ سے خدا واسطے کا بیر تھا۔۔۔ وہ تو اللہ کا شکر کہ ان کی پوسٹنگ لاھور سے باھر ھی رھی۔۔۔ورنہ میرا جینا مزید دشوار ھوتا۔۔۔
میجر صاحب باھر نکلے اور ان ناچنے والوں کو گالیاں دے کر بھگا دیا۔۔۔
جون کا مہینہ تھا۔۔۔۔وہ نیچے کی منزل سے بجلی کا مین سوئچ بند کر دیتے۔۔۔۔اور میں دن بھر اپنے بچے کے ساتھ گرمی میں بیٹھی رھتی۔۔۔
شام کو میرے شوھر کے آنے سے پہلے۔۔ مین سوئچ آن کر دیا جاتا۔۔۔
میجر صاحب کو اس پر بھی تسلی نہ ھوتی۔۔۔ تو وہ میرے خلاف میرے محکمے میں کوئی نہ کوئی درخواست دے دیتے۔۔۔۔ کیونکہ وہ جانتے تھے کہ پولیس کہ محکمے میں کسی کے خلاف درخواست دینے پر اس کے خلاف محکمانہ کاروائی شروع ھو جاتی ھے۔۔۔۔
میرے افسروں کی مہربانی سےان درخواستوں سے مجھے کبھی کوئی نقصان نہیں ھوا۔۔۔۔لیکن ایک ذھنی اذیت تو بہر حال برداشت کرنا پڑتی تھی۔۔۔۔
نگاھیں ٹھیک ھوئی تو چند بار آئی۔۔۔۔ اور پھر اچانک غائب ھو گئی۔۔
اس بار میں اس کا پتہ کرنے گئی تو پتہ چلا۔۔۔۔۔ محلے والوں کے تنگ کرنے پر وہ لوگ یہاں سے جا چکے ھیں۔۔۔۔کہاں گئے کسی کو معلوم نہ تھا۔۔۔۔
میں سوچ رھی تھی۔۔۔۔ کہ ھم ان کو معاشرے کا حصہ کیوں نہیں سمجھتے۔۔۔۔ان کی ایک معذوری ان کے لیے اتنی بڑی اذیت کیوں ھوتی ھے کہ ان کے لیے زندہ رھنے کے راستے بند کر دیے جاتے ھیں۔۔۔ان کے لیے ایک ھی پیشہ کو مخصوص کردیا گیا ھے۔۔۔۔جبک وہ پڑھ لکھ کر یا کوئی ھنر سیکھ کر عام انسانوں جیسی زندگی گزار سکتے ھیں۔۔۔۔اگر ماں باپ اپنے پیدائشی اندھے ،بہرے اور گونگے بچوں کو خود سے جدا نہیں کرتے۔۔۔۔۔تو انھیں معاشرے کے خوف سے خود سے جدا کیوں کرتے ھیں۔۔۔۔۔
ان کی بہتر زندگی کے لیے۔۔۔عوام کی سوچ بدلنے کی ضرورت ھے ۔۔۔۔ حکام کو بھی ان کے لیے سہولیات مہیا کرنی چاہیئں۔۔۔۔تاکہ ان کو معاشرے کا مفید فرد بنایا جائے۔۔۔۔۔اور ان کے لیے آسانیاں پیدا کی جائیں۔۔۔۔
                                                                                 (جاری ہے)
نیلما ناہید درانی

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post