کُچھ کھٹی میٹھی یادیں(۲۳)


از: نیلما ناہید درانی
خوشبو بند ہے پنجرے میں۔
خاتون لائن آفیسر زینب بٹ نے مجھے کہا۔۔۔آپ خواتین پولیس کی انچارج ہیں۔۔اس لیے آپ کو شاھی قلعہ کی ڈیوٹی چیک کرنے جانا چاھیے۔۔۔۔اس وقت لاہور پولیس میں ۔۔میں واحد خاتون انسپکٹر تھی۔۔۔سہالہ سے واپس آ کر فرخندہ کی ڈیوٹی سپیشل برانچ پنجاب میں تھی۔۔۔۔مجھے پولیس لائنز ھیڈکوارٹر اور سول لائنز میں کام کرنا پڑتا تھا۔۔۔۔
میں ایک دن شاھی قلعہ ڈیوٹی چیک کرنے گئی۔۔۔جہاں ھماری بہت سی خواتین ڈیوٹی کر رہی تھیں۔۔۔
شاھی قلعہ کے مین گیٹ سے اوپر جانے والے راستے کے دائیں جانب۔۔۔جیل تھی۔۔۔۔جو شاید مغلیہ دور سے قائم تھی۔۔۔۔بغیر لائٹ کے تنگ و تاریک کمرے۔۔۔۔جہاں شاید کئی قسم کے جانوروں کا بھی مسکن ہو۔۔۔۔بہت تعداد میں تھے۔۔۔۔کچھ حوالات نما کمروں میں مرد بند تھے۔۔۔۔یہاں ھمیشہ سے ھی سیاسی قیدیوں کو رکھا جاتا تھا۔۔۔۔اب پیپلز پارٹی اور بھٹو کے وفادار اور طیارہ اغوا کیس میں پکڑے جانے والے بند تھے
ایک سیل میں رانا شوکت محمود کی بیگم تھیں۔۔۔۔ایک سیل میں شاعر شہرت بخاری کی سابقہ بیگم فرخندہ بخاری تھیں۔۔۔۔اور ایک سیل میں ایک نوجوان لڑکی تھی۔۔۔۔جس کا سیاست سے کوئی تعلق نہیں تھا۔۔۔۔اس کا نام نصرت تھا۔۔۔۔ اور وہ ایک بنک میں کام کرتی تھی۔۔۔ اس ۔کا قصور اتنا تھا کہ اس کا منگیتر افغانستان فرار ھونے سے پہلے اس سے آخری بار ملنے آیا تھا۔۔۔۔وہ مرتضی بھٹو کی تنظیم الذولفقار کا کارکن تھا۔۔۔۔اور اس سے الوداعی ملاقات کے جرم میں۔۔۔۔۔وہ شاہی قلعہ کی اذیت سہہ رہی تھی۔۔۔
کبھی مجرم بھی بچ جاتے ہیں نوک دار پر جا کر
کبھی ناکردہ جرموں کی سزائیں ساتھ رہتی ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسی شاھی قلعہ میں ایوب دور میں ناصر حسن کی تشدد کے باعث ہلاکت ہوئی تھی۔۔۔۔اس کے نام پر لوئر مال پر گورنمنٹ کالج یونیورسٹی کے سامنے والے باغ کو ناصر باغ کا نام دیا گیا تھا۔۔۔۔۔۔
پر اسرار راستوں۔۔۔۔۔ کچے فرش والے تاریک ٹارچر سیل دیکھ کر۔۔۔فیض احمد فیض کا مصرعہ یاد آیا۔۔۔
وہ جو تاریک راہوں میں مارے گئے
۔۔
میں نے واپس آکر ایک نظم لکھی ۔
خوشبو بند ھے پنجرے میں
اور پھولوں پر زنجیریں ہیں
بھری بہار میں صیادوں کے
ھاتھوں میں شمشیریں ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک روز مجھے ڈی ایس پی ھیڈکوارٹرز نے کہا۔۔۔۔آپ کی آئی جی پنجاب کے پاس پیشی ہے۔۔۔۔میں حیران تھی کہ ایسا کیوں ہے۔۔۔۔بہت پوچھنے کی کوشش کی۔۔۔مگر کسی کو اس بارے میں علم نہیں تھا کہ کیوں بلایا گیا ہے۔۔۔۔
وقت مقرر پر سول سیکریٹریٹ میں واقع آئی جی دفتر پہنچی۔۔۔فرخندہ اقبال بھی وھاں موجود تھیں۔۔۔
ھم لوگ PSO کے کمرے میں گئے۔۔۔۔ان کا نام اعجاز اکرم تھا۔۔۔۔
کچھ دیر بعد انھوں نے کہا کہ آپ آئی جی کے کمرے میں تشریف لے جائیں۔۔۔۔
ہم کمرے میں داخل ہوئےتو آئی جی صاحب نے بغیر کسی تمہید کے کہا۔۔۔آپ دونوں کو ڈی ایس پی بنا دیا گیا ہے۔۔۔۔فرخندہ اقبال سپیشل برانچ پنجاب رپورٹ کریں اور آپ کو ڈی آئی جی ٹریفک کے ساتھ statistical officer لگایا گیا ہے۔
ہم دونوں یہ سن کر باھر آئیں۔۔۔ھمیں یقین نہیں آرھا تھا ۔۔۔۔کہ ھم نے کیا سنا ھے۔۔۔۔ھم دوبارہ اعجاز اکرم کے کمرے میں گئیں اور ان سے کہا۔۔۔ھم آئی جی پنجاب سے دوبارہ ملنا چاھتے۔۔۔سمجھ نہیں آئی انھوں نے کیا کہا ہے۔۔۔
اس پر اعجاز اکرم نے کہا۔۔۔بچوں جیسی باتیں نہ کریں آپ کی ترقی ہو گئی۔۔۔۔اگر اس وقت پنجاب پولیس میں دس خواتین انسپکٹرز بھی ھوتیں تو ان کو ڈی آیس پی بنادیا جاتا۔۔۔۔۔
میرے شوھر کو پہلے ہی کیمرہ مین بنا دیا گیا تھا۔۔۔۔۔۔یوں جنرل مجیب الرحمن کا وعدہ پورا ہوگیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔statistical officerکیا ہوتا ہے۔؟۔۔۔۔مجھے کچھ معلوم نہ تھا۔۔۔میں نے بہت لوگوں سے پو چھا ۔۔بس اتنا پتہ چلا کہ اردو میں اسے۔۔۔۔افسر شماریات کہتے ھیں۔۔۔۔اور کوئی حساب کتاب کرنے کا کام ھوتا ہے۔۔۔۔۔
میں ھمیشہ سے حساب کتاب میں نکمی رھی ہوں۔۔۔۔عجیب خوف کی حالت تھی کہ اب کیا کرنا ہوگا۔۔۔یہ خوف ترقی کی خوشی پر غالب آگیا تھا۔۔۔۔
دوسرے روز اپر مال پر واقع ڈی آئی جی ٹریفک ہائی ویز کے دفتر رپورٹ کرنے پہنچی۔۔۔ تو یہ دیکھ کر خو شی ہوئی کہ ڈی آئی جی ٹریفک ھائی ویز فضل محمود تھے۔۔۔۔۔۔۔
                                                                                            (جاری ہے)
نیلما ناھید درانی

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post