…. کشمیر ….


شاعر: یونس متین
کنہیا لال کیسے ہو ۔۔۔۔۔!!
سنا ہے آجکل کشمیر کی وادی میں
آہ و آتش و آہن کی بارش روز ہوتی ہے
وہاں بارود پھٹتا ہے
فضا میں پھول سے معصوم بچوں کے بدن
جب ریزہ ریزہ ہو کے اُڑتے ہیں
تو ماٶں کے کلیجے ساتھ ہوتے ہیں
کنواری بچیوں کی عصمتوں کے داغ
فاتح فوجیوں کے سرد سینوں پر چمکتے ہیں
یہ تمغے ہیں ۔۔۔۔۔۔!!
کنہیا لال یہ کیسی سیاست ہے ۔۔۔۔!!
سرِ کشمیر زندہ پانیوں پر موت کی تہمت لکھی جاٸے
کسی انکار سے ۔۔۔۔تحریر کےصد چاک پیراہن رفو کرنا
ڈبو کر خون میں بندوق کی نالی
چمکتے حرف ۔۔۔۔۔امن و آشتی ۔۔۔۔لکھنا
کنہیا لال فطرت کے عمل کو جاری رہنا ہے
یہ سورج کا چمکنا رک نہیں سکتا
ہواٸیں تھم نہیں سکتیں
جسے آزاد ہونا ہے
ااسے آزاد ہونا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔
( یونس متین)

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post