میرتقی میرؔ کے دس منتخب اشعار


شاعر: میر تقی میرؔ
انتخاب از: سیماب شیخ
کِھلنا کم    کم کلی نے سیکھاہے
اُن کی آنکھوں کی نیم خوابی سے
          ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میر چلنے سے کیوں ہو غافل تم
سب کے ہاں ہو رہی ہے تیاری
          ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نازکی ان کے لب کی کیا کہیے
پنکھڑی اک گلاب کی سی ہے
            ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

طبیعت نے عجب کل یہ ادا کی
کہ ساری رات وحشت ہی رہا کی
           ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

گور کس دل جلے کی ہے یہ فلک
شعلہ اک صبح یاں سے اٹھتاہے
              ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پھرتے ہیں میر خوار کوئی پوچھتا نہیں
اس عاشقی میں عزت سادات بھی گئ
              ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آبلے کی سی طرح ٹھیس لگی پھوٹ بہی
دردمندی میں گئی ساری جوانی اس کی
                ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عاشق سا  تو سادہ کوئی اور نہ ہوگا دنیا میں
جی کے زیاں کوعشق میں اس کے اپناواراجانے ہے
           ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  
میرؔ ان نیم باز    آنکھوں میں
ساری مستی شراب کی سی ہے
            ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چھاتی کے جلنے سے ہی شاید کہ آگ سلگی
اٹھنے لگا دھواں اب میرے دل و جگر سے
You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post