داستان گو

یونس متین

آگ جلتی رہی
گلخنِ وقت میں رات بھر آگ جلتی رہی
اور حلقہ نہ ٹوٹا
زمستاں کی بیوہ ہوائیں
اندھیروں کی لاشوں سے دست و گریباں
ٹھٹھرتی ہوئی سرد گائوں کی گلیاں
خموشی کے بستر پہ سوئی ہوئی کہر کی بوڑھیاں
اور چوپال میں
ہر کوئی منتظر اور بے چین تھا
کہ ادھوری کہانی سے پردہ اٹھے

داستاں گو نے سر کو اٹھایا
خموشی کو توڑا
تثاقل ہٹایا
سلگتی تِڑکتی ہوئی لکڑیوں کو نظر بھر کے دیکھا
تو گویا ہُوا۔۔۔

کہ پھر ایسے ہوا
اُس جواں سال کی بوڑھی آنکھوں میں
سارے مناظر گزرنے لگے
اور وہ کہنے لگا

’’یاد ہیں مجھ کو۔۔۔۔۔۔۔
متھرے کے پیڑے۔۔۔۔۔۔۔ بنارس کی ساڑھی
۔۔۔۔۔۔۔ علی گڑھ کے تالے
حسیں سنگترے ناگ پور کے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ ڈھاکہ کی ریشم سی ململ
الہٰ باد کے شہد امرود ۔۔۔۔۔۔ کشمیر کے سیب
دہلی کے بانکے۔۔۔ سہارن پوری آم
جوتے چمکتے ہوئے کان پور کے
وہ میرٹھ کی کٹ کٹ کترتی ہوئی قینچیاں
میری بیوی کے پستان ۔۔۔۔۔۔۔ بھائی کی آنکھیں
بہن کا دوپٹہ ۔۔۔۔۔۔۔ وہ بیٹے کے بازو
لپکتی کٹاریں۔۔۔۔۔۔۔۔ لہو میں نہاتی ہوئی برچھیاں
دستِ آتش میں جلتے ہوئے بام و در۔۔۔۔۔۔ قافلے
یاد ہیں سب مجھے،

داستاں گو
کہانی کے اس موڑ پر سارے احباب کو چھوڑ کر
جلتے شعلوں میں پھر کھو گیا اور چُپ ہو گیا
آگ جلتی رہی
رات بھر آگ جلتی رہی
داستاں گو کی آنکھوں میں سارے مناظر گزرنے لگے
دُور خاموش گلیوں میں کتوں کے لڑنے کی آواز آتی رہی!

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post