حمد ۔۔۔۔ شاعر: قمر جلالوی

قمر جلالوی

سن سن کے مجھ سے وصف ترے اختیار کا
دل    کانپتا    ہے    گردش ِ لیل و    نہار کا

لا  ریب لا شریک    شہنشاہِ کل    ہے تو !
سر خم ہے تیرے در پہ ہر اک تاجدار کا

محمود    تیری    ذات  ،    محمدؐ    ترا رسول !
رکھا    ہے    نام    چھانٹ کے مختارِ کار کا

بنوا    کے    باغ خْلد تیرے حکم کے بغیر
شدّاد    منہ    نہ    دیکھنے       پایا    بہار کا

جاتی ہے تیرے کہنے سے گلزار سے خزاں
آتا    ہے تیرے حکم    سے موسم    بہار کا

رزاق تجھ کو مذہب و ملت سے کیا غرض !
خالق    تو    ہی   ہے    کافر    و    ایماندار   کا

کہنا    پڑے    گا    لاکھ    عبادت گزار    ہو
بندہ          گناہگار    ہے    پروردگار    کا

منزل تو شے ہے دوسری لاکھوں گزر گئے
اب    تک    پتہ    چلا    نہ    تری رہگزار کا

پایا    جو پھل    تو    شاخِ ثمر    دار جھک گئی
کہتی    ہوئی    کہ شکر    ہے    پروردگار    کا

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post