نیا حکم نامہ …نظم:یونس متین


یونس متین
داستاں گو ۔۔۔۔۔۔۔۔اچانک ہی چپ ہوگیا
لوگ چہروں پہ پتھر کی آنکھیں لٸے
اک تحیر میں گم ہو چکے تھے
مگر اپنی مسند پہ بیٹھا ہوا داستاں گو
فقط آٸنہ ڈھونڈنے کے لٸے رک گیا تھا
کہ سب خلقتِ شہر اس دن
سروں کو کہیں رہن رکھ آٸی تھی
نا مکمل ۔۔۔۔۔۔
سبھی مردو زن نامکمل تھے
اور داستاں گو پریشان تھا
بے سروں کو کہانی ساتے ہوٸے
داستاں گو پریشان تھا
داستاں گو نے زنبیل میں ہاتھ ڈالا
زمانہ شناس انگلیوں سے
پرانا شکستہ سا اک خواب باہر نکا لا
اسے اپنے ماتھے پہ چسپاں کیا
تب کہانی ۔۔۔۔۔۔۔۔
کہ جو داستاں گو کے پہلو سےلگ کر کھڑی تھی
مخاطب ہوٸی
داستاں گو سے اس کی کہانی مخاطب ہوٸی !
اور کہنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کل منادی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔نقارچی کہہ رہا تھا
کہ کچھ لوگ پتھر سے باہر نکلنے کی کوشش میں ہیں
اور شہ کے خزانوں میں رکھے گٸے سر
” جو چھینے گٸے تھے “
وہ کم ہو رہے ہیں
رعایا پہ قانون کی پاسداری ہے لازم
نیا حکم ہے
آج سے جتنےآٸینہ گر ہیں معطل کٸے جا رہےہیں
ابھی کاٹھ پر پھول کھلنے کا موسم نہیں
بیڑیاں زنگ آلود ہونٹوں سے اپنا بدن چاٹتی ہیں
سرِ چوک کل کی طرح
آج پھر داستاں گو کے لب سی دٸیے جاٸیں گے
کل بہت دُور تھی
شام ہونے سے پہلے ہی سورج نے دیکھا
کہ بستی کے کچھ اہلِ دل
داستاں گو کی میت کو دفنا رہے ہیں
کہانی مسلسل روٸے جا رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یونس متین

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post