میرؔ کی غزلیں (۱)


میرتقی میرؔ
۱۔ غزل
اس    عہد    میں الٰہی محبت کو    کیا ہوا
چھوڑا وفا کو ان نے مروت کو کیا ہوا
امیدوار    وعدہء      دیدار     مر     چلے
آتے    ہی آتے یارو قیامت کو کیا ہوا  
اس کے گئے پرایسے گئے دل سے ہم نشیں
معلوم    بھی ہوا نہ کہ طاقت    کو    کیا ہوا
بخشش    نے    مجھ    کو ابر کرم کی کیا خجل
اے    چشم جوش اشک    ندامت کو کیا ہوا
جاتا    ہے یار    تیغ بکف غیر    کی طرف
اے    کشتۂ ستم    تری غیرت کو کیا ہوا
تھی صعبِ عاشقی کی ہدایت    ہی میرؔ پر
کیا    جانیے    کہ حال نہایت کو کیا ہوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۲۔غزل
الٹی ہو گئیں سب تدبیریں کچھ نہ دوا نے کام کیا
دیکھا    اس    بیماریِ دل نے   آخر    کام    تمام کیا
عہدِ جوانی    رو رو کاٹا پیری میں لیں آنکھیں موند
یعنی    رات بہت تھے جاگے صبح    ہوئی    آرام کیا
حرف نہیں جاں بخشی میں اس کی خوبی اپنی قسمت کی
ہم    سے    جو    پہلے کہہ بھیجا سو مرنے کا پیغام کیا
ناحق    ہم مجبوروں    پر    یہ تہمت     ہے مختاری کی
چاہتے    ہیں سو آپ کریں ہیں ہم کو عبث بدنام کیا
سارے رند اوباش جہاں کے تجھ سے سجود میں رہتے ہیں
بانکے    ٹیڑھے    ترچھے    تیکھے    سب    کا تجھ کو امام کیا
سرزد ہم سے بے ادبی تو وحشت میں بھی کم ہی ہوئی
کوسوں    اس    کی    اور گئے پر سجدہ    ہر    ہر گام کیا
کس    کا    کعبہ کیسا    قبلہ کون حرم    ہے    کیا    احرام
کوچے کے اس کے باشندوں نے سب کو یہیں سے سلام کیا
شیخ    جو    ہے    مسجد میں ننگا رات کو تھا میخانے میں
جبہ    خرقہ    کرتا    ٹوپی    مستی    میں    انعام      کیا
کاش اب برقع منھ سے اٹھا دے ورنہ پھر کیا حاصل ہے
آنکھ    مندے    پر    ان    نے    گو دیدار کو اپنے عام کیا
یاں    کے    سپید و سیہ میں ہم کو دخل جو ہے سو اتنا ہے
رات    کو    رو رو صبح کیا    یا    دن کو جوں توں شام کیا
صبح    چمن    میں    اس    کو کہیں تکلیف ہوا لے آئی تھی
رخ    سے    گل کو مول لیا    قامت    سے سرو غلام کیا
ساعد    سیمیں    دونوں    اس کے ہاتھ میں لاکر چھوڑ دیے
بھولے    اس    کے قول و قسم پر    ہائے    خیال خام کیا
کام ہوئے ہیں سارے ضائع ہر ساعت کی سماجت سے
استغنا    کی    چوگنی      ان نے جوں جوں میں ابرام کیا
ایسے      آہوے رم خوردہ کی وحشت کھونی مشکل تھی
سحر    کیا      اعجاز کیا جن      لوگوں نے تجھ کو رام کیا
میر کے دین و مذہب کو اب پوچھتے کیا ہو ان نے تو
قشقہ    کھینچا    دیر میں بیٹھا    کب    کا ترک اسلام کیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۳۔غزل
دیکھے گا جو تجھ رو کو سو حیران رہے گا
وابستہ     ترے    مو    کا پریشان رہے گا
وعدہ    تو    کیا اس سے    دم صبح    کا لیکن
اس دم تئیں مجھ میں بھی اگر جان رہے گا
منعم    نے    بنا    ظلم    کی    رکھ گھر تو بنایا
پر    آپ    کوئی    رات    ہی مہمان رہے گا
چھوٹوں    کہیں    ایذا    سے لگا    ایک ہی جلاد
تاحشر    مرے    سر پہ    یہ    احسان     رہے گا
چمٹے    رہیں    گے    دشت    محبت میں سر و تیغ
محشر    تئیں    خالی    نہ    یہ     میدان    رہے گا
جانے    کا    نہیں    شور سخن    کا    مرے ہرگز
تا حشر    جہاں    میں    مرا    دیوان    رہے    گا
دل    دینے    کی ایسی    حرکت ان نے نہیں کی
جب    تک جیے    گا میر ؔ    پشیمان    رہے    گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۴۔غزل
نکلے ہے چشمہ جو کوئی جوش زناں پانی کا
یاددہ    ہے وہ    کسو چشم     کی    گریانی کا
لطف    اگر یہ ہے    بتاں صندل پیشانی کا
حسن    کیا    صبح    کے پھر چہرہ ء نورانی کا
کفر کچھ      چاہیے اسلام کی رونق کے لیے
حسن      زنار       ہے    تسبیح    سلیمانی     کا
درہمی حال کی ہے سارے مرے دیواں میں
سیر    کر    تو بھی    یہ    مجموعہ     پریشانی    کا
جان    گھبراتی ہے    اندوہ سے تن میں کیا کیا
تنگ    احوال ہے    اس    یوسف    زندانی    کا
کھیل لڑکوں    کا    سمجھتے تھے محبت کے تئیں
ہے    بڑا    حیف    ہمیں    اپنی    بھی نادانی کا
وہ بھی جانے کہ لہو رو کے لکھا ہے مکتوب
ہم    نے    سر نامہ کیا    کاغذ    افشانی    کا
اس کا منہ دیکھ رہا ہوں سو وہی دیکھوں ہوں
نقش    کا   سا ہے سماں    میری    بھی حیرانی کا
بت    پرستی    کو    تو    اسلام    نہیں کہتے ہیں
معتقد    کون    ہے    میرؔ    ایسی    مسلمانی    کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۵۔غزل
تھا مستعار حسن سے اس کے جو نور تھا
خورشید میں بھی اس ہی کا ذرہ ظہور تھا
ہنگامہ گرم    کن    جو دلِ    ناصبور تھا
پیدا    ہر    ایک نالے سے شورنشور تھا
پہنچا جو آپ کو تو میں پہنچا خدا کے تیں
معلوم اب ہوا کہ بہت میں بھی دور تھا
آتش بلند دل کی نہ تھی ورنہ اے کلیم
یک شعلہ برق خرمن صد کوہ طور تھا
مجلس میں رات ایک ترے پر توے بغیر
کیا شمع کیا    پتنگ ہر اک بے حضور تھا
اس فصل میں کہ گل کاگریباں بھی ہے ہوا
دیوانہ    ہو    گیا    سو بہت ذی شعور تھا
منعم    کے پاس قاقم و سنجاب تھا    تو    کیا
اس رند    کی بھی رات گزر گئی جو عور تھا
ہم خاک میں ملے تو ملے لیکن اے سپہر
اس    شوخ    کو بھی راہ پہ    لانا ضرور تھا
کل      پاوں ایک کاسۂ سر    پر جو آگیا
یکسر    وہ    استخوان شکستوں سے چور تھا
کہنے لگا    کہ دیکھ    کے چل راہ بے خبر
میں    بھی کبھو    کسو    کا سر پر غرور تھا
تھا وہ تو رشک حور بہشتی ہمیں میں میرؔ
سمجھے    نہ    ہم    تو فہم کا اپنے قصور تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۶۔غزل
کیا    میں بھی    پریشانی    خاطر سے قریں تھا
آنکھیں تو کہیں تھیں دل غم دیدہ کہیں تھا
کس    رات نظر کی ہے سوے چشمک انجم
آنکھوں    کے تلے    اپنے تو وہ ماہ جبیں تھا
آیا    تو سہی وہ    کوئی دم    کے لیے لیکن
ہونٹوں پہ مرے جب نفس ِ  باز پسیں تھا
اب کوفت سے ہجراں کی جہاں تن پہ رکھا ہاتھ
جو    درد    و    الم تھا    سو کہے    تو کہ وہیں تھا
جانا    نہیں     کچھ    جز    غزل آکر کے جہاں میں
کل    میرے    تصرف    میں یہی قطعہ زمیں تھا
نام    آج    کوئی یاں نہیں    لیتا    ہے    انھوں کا
جن    لوگوں کے    کل ملک یہ سب زیرنگیں تھا
مسجد    میں امام    آج    ہوا    آ    کے    وہاں سے
کل    تک    تو    یہی    میرؔ     خرابات نشیں    تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۷۔غزل
شبِ  ہجر میں    کم   تظلم کیا
کہ    ہمسائگاں    پر ترحم کیا
کہامیں نے کتناہے گل کاثبات
کلی    نے یہ سن کر تبسم کیا
زمانے نے مجھ جرعہ کش کو ندان
کیا خاک و    خشتِ سرِ خم کیا
کسو وقت پاتے نہیں گھر اسے
بہت میرؔ نے آپ کو گم کیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۸۔غزل
چمن میں گل نے جو کل دعوی جمال کیا
جمال یار نے منہ    اس کا خوب لال کیا
فلک نے    آہ تری رہ میں ہم کو پیدا کر
برنگ       سبزہء    نورستہ    پائمال    کیا
رہی تھی دم کی کشاکش گلے میں کچھ باقی
سو اس کی تیغ نے جھگڑا ہی انفصال کیا
مری اب آنکھیں نہیں کھلتیں ضعف سے ہمدم
نہ کہہ    کہ    نیند میں ہے تو یہ کیا خیال کیا
بہار  ِ  رفتہ    پھر    آئی    ترے    تماشے کو
چمن   کو یمن قدم    نے    ترے نہال کیا
جواب نامہ    سیاہی    کا اپنی ہے    وہ زلف
کسو    نے    حشر    کو ہم سے اگر سوال کیا
لگا     نہ    دل    کو کہیں کیا سنا نہیں تونے
جو کچھ کہ میرؔ    کا اس عاشقی نے حال کیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۹۔غزل
تا    گور کے اوپر وہ گل اندام    نہ آیا
ہم خاک کے آسودوں کو آرام نہ آیا
بے ہوش مئے عشق ہوں کیامیرابھروسا
آیا    جو بخود    صبح تو    میں شام نہ آیا
کس دل سے ترا تیر نگہ پار    نہ گزرا
کس    جان کو یہ مرگ کا پیغام نہ آیا
دیکھا نہ اسے دور سے بھی منتظروں نے
وہ    رشک مہ عید    لب بام    نہ آیا
سو    بار    بیاباں    میں    گیا محملِ لیلیٰ
مجنوں کی طرف ناقہ کوئی گام نہ    آیا
اب کے جو ترے کوچے سے جاوں گاتو سنیو
پھر جیتے جی اس راہ    وہ    بدنام نہ آیا
نے خون ہوآنکھوں سے بہاٹک نہ ہواداغ
اپنا    تو یہ    دل میرؔ    کسو    کام نہ آیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۱۰۔غزل
جس سر کو غرور آج ہے یاں    تاجوری کا
کل اس پہ یہیں شور ہے پھر نوحہ گری کا
شرمندہ ترے رخ سے ہے رخسار پری کا
چلتا نہیں    کچھ آگے ترے    کبک دری کا
آفاق      کی    منزل سے گیا کون سلامت
اسباب    لٹا    راہ    میں    یاں ہر سفری کا
زنداں میں بھی شورش نہ گئی اپنے جنوں کی
اب    سنگ    مداوا ہے    اس آشفتہ سری کا
ہر    زخمِ جگر    داور    محشر    سے ہمارا
انصاف طلب ہے تری بے داد گری کا
اپنی    تو جہاں    آنکھ لڑی پھر وہیں دیکھو
آئینے کو لپکا    ہے    پریشاں نظری کا
صد موسم گل ہم کو تہ بال ہی گذرے
مقدور نہ دیکھا کبھو بے بال و پری کا
اس رنگ سے جھمکے ہے پلک پرکہ کہے تو
ٹکڑا    ہے    مرا    اشک عقیق جگری    کا
کل سیر کیا    ہم نے    سمندر کو بھی جاکر
تھا    دست نگر    پنجۂ مژگاں    کی تری کا
لے سانس بھی آہستہ کہ نازک ہے بہت کام
آفاق    کی    اس کار گہ  ِ  شیشہ گری    کا
ٹک  میرؔ    جگر    سوختہ    کی جلد خبر لے
کیا    یار    بھروسا    ہے    چراغ سحری کا
میر تقی میرؔ

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post