مجروحؔ مرا دل بھی کراٸے کامکاں ہے : یونس خیال


یونس خیال
جناب حسین مجروح سے میری پہلی ملاقات ١٩٩٥ء میں ہوٸی اورپھرایک طویل عرصے کے بعدپچھلے برس حلقہ اربابِ ذوق کے اجلاس میں ان سے دربارہ گفتگوکاموقع ملا۔ لیکن اس عرصہ میں ان سے قربت کااحساس کم ہونے کی بجاٸے بڑھتاچلاگیا۔اس کی وجہ ان سے ٢٣برس پہلے سنے دوشعرہیں،جنھوں نے کٸی بارمیرے اندرکی اداسی اوربے نام سے خلاکی کیفیت میں نہ صرف مجھے اپنے ہونے کااحساس دلایابلکہ ان حالات میں میری ترجمانی بھی کی۔
مجروح مرا دل بھی کراٸے کا مکاں ہے
خالی بھی یہ ہوجاٸے توقبضہ نہیں ملتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ نقدِ جاں ہے اِسے سود پر نہیں دیتے
جسے طَلَب ہو وہ ہم سے مضاربہ کر لے
اگرپہلی ہی بارسن کر ،اس کے اشعار سے اپناٸیت کااحساس ہونے لگے توکوٸی وجہ نہیں کہ شاعر سے فنی اور فکری سطح پرہمیشہ کاتعلق قاٸم نہ ہو۔میں اس وقت سے جانتاہوں کہ حسین مجروح ایک بڑےشاعرہیں جنھیں انسانی جذبوں اور رویوں کے اتارچڑھاوکولفظوں میں ڈھالنے کافن پوری طرح سے آتاہے۔
یہ تو رستے میں ہی مڈبھیڑ ہوٸی ہے ورنہ
زندگی تجھ سے ملاقات کی خواہش کب تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مہنگاٸی کا وہ زور ہے مجروح کہ نیکی
اجرت کی طلب گار ہے،بخشش کی نہیں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جھولاپڑانہ چھاٶں میں بیٹھاکوٸی فقیر
شیشم کا پیڑ شہر میں بے آبرو ہوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تکیہ رہاہے جس پہ ہمارا وہ آسماں
ہے ان دنوں زمین پہ تکیہ کیے ہوٸے
حسین مجروح کے ہاں علامتوں اورلفظیات نے ان کے اپنے خاص ماحول سےجنم لیاہے شاید یہی وجہ ہے کہ شاعراوراشعارکوالگ سے دیکھنے میں دشواری سی محسوس ہوتی ہے۔اوریہ مقام کم شعراکے حصے میں آتاہے ورنہ کسی نہ کسی پیروی کی چھاپ ضروردکھاٸی دیتی ہے۔
شعبہ معاشیات سے منسلک فکرِمعاش اورعشق کے رموز کےاظہارکاسلیقہ ان کی شاعری کی انفرادیت ہے۔
کس طرح گھرکوپلٹ جاٸیں سرِشام ،حضور
عشق میں دفتری اوقات نہیں ہوتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عشق کی طرزِمعیشت بھی انوکھی ہے کہ دل
ہر خسارے کو سمجھتا ہے کماٸی اپنی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خرچ ہوتی ہوٸی محبت کو
دے رہا ہوں کماٸی کاجھانسا
حسین مجروح کاتازہ مجموعہ ”اشعار“ ان کے ان شعروں پرمشتمل ہے جوغزلیں نہ بن پاٸے۔اس کی انفرادیت بھی یہی ہے کہ ” غزلیں بنانے“ کے لیے Craftsmanshipکاسہارالینے کی بجاٸے انھوں نے شعر کے خالص پن کوبرقراررکھنے پراکتفاکیا۔اوریہی ان کاشخصی اورشعری تعارف بھی ہے۔
بتاٸے کون یہ اس بے خبرکو
کہ عاشق، سابقہ ہوتانہیں یے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چَلَن ہے ایک سادونوں کا،عشق ہوکہ ہوا
ٹھکانا کوٸی نہیں ، چار سو حکومت ہے
جناب مظہرسلیم مجوکہ کابہت شکریہ کہ انھوں نے ایک خوب صورت شعری مجموعے کی اشاعت کااہتمام کیا۔
No photo description available.

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post