ایک آرزو ۔۔۔ علامہ محمداقبال ؒ


دُنیا کی محفلوں سے اُکتا گیا ہوں یا رب!
کیا لُطف انجمن کا جب دل ہی بُجھ گیا ہو
شورش سے بھاگتا ہوں، دل ڈھونڈتاہے میرا
ایسا سکُوت  جس پر  تقریر  بھی فدا ہو 
مرتا ہوں  خامشی  پر، یہ  آرزو ہے میری
دامن میں کوہ کے اک چھوٹا ساجھونپڑا ہو
آزاد فکر سے ہوں، عُزلت میں دن گزاروں
دنیا کے غم کا   دل سے کانٹا  نکل  گیا ہو
لذّت سرود کی ہو چڑیوں کے چہچہوں میں
چشمے کی شورشوں میں باجا سا بج رہا ہو
گُل کی کلی چٹک کر پیغام دے کسی کا
ساغر ذرا سا  گویا مجھ کو جہاں نما ہو
ہو ہاتھ  کا  سَرھانا ، سبزے کا ہو بچھونا
شرمائے جس سے جلوت،خلوت میں وہ اداہو
مانوس اس قدر ہو صورت سے میری بُلبل
ننھّے سے دل میں اُس کے کھٹکا نہ کچھ مراہو
صف باندھے دونوں جانب بُوٹے ہرے ہرے ہوں
ندّی  کا  صاف  پانی  تصویر  لے  رہا ہو
ہو  دل  فریب  ایسا  کُہسار کا  نظارہ
پانی بھی موج بن کر، اُٹھ اُٹھ کے دیکھتاہو
آغوش میں زمیں کی سویا ہُوا ہو سبزہ
پھِرپھِرکے جھاڑیوں میں پانی چمک رہاہو
پانی کوچھُورہی ہوجھُک جھُک کے گُل کی ٹہنی
جیسے  حَسین  کوئی  آئینہ  دیکھتا  ہو
مہندی لگائے سورج جب شام کی دُلھن کو
سُرخی  لیے  سنہری  ہر  پھُول کی  قبا ہو
راتوں کو چلنے والے رہ جائیں تھک کے جس دم
اُمّید  اُن  کی میرا  ٹُوٹا  ہوا  دِیا ہو
بجلی چمک کے اُن کو کُٹیا مری دکھا دے
جب آسماں پہ ہر سُو بادل گھِرا ہوا ہو
پچھلے پہر کی کوئل، وہ صبح کی مؤذِّن
مَیں اُس کا ہم نوا ہوں، وہ میری ہم نوا ہو
کانوں پہ ہو نہ میرے دَیر و حرم کا احساں
روزن ہی جھونپڑی کا مجھ کو سحر نما ہو
پھُولوں کو آئے جس دم شبنم وضو کرانے
رونا مرا وضو ہو، نالہ مری دُعا ہو
اس خامشی میں جائیں اتنے بلند نالے
تاروں کے قافلے کو میری صدا درا ہو
ہر دردمند دل کو رونا مرا رُلا دے
بے ہوش جو پڑے ہیں، شاید انھیں جگا دے

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post