غزل : مصطفیٰ زیدی


مصطفیٰ زیدی
فن کارخود نہ تهی ،مرے فن کی شریک تھی
وه    روح كے سفر میں َبدن کی    شریک تھی
اُترا    تھا    جس پہ باب ِحيا    كا ورق ورق
بستر    كی    ایک ایک شکن کی شریک تھی
میں    ایک اعتبار   سے    آتش    پرست تھا
وه سارے زاویوں سے چمن کی شریک تھی
وه    نازشِ ستاره    و طَنّازِ     ماہتاب
گردش کے وقت میرے گہن کی شریک تھی
وه    ہم    جليسِ سانحہ ء    زحمتِ نشاط
آسائشِ صلیب و َرسن کی شریک تھی
ناقابل ِبیان    اندھیرے    کے    باوجود
میری دُعائے صبحِ وطن کی شریک تھی
دُنیا میں ایک سال کی مدت کا قُرب تھا
دل میں کئی ہزار قرن    کی شریک تھی

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post