غزل:شاہ حسین ظہیر… منظوم اردو ترجمہ : ڈاکٹر اسحاق وردگ

ڈاکٹراسحاق وردگ
ڈاکٹر اسحاق وردگ
شہر نابود میں جل رہا ہوں میاں
یعنی بارود میں جل رہا ہوں میاں
اس نئے دور میں اک نئی آگ میں
قید نمرود میں جل رہا ہوں میاں
مجھ کو تاوان کی کوئی پروا نہیں
بس ذرا سود میں جل رہا ہوں میاں
آتش عشق کی کوئی حد ہی نہیں
آتش و دود میں جل رہا ہوں میاں
ذات میں جذب ہے عشق کی آگ بھی
ذات محدود میں جل رہا ہوں میاں
کل تلک آگ اک کھیل تھا پر ظہیر!
وقت موجود میں جل رہا ہوں میاں
……………..
پشتوغزل: شاہ حسین ظہیر
بارود بارود اور به مې وسوزوي
نابود نابود اور به مې وسوزوي
د یو نمرود اور نه راوتے یمه
د بل نمرود اور به مې وسوزوي
پۀ تاوانونو باندې زړۀ نۀ خورمه
خو دا د سود اور به مې وسوزوي
د هجر اور دے لامحدوده ښکاري
دا لامحدود اور به مې وسوزوي
د مینې اور مې د وجود حصه ده
د خپل وجود اور به مې وسوزوي
چې د اورونو سره لوبې کوم
ظهیره خود اور به مې وسوزوي

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post