فیض احمد فیضؔ کی غزلیں (۱)


۱۔ غزل 
ستم  سکھلائے گا رسمِ وفا ، ایسے نہیں ہوتا
صنم   دکھلائیں گے راہِ خدا ایسے نہیں ہوتا
گنوسب حسرتیں جوخوں ہوئی ہیں تن کے مقتل میں
مرے  قاتل حسابِ خوں  بہا  ایسے نہیں ہوتا
جہانِ دل میں کام آتی ہیں تدبیریں نہ تعزیریں
یہاں  پیمانِ تسلیم  و رضا  ایسے  نہیں  ہوتا
ہراک شب،ہرگھڑی گزرے قیامت یوں توہوتا ہے
مگر ہر صبح  ہو روزِ جزا  ایسے نہیں ہوتا
رواں ہے نبضِ دوراں،گردشوں میں آسماں سارے
جو تم کہتے ہو سب کچھ ہو چکا ایسے نہیں ہوتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۲۔ غزل 
یاد   کا پھر کوئی   دروازہ  کھُلا  آخرِ شب
دل میں بکھری کوئی خوشبوئے قبا آخرِ شب
صبح  پھوٹی  تو وہ  پہلو سے اُٹھا  آخر شب
وہ  جو اِک  عمر سے آیا  نہ  گیا  آخر شب
چاند  سے  ماند  ستاروں  نے  کہا آخر شب
کون  کرتا  ہے  وفا ، عہدِ  وفا  آخر  شب
لمسِ  جانانہ  لیے ،  مستیِ  پیمانہ  لیے
حمدِ باری کو اٹھے دستِ دعا آخر شب
گھرجوویراں تھا سرِشام وہ کیسے کیسے
فرقتِ  یاد  نے  آباد  کیا  آخر  شب
جس ادا سے کوئی آیا تھا کبھی اوؐلِ شب
اسی  انداز سے  چل بادِ صبا  آخر شب
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۳۔ غزل 
یک بیک شورشِ فغاں کی طرح
فصلِ گُل آئی امتحاں  کی طرح
صحنِ گلشن میں بہرِ  مشتاقاں
ہرروش کِھنچ گئی کماں کی طرح
پھر لہو سے ہر ایک کاسۂ داغ
پُر ہُوا جامِ ارغواں کی طرح
یاد   آیا   جنُونِ  گُم  گشتہ
بے طلب قرضِ دوستاں کی طرح
جانے کس پر ہو مہرباں  قاتِل
بے سبب مرگِ ناگہاں کی طرح
ہر صدا  پر لگے ہیں  کان یہاں
دل سنبھالے رہو زباں کی طرح
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۴۔ غزل 
(میجر اسحاق کی یاد میں )
لوتم بھی گئے ہم نے توسمجھا تھا کہ تم نے
باندھا تھا کوئی یاروں سے پیمانِ وفا اور
یہ  عہد  کہ تا  عمرِ رواں ساتھ  رہو گے
رستے میں بچھڑ جائیں گے جب اہلِ صفااور
ہم سمجھے تھے صیّاد  کا ترکش ہوا خالی
باقی تھا مگر اس میں ابھی تیرِ قضا اور
ہر  خار رہِ دشت  وطن  کا  ہے سوالی
کب  دیکھیے آتا  ہے  کوئی آبلہ  پا اور
آنے  میں تامّل تھا  اگر  روزِ  جزا کو
اچھا تھا ٹھہر جاتے اگر تم بھی ذرا اور
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۵۔ غزل 
یوں سجا چاند کہ جھلکا ترے اندازکا رنگ
یوں فضا مہکی کہ بدلا مرے ہمرازکارنگ
سایہء چشم میں‌ حیراں رُخِ روشن کا جمال
سُرخیء لب میں‌ پریشاں تری آواز کا رنگ
بے پئے ہوں  کہ  اگر لطف  کرو آخرِ شب
شیشہء مے میں‌ ڈھلے صبح کے آغازکارنگ
چنگ و نَے رنگ پہ تھے اپنے لہوکے دم سے
دل نے لَے بدلی تو مدھم ہوا ہر ساز کا رنگ
اک  سخن  اور کہ  پھر رنگِ  تکلم  تیرا
حرفِ سادہ کو عنایت کرے اعجازکا رنگ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۶۔ غزل 
رنگ پیرہن کا خوشبو،زلف لہرانے کا نام
موسمِ گل  ہے تمہارے  بام  پر آنے کا نام
دوستو،اُس چشم ولب کی کچھ کہوجس کے بغیر
گلستاں کی بات رنگیں ہے، نہ میخانے کا نام
پھرنظرمیں پھول مہکے،دل میں پھرشمعیں جلیں
پھر تصور نے لیا اُس  بزم  میں جانے کا نام
دلبری  ٹھہرا  زبانِ خلق  کھلوانے  کا  نام
اب نہیں لیتے پری رُو زلف بکھرانے کا نام
اب کسی لیلیٰ  کو بھی اقرارِ محبوبی نہیں
ان  دنوں بدنام ہے ہر ایک دیوانے کا نام
محتسب کی خیر،اونچا ہے اسی کے فیض سے
رند کا ، ساقی کا، مے کا، خُم کا ،پیمانے کانام
ہم سے کہتے ہیں چمن  والے ، غریبانِ چمن
تم کوئی اچھا سا رکھ لو اپنے ویرانے کا نام
فیضؔ اُن کو ہے تقاضائے وفا ہم سے جنہیں
آشنا  کے نام سے پیارا ہے بیگانے  کا نام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۷۔ غزل 
صبح کی آج جورنگت ہے وہ پہلے تونہ تھی
کیا خبر آج  خراماں  سرِ‌، گلزار  ہے  کون
شام  گلنار ہوئی جاتی   ہے  دیکھو  تو سہی
یہ جو نکلا ہے لیے مشعلِ رخسار، ہے کون
رات مہکی ہوئی آتی  ہے کہیں  سے پوچھو
آج  بکھرائے ہوئے زلفِ طرحدار  ہے کون
پھر درِ دل  پہ کوئی  دینے  لگا  ہے  دستک
جانیے  پھر دلِ وحشی  کا  طلبگار  ہے کون
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۸۔ غزل 
(نذرِ سودا)
فکر دلداریء گلزار کروں یا نہ کروں
ذکرِ مرغانِ گرفتار کروں یا نہ کروں
قصہء سازشِ اغیار  کہوں یا نہ کہوں
شکوہء یارِ طرحدار کروں یا نہ کروں
جانے کیاوضع ہے اب رسمِ وفا کی اے دل
وضعِ دیرینہ پہ اصرار کروں یا نہ کروں
جانے کس رنگ میں تفسیر کریں اہلِ ہوس
مدحِ زلف و لب و رخسار کروں یا نہ کروں
یوں بہار آئی ہے امسال کہ گلشن میں صبا
پوچھتی ہے گزر اس بار کروں یا نہ کروں
گویااس سوچ میں ہے دل میں لہوبھرکے گلاب
دامن و جیب کو گلنار کروں  یا  نہ کروں
ہے فقط مرغِ غزلخواں کہ جسے فکر نہیں
معتدل گرمیء گفتار کروں  یا  نہ کروں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۹۔ غزل 
عجزِ  اہل  ستم  کی  بات کرو
عشق کے دم قدم کی بات کرو
بزمِ  اہل  طرب  کو شرما و
بزمِ اصحابِ غم کی بات کرو
بزمِ ثروت کے خوش نشینوں سے
عظمتِ چشمِ نم  کی  بات کرو
ہے وہی بات یوں بھی اوریوں بھی
تم  ستم  یا  کرم  کی  بات کرو
خیر ، ہیں اہلِ دیر جیسے  ہیں
آپ   اہل حرم  کی  بات  کرو
ہجر کی شب توکٹ ہی جائے گی
روزِ وصلِ صنم  کی  بات کرو
جان جائیں  گے  جاننے  والے
فیض، فرہاد و جم کی بات کرو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۱۰۔ غزل 
شرح  بے دردیِ حالات نہ ہونے پائی
اب کے بھی دل کی مدارات نہ ہونے پائی
پھر وہی وعدہ جو اقرار نہ بننے پایا
پھر وہی بات جو اثبات نہ ہونے پائی
پھر وہ پروانے جنہیں اذنِ شہادت نہ ملا
پھر وہ شمعیں کہ جنہیں رات نہ ہونے پائی
پھر وہی جاں بلبی لذتِ مے سے پہلے
پھر وہ محفل جو خرابات نہ ہونے پائی
پھر دمِ دید رہے چشم و نظر دید طلب
پھر شبِ وصل ملاقات نہ ہونے پائی
پھر وہاں بابِ اثر جانیے کب بند ہوا
پھر یہاں ختم مناجات نہ ہونے پائی
فیض سرپر جو ہراِک روزقیامت گزری
ایک بھی روز مکافات نہ ہونے پائی
فیض احمد فیض

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post