پاشا میں ترکی : نیلمادرانی

نیلمادرانی                                 
تبصرہ: نیلماناہید درانی                             سفرنامہ : طاہرانورپاشا
معروف سفر نامہ نگار۔۔۔۔ طاھر انوار پاشا کا دوسرا سفر نامہ جو ترکی کی سیاحت کے بارے میں ھے۔۔۔انھوں نے عنایت کیا۔۔۔تو کتاب پڑھتے ھوئے محسوس ھوا کہ یہ کتاب۔۔۔جس کا عنوان۔۔۔ترکی میں پاشا۔۔۔ھے۔۔۔کے مصنف ترکی کے عشق میں اس قدر مبتلا ھیں کہ بقول میر تقی میر۔۔۔
بار بار اس کے در پہ جاتا ھوں
حالت اب اضطراب کی سی ھے
اور اس طرح بار بار ترکی جانے سے جناب طاھر انوار پاشا کے اندر ترکی اس طرح رچ بس گیا ھے۔۔۔کہ
من تو شدم تو من شدی
من جان شدم تو تن شدی
تا کس نہ گوید بعد ازیں
من دیگرم تو دیگری
کتاب کےدیباچہ میں انھوں نے یہ اعتراف کیا ھے۔۔۔کہ بچپن میں ان کا نام” طاھر انوار” تھا۔۔۔۔لیکن کمال اتاترک پاشا کے بارے میں پڑھنے کے بعد انھوں نے ” پاشا” لفظ کو اپنے نام کا حصہ بنا لیا۔۔۔۔اور ” طاھر انوار پاشا” بن گئے۔۔۔۔صرف یہ ھی نہیں بلکہ اپنے دونوں بیٹوں کے نام بھی۔۔۔۔بلال خان پاشا اور فواد خان پاشا۔۔۔رکھے۔۔۔
ترکی پاکستانیوں کا محبوب ملک ھے۔۔۔اور وھاں جانے والا ھر پاکستانی جس کا قلم اور کتاب سے رشتہ ھے ۔۔اس کے بارے میں کچھ نہ کچھ ضرور لکھنا چاھتا ھے۔۔۔اس لیے ترکی کے اردو زبان میں درجنوں سفرنامے لکھے جا چکے ھیں۔۔۔
جن میں سے کچھ میری نظر سے بھی گزرے ھیں۔۔۔۔
لیکن جس طرح۔۔۔ھر جگہ کے بارے میں تحقیق اور تفصیل طاھر انوار پاشا کے سفر نامے میں ھے۔۔۔وہ کہیں اور دکھائی نہیں دی۔۔۔۔
یہ سفر نامہ قطعی عجلت میں نہیں لکھا گیا۔۔۔بلکہ ھر ھر جگہ کے بارے میں اتنی معلومات مہیا کی گئی ھیں کہ اگر ترک بھی پڑھیں تو ان کے لیے بھی کئی نئے انکشافات ھوں گے۔۔۔
ترکی میں پاشا۔۔۔۔ایک ایسا سفر نامہ ھے ۔۔۔جس میں ترکی کا جغرافیہ۔۔۔تاریخ۔۔۔تہزیب اور حال سب موجود ھے۔۔۔۔یہ ایک گائیڈ ھے جو ترکی جانے والوں کے لیے ھر قسم کی معلومات فراھم کرتی ھے۔۔۔
کون سی جگہ کی کیا تاریخی اھمیت ھے۔۔۔۔۔کون سی مارکیٹ شاپنگ کے لیے موزوں ھے۔۔۔اور کون سے ترکش کھانوں سے لطف اٹھایا جا سکتا ھے۔۔۔۔
ترک سلاطین کی شان وشوکت اور اپنی والدہ کے احترام کا احوال بھی ھے۔۔۔۔
مادر سلطان کا حرم۔۔۔۔سلطان کے بعد محل کا سب سے خوبصورت حصہ ھوتا تھا۔۔۔
تبرکات کا ذکر اتنی تفصیل سے کیا گیا ھے کہ پڑھتے ھوئے محسوس ھوتا ھے کہ ھم بھی زیارات سے شرف یاب ھو رھے ھیں۔۔۔۔
رسول عربی کا جبہ و دستار،نعلین، موئے مبارک، نقش پا، اور علم کا ذکر۔۔۔یہاں تک کہ تیمم کے لیے استعمال ھونے والی مٹی کا ذکر بھی شامل ھے۔۔۔۔
حضرت عثمان کے وقت شہادت تلاوت فرماتے ھوئے قران مجید کے اوراق جن پر خون کے چھینٹے موجود ھیں۔۔۔۔۔کی حقیقت بھی بیان کی ھے۔۔۔۔کہ اصل قران کی کئی نقول بنوا کر امیر معاویہ نے مختلف جگہوں پر بھجوائی تھیں۔۔۔۔ازبکستان میں بھی ایسا قران موجود ھے۔۔۔۔جس کو تحقیق کے بعد اصل کہا گیا ھے۔۔۔۔۔
اسی کتاب سے یہ معلومات بھی ملتی ھیں کہ شہرہ آفاق فلم۔۔۔ھیلن آف ٹرائے۔۔۔۔والا۔۔۔ٹرائے شہر بھی ترکی میں موجود ھے۔۔۔۔
۔ترکوں کی خوبصورتی، نفاست اور جمالیات ان کی گلیوں بازاروں اور رنگوں سے جھلکتی ھے۔۔۔۔جس کا اظہار سفر نامہ نگار نے جگہ جگہ کیا ھے۔۔۔۔۔
ترکی واقعی ایسا ملک ھے جس کو محبوب ملک کہا جاسکتا ھے۔۔۔۔جہاں ھمارے پیارے نبی سے منسوب تبرکات کو سونے کے صندوقوں میں محفوظ کرکے۔۔۔۔اس کے قریب 24 گھنٹے تلاوت قران پاک کی جاتی ھے۔۔۔۔
ترکی میں پاشا۔۔۔۔ترکی کی تاریخ اور تہزیب کا ایسا خوبصورت آئینہ ھے۔۔۔جسے پڑھ کر محسوس ھوتا ھے۔۔۔۔کہ ترکی میں پاشا نہیں۔۔۔۔۔بلکہ طاھر انوار پاشا میں ترکی بس رھا ھے۔۔۔۔
نیلما ناھید درانی

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post