احمدساقی کی شاعری : یونس خیال


احمدساقی کی شاعری بولتی ہے،اپنے قاری سے باتیں کرتی ہے ،اسےاپنی گرفت میں لیتی ہے اورپھراس پرکُھلتی چلی جاتی ہے۔اس شاعری میں مطالب کاایک جہان آباد ہے۔
اس کی تماثیل اورامیجزکوچُھوتے ہوئے کسی قسم کی اجنبیت کااحساس ہوتاہے اور نہ ہی اس کے ہاں جدیدیت کے نام پرنہ سمجھ آنے والی آوازوں کاشورسنائی دیتاہے۔
” کھنکتی خاک ” اور “دروازہ” میں شامل غزلیں فنی اورفکری ہودوسطح پرشاعرکی مضبوط گرفت کااحساس دلاتی ہیں۔ اپنی زمین سے جُڑے احمدساقی کی انفرادیت یہی ہے کہ اس نے اپنی شناخت کے لیے مٹی سے بغاوت کی بجاۓ اس سے محبت کاراستہ اپنایاہے اوروہ اس پر اپنے پورے قدسے کھڑانظربھی آتاہے۔
“دیوار” اور “دروازہ” کی علامتیں احمد ساقی کے ہاں خاص طور پر نمایاں نظرآتی ہیں ۔اپنی ذات کی قیدمیں اکتاہت محسوس کرنا ہویا باہر کے غیرانسانی رویوں سے گبھراکرخودکوقید کرلینے کاعمل،ایک بات طے ہے کہ اس کےہاں موجودہ حالات سے فرار کی خواہش شدت سے موجود ہے۔
اسی تبدیلی کی خواہش کے سفر نے ہمارے شاعر کی سوچ کوپختگی عطاکی ہے جواس کی شاعری میں جابجانظرآتی ہے۔
جانے کس شخص نے دیوارپہ دستک دی ہے
کہ اچانک ہی وہاں پھوٹ پڑا دروازہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہماری ذات کی دیوارمنہدم نہ ہوئی
ہمیں جوکہنا تھا تجھ سے کلام ہونہ سکا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جسم اورروح میں روزانہ جدل ہوتاہے
کیوں نہ ان میں کوئی دیوار اٹھادی جاۓ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دیے کا خوف کیوں جاتانہیں ہے
جہاں درہے اسے دیوار کردے
اس طرزکی بہت سی مثالیں ان دومجموعوں میں موجود ہیں ۔
احمد ساقی کی شاعری پر بہت سے دوستوں نے لکھاہے اور اتنے عمدہ شاعر پرابھی بہت کچھ لکھاجاۓ گا۔ میرامقصد تویہاں شاعرکی طرف سے اس کے شعری مجموعوں کے تحفہ بھجوانے پر شکریہ ادا کرناہے۔
آپ دوستوں کے لیے ان مجموعوں سے کچھ اشعار:
کبھی تو آدلِ مجذوب کی تسلی کو
مزید بڑھنے لگا انتظار شیشے میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری اوقات ہی کیاتھی کہ سراہا جاتا
مجھ کو مسند پہ بزرگوں کی دعالائی ہے
میں جوسردار نہ ہوتا تومیں مارا جاتا
میری دستار مرے سر کو بچا لائی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں کان بند بھی کرلوں سنائی دیتاہے
وہ شخص میری رگوں میں دہائی دیتاہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابھی تورزق کی تولید ہونا باقی ہے
زمیں پہ کتنی اراضی ابھی کنواری ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اپنے رخ کوبھی تبدیل کرنہیں پاتا
چہارسمت مرے کارواں کا غلبہ ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انگلیاں بولتی ہیں ہاتھ کبھی ناچتے ہیں
میں توچپ چاپ انگوٹھی میں جڑارہتاہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لباسِ ہجر پہن کر دھمال کرنے لگا
بچھڑکے تجھ سے یہ دل بھی کمال کرنے لگا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ہم سے راہداری مانگتا ہے
رگوں میں دوڑتاپھرتاہواشخص
No photo description available.

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post