پچھتاوا : فریدہ غلام محمد

میں نے اسکی قبر پر پھول ڈالے اور بیٹھ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔کتنے سکون سے سو رہی ھے مجھے بےسکون کر کے ۔۔۔۔۔۔۔آنکھوں سے آنسو نکلے اور رزق خاک ھو گئے ۔ میں بول رہا تھا۔

’’ایسے ہی گلابی رت تھی ۔۔تم مجھے مل گئی تھی ۔۔۔۔۔میں نے تم کو گلابی لباس میں ہی دیکھا تھا،کانچ جیسی ہلکی سی سبز آنکھیں ۔۔۔۔۔دودھ کی طرح چٹی ہلکے بھورے بال جس کی پونی ٹیل بناتی تھی تم ۔۔۔۔۔۔میں تم کو دیکھتا ہی رہ گیا ۔۔۔۔تم میری طرح پڑھنے آئی تھی ۔۔۔۔میں نے تم کو کبھی پڑھتے نہیں دیکھا مگر جب بھی کوئی سوال پوچھا جاتا تم سکون سے کھڑی ھوتی اور جواب دیتی ۔۔۔۔۔۔۔۔تم چنچل نہیں تھی ۔۔۔۔۔۔شوخ نہیں تھی ۔۔تمہارا حسن مبہوت نہیں کرتا تھا بس دھیرے دھیرے اپنے حصار میں جکڑ لیتا تھا۔۔۔ مجھے پتہ تھا تم بڑے گھر کی لڑکی ھو،شہزادیوں کی طرح تمہاری پرورش ھوئ ھے مگر پھر بھی اتنی اداس،اتنی مضمحل۔۔۔۔۔۔کسی شام کے جلتے دیے کی طرح۔میں جب بھی سوچتا ،تم دو سال بعد مجھ سے بچھڑ جاؤ گی ۔۔میری سانس رکنے لگتی ۔۔ محبت کہاں کچھ سمجھتی ھے ۔۔۔۔میں نے جرات دکھائی اور تم سے تمہارا ہاتھ مانگ لیا،تمہاری کانچ جیسی آنکھوں میں پہلے حیرت کا رنگ آیا اور پھر مسکرانے لگیں۔آپ اپنے والدین کو میرے گھر بھیج سکتے ہیں ۔۔۔۔گنگناہٹ سی ھوئی اور مجھ پر سرشاری چھا گئی۔۔۔۔۔۔کتنی مخالفت ھوئی ،کیا ھوا بہرحال تم میری دلہن بن کر میرے گھر آ گئی ۔۔۔۔ ‘‘

میں اسکے محل جیسے گھر کی جگہ ایک بہت ہی چھوٹا گھر دے سکا ۔۔۔۔تم خوش ھو۔۔۔۔ ہاں بہت اس نے مسکراتے ھوئے آنکھیں موند لیں ،چھوٹا کہاں میرے پیارے دیکھو ! اتنا آسمان تو دیا ھے اللہ نے ،جہاں سے چاند نظر آتا ھے ،اتنا دریچہ تو دیا ھے جہاں سے ٹھنڈی ھوا کے جھونکے آتے ہیں اور کیا چاہیے ۔۔وہ میرے گلے میں بانہیں ڈال کر کہتی ۔۔۔۔۔۔مگر میں کم ظرف تھا ۔۔۔احساس کمتری میں مبتلا ھو گیا ۔۔۔۔اس کے گھر سے کوئی بھی آتا ۔۔میرا برتاؤ بس لئے دیئے والا ہی ھوتا ۔۔۔۔۔وہ کملا گئی تھی ۔۔۔۔۔۔میں نے اسے بتا دیا تھا کہ ہم اس کے گھر کم ہی جایا کریں گے اور باقی رشتہ داروں کو بھی بھول جاؤ ۔۔۔۔۔۔اس نے میرے سارے احکامات اپنے دوپٹے کے پلو سے باندھ لئے تھے ۔۔۔ وہ خوش تھی ۔۔۔۔۔مجھے سمجھ نہیں آتا تھا ۔۔وہ کچھ کہتی کیوں نہیں ھے ۔۔۔۔۔پھر ایک پیاری سی بیٹی رحمت بنکر ہمارے گھر آ گئی ۔۔اسے تو دونوں جہاں کی دولت ہی مل گئی ۔۔۔۔۔۔اسے پریشان کرنے کے چکر میں ،میں بیٹی کی ضروریات بھی پوری نہ کرتا ۔۔ پتہ نہیں پھر ہر ضرورت پوری ھو جاتی ۔۔۔۔۔۔میں شک کرنے لگا۔۔۔اور ایک دن اسکو کہہ بھی ڈالا ۔ یہ کون ھے جو تم کو سب کچھ دیتا ھے ۔۔۔۔۔۔ وہ دیکھے بنا سکون سے کہتی” اللہ”میں جھنجھلا جاتا۔
ہمیں پھر کوئی اولاد نہ ھوئی ۔۔ میں اکثر کہتا ۔۔گھر والے دوسری شادی کا کہہ رہے ہیں , اچھا کر لیں وہ کام کرتے کرتے کہتی ۔۔۔۔۔۔یہ تو نہیں تھا وہ میرے گھر والوں کا خیال نہیں کرتی تھی بہت اچھے تعلقات تھے ۔۔۔۔وقت گزر گیا ۔۔۔۔میرے عزائم بھی دم توڑنے لگے ۔۔میں نے محبت کو پس پشت ڈال دیا تھا مگر اسکے صبر نے مجھے جیت لیا تھا،میری محبت کا شجر ہرا بھرا ھو گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔مگر بیٹی پڑھ کر جب واپس آئی تو وہ عورت جسے میری کم ظرفی نے نہیں توڑا تھا ۔۔۔۔ کوئی طوفان اسے توڑ نہ سکا تھا ۔ وہ ٹوٹ گئی ۔۔۔۔اور اس دن مجھ پر بھی بہت کچھ کھلا تھا۔۔۔۔۔ رشتہ دیکھنے والے آ رہے تھے ۔ اس روز تو وہ صبح سے کچن میں تھی ۔۔۔نجانے کیا لینا تھا اس نے فروا کو آواز دی ۔۔۔۔۔۔۔یار آپ ہر وقت بھیک کیوں مانگتی رہتی ہیں ،ساری عمر ماں سے لے لے کر مجھے پالا ،اتنی جرات نہ ھوئی پاپا سے لیتیں ،ان کے سامنے بڑا بننے کے لئے بھکارن بنی رہیں ۔۔۔۔۔انھوں نے پھر بھی آپ کو کوئی مقام نہیں دیا ۔۔۔۔۔۔اب پھر تین ہزار مانگ رہیں اگر لڑکے کو نہیں دیں گی تو کوئی قیامت نہیں آ جائے گی ۔۔۔۔۔۔میں تو کہتی ھوں پاپا نے جو کیا آپ سے اچھا ہی کیا ۔۔۔۔۔یاد ھے جب آپ کے ماموں فوت ھوئے ۔۔آپ ساری رات ان کے پاؤں پکڑ کر منت کرتی رہیں ،کیا ملا نہیں جانے دیا آپ کو۔۔۔ کچھ بھی نہیں ملا آپ کو۔۔۔میں تیزی سے اٹھا۔ منظر عجیب تھا ۔۔وہ بت بنی پھٹی نگاہوں سے فروا کو دیکھ رہی تھی ،میں نے فروا کے منہ پر پہلی بار طمانچہ مارا۔۔۔۔ ’’کیا کہہ رہی ھو تم ماں سے ؟ ‘‘

ماما اس نے گھبرا کر ماں کو دیکھا ۔ میں بھی اسکی طرف بڑھا اور۔۔۔۔ اور وہ میری بانہوں میں جھول گئی ۔۔۔۔

’’ آہ ! تم چلی گئی۔۔فروا کی چیخیں ،پچھتاوے تمہیں واپس نہ لا سکے ۔۔۔۔۔بیوی تھی تو سب سہہ گئی مگر ماں تھی تو اولاد کی باتیں نہ سہہ سکی ۔۔۔وہ ماں جو ساری عمر میری بےنیازی سہہ کر بیٹی کو پالتی رہی ۔۔۔میں جانتا تھا وہ اپنی بیٹی کے لئے مجھے برداشت کرتی رہی۔۔۔۔۔۔۔مجھے معاف کر دو ۔۔ مجھے معاف کر دو ۔۔۔ میں تو اس سے معافی نہ مانگ سکا ۔۔۔۔۔۔۔فروا چھوٹی تھی تو اکثر میں ہی اس کے ذہن میں یہ باتیں ڈالتا تھا ۔۔مجھے خوف تھا۔ سب کی طرح وہ بھی صرف تمہارے گن گائے گی۔۔۔۔۔احساس کمتری اور کم ظرفی سے ہم نے تمہیں مار ڈالا ۔۔۔۔۔۔۔۔میں بچوں کی طرح بلک بلک کر رو رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔

You might also like
  1. Samina Saeed says

    مرد کا دل بہت پتھر کا ہوتا ہے اسے عورت کی محبت عورت کا صبر بھی نہیں پگھلا پاتا ۔ حقیقت کے قریب لکھا ہے ۔❤

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post