وضو : فریدہ غلام محمد

باہر کا منظر بےحد حسین تھا ،برفباری میں بھی دور سے روشنیاں چیر کر اندر آ رہی تھیں ،رات کو جس ہوٹل میں ٹھہرایا گیا تھا ۔۔۔وہ کسی داستان کا حصہ لگ رہا تھا ۔۔۔۔ تمام دیواروں میں طاق بنے ھوئے تھے جن میں لالٹینیں رکھی ھوئی تھیں ۔۔۔۔۔ صاف ستھری میزیں ،کرسیاں ۔۔۔۔۔۔۔۔ایک ہی آدمی تھا جس نے بھنا ھوا گوشت ،یخنی پلاؤ اور انڈوں کا حلوہ بنایا تھا ۔۔۔۔۔اب دونوں میزوں پر رکھ رہا تھا ایک طرف تین خواتین اور دوسر طرف چار مرد تھے ۔۔۔۔۔۔۔سب ورکشاپ کے لئے آئے تھے ۔۔اس کے بعد ہر کوئی اپنی شاندار نوکری کے لئے روانہ ھونے والا تھا ۔

عمر کی اچٹتی سی نگاہ خواتین کی جانب اٹھی تو لمحہ بھر کے لئے وہ ٹھٹھکا۔۔۔یہ صورت کہاں دیکھی تھی اس نے ۔۔۔۔۔۔سفید دودھیا رنگت ،نیلی آنکھیں ۔۔ستواں ناک ۔۔۔۔۔۔۔۔۔سر کو بڑے سلیقے سے ڈھانپا ھوا تھا جبکہ باقی دو خواتین اس سے بہت مختلف تھیں ،ان کی ہنسی کی آواز یہاں تک آ رہی تھی جبکہ وہ خاموشی سے کھانا کھا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسے کہاں دیکھا میں نے ۔۔۔۔۔آپ کھا نہیں رہے صاحب ۔۔۔۔۔وہ اس کے سر پر کھڑا تھا شاید فکرمند بھی ،پتہ نہیں کھانا اچھا نہیں ھے ۔۔۔۔۔کھانے لگا ھوں بابا ۔۔۔اس نے دھیان ہٹایا تو گل نے شکر کا سانس لیا ۔۔۔۔ابھی تو تین دن اس کا سامنا رہے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔خیر دیکھا جائے گا ۔

وہ خود کو پرسکون کرنے کی کوشش کرنے لگی۔کھانے کے بعد تھوڑی دیر گپ شپ ھوتی رہی ۔۔۔۔۔پھر تینوں اٹھ کر کمرے کی طرف جانے لگیں ۔۔۔۔۔۔گل نے ان سے معذرت کی ۔۔۔سوری گرلز ۔۔۔۔ میں کچھ دیر باہر بیٹھوں گی ۔۔۔۔۔۔برف بن جاؤں گی ۔۔۔۔۔ آگ کے سامنے ڈال دینا پھر ۔۔۔ وہ مسکرائی ۔۔۔۔عمر ساری باتیں سنتا آ رہا تھا مگر اتنی ہمت نہیں ھوئ کہ اس سے پوچھ ہی لے ۔۔۔ وہ ان کو ورکشاپ دینے والا تھا سب اس سے جونیر تھے مگر۔۔۔۔ کیا انہی سوچوں میں وہ غلطاں و پیچاں کمرے میں چلا گیا ۔

گل باہر نکلی تو ایک یخ ھوا کے جھونکے نے اس کا استقبال کیا ۔۔۔مگر آج عمر کو دیکھ کر شاید ہر احساس مر گیا تھا ۔۔۔۔۔وہ سیڑھیوں پر بیٹھ گئ ۔۔۔۔۔۔کتنے ہی لمحے بیت گئے ۔۔۔۔یہ کافی پی لیں ورنہ بیمار پڑ جائیں گی آواز پر چونک کر دیکھا ۔۔۔ وہ مسکراتی آنکھوں سے اسے دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔ اس نے رخ پھیر لیا تو وہ ذرا فاصلے پر بیٹھ گیا ۔۔کافی کا مگ اس کے ساتھ رکھ دیا۔۔۔۔۔دونوں خاموش تھے ۔۔۔۔۔۔پھر عمر نے خاموشی توڑ دی ۔۔۔۔۔’’ایک بات پوچھنا چاہتا ھوں‘‘ ۔

جی پوچھیں۔ اس نے آہستہ سے کہا۔۔۔۔ ’’میں یقین سے کہہ سکتا ھوں کہ میں نے آپ کو کہیں دیکھا ھے مگر مجھے یاد نہیں آرہا ھے کیا آپ کو بھی ایسا لگتا ھے ؟‘‘

وہ اسے دیکھتے ھوئے کہہ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔نہیں ایک ہی نہیں میں جواب دیتی وہ اٹھ گئ تھی مگر وہ وہیں بیٹھا رہا ۔۔۔۔ کوئی گنجل ھے تو سہی جو میں سلجھا نہیں پا رہا آخر کیا ۔۔۔۔۔گل کمرے میں آئی تو وہ سو چکی تھیں ۔۔اس نے کمبل اوڑھا اور سونے کی کوشش کرنے لگی
صبح وہ جلدی اٹھ گئ تھی ۔۔۔۔۔۔تیار ھو کر اس نے کچن کا رخ کیا ۔۔۔۔۔ارے آپ کیوں آ گئیں ۔۔بس ناشتہ تیار ھے ۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے یہیں دے دیجیے بھوک لگی ھے اور پھر باہر ٹھنڈ بھی زیادہ ھے ۔۔۔۔۔۔دراصل وہ باہر اسکا سامنا نہیں کرنا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔عمر سب سن چکا تھا ۔۔۔آپ کہاں سے ہیں بیٹا۔۔۔۔۔بابا اس کے سامنے پراٹھا رکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔شام کوٹ سے ۔۔۔۔۔۔۔اچھا اچھا ۔۔۔۔۔۔عمر پر جیسے جھناکا ھوا۔۔۔۔شام کوٹ ۔۔۔۔وہ بڑبڑایا ۔۔۔۔۔۔ شام کا دھندلکا ۔۔۔تیز بارش ۔۔۔۔۔۔وہ پیتا نہیں تھا ۔۔۔ اگرچہ جس کلاس کا وہ فرد تھا اسے معیوب نہیں سمجھا جاتا تھا۔۔۔نجانے کیوں ایسے موسم میں اس نے تھوڑی سی پی لی تھی ۔

صاحب! ایک لڑکی کب سے باہر بیٹھی ھے ۔۔۔۔۔۔۔کیوں ؟پتہ نہیں اوکے بلاؤ اسے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے دو گھونٹ اور پئے۔لڑکی اس کو پیتا دیکھ چکی تھی گھبرا کر باہر جانے لگی ۔۔۔۔۔۔بیٹھ جاؤ اس کی آواز میں اتنا رعب تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ وہ چپ چاپ بیٹھ گئ وہ اس کے قریب آ کر دوزانو بیٹھ گیا ۔۔۔۔۔۔ ۔۔آج کی شام کی مہمان تم ھو ۔۔۔۔ اس کی آنکھوں میں آنسو تھے وہ بس سر ہلا سکی ۔۔۔۔۔ وہ اس کے معصوم چہرے کو دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔چادر میں لپٹی ھوئی وہ لڑکی ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ ذرا اور قریب ھوا تو اس نے اپنے چہرے پر ہاتھ رکھ لئے ۔صاحب میں وضو سے ھوں ۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے ہاتھ مت لگائیے گا ۔۔۔۔ عمر ایک جھٹکے سے پیچھے ہٹا ۔

’’خان‘‘  ۔۔۔ وہ دھاڑا ۔۔۔۔ جی صاحب ۔۔۔۔اسے گھر چھوڑ آؤ اور جو کام ھے اس سے پوچھتے آنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لڑکی کو لگا ۔۔۔۔۔جیسے کسی نے کانٹوں سے اس کا دامن کھینچ کر باہر نکال لیا ھو ۔۔۔۔۔ اسے یاد تھا ۔۔۔۔۔۔اس کے باپ کی زمین کسی نے ہتھیا لی تھی ۔۔۔۔وہ کمزور تھا ۔۔۔۔۔۔چند دن میں ہی اس نے زمین ان کو دلوا دی تھی یہ اسکی پہلی پوسٹنگ تھی ۔۔۔۔۔پھر وہ سب بھول بھال گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔آج دس سال بعد ۔۔۔۔۔۔ یہ لڑکی ۔۔۔۔ اس کے مد مقابل تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ خاموشی سے ٹیبل کی طرف بڑھ گیا۔۔۔۔۔۔۔ورکشاپ کے بعد سب واپس آگئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ تو خاموش تھی مگر آج عمر بھی خاموش تھا گل نے اسکی خاموشی محسوس کی ۔۔۔۔۔۔۔۔سب اتر کر کمروں میں چلے گئے۔

’’ایک منٹ مس گل‘‘ ۔۔۔۔اس نے سیڑھیاں چڑھتے ھوئے اسے آواز دی ۔۔۔۔۔۔کام ھے آپ سے اس کی آواز میں تحکم محسوس کر کے وہ نیچے اتر آئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تشریف رکھیں ۔۔۔۔اس نے اسے کرسی پر بیٹھنے کا اشارہ کیا ۔۔۔ وہ خاموشی سے بیٹھ گئی تھی ۔۔۔۔۔تو۔۔۔آپ گل افروز ہیں ؟جی ۔۔۔شام کوٹ سے۔۔ تب اس نے اپنی نظریں اٹھائیں ۔۔۔وہ بغور اسے دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔جب میں پوچھ رہا تھا آپ نے بتایا کیوں نہیں ۔۔۔ اس کی ضرورت ہی کیا تھی ۔۔۔۔۔ ضرورت تھی مس گل ۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا بات کرتے ۔۔۔۔۔اب اس کی نگائیں جھک گئیں ۔۔۔۔۔۔۔۔آپ باوضو تھیں ۔۔۔۔۔آپ اپنے رب کو پکار رہی تھیں ۔۔۔۔ میں نے چھوا تک نہیں ۔۔۔ کیا میرا رب نہیں تھا کیا اس نے مجھے روک نہیں دیا ۔

’’وہ سب ٹھیک ھے مگر آپ کی ٹرانسفر کے بعد سب نے ہمارا جینا مشکل کر دیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔انھوں نے میرا تماشا بنا دیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔آپ کے گھر جانا میرا جرم بن گیا تھا ۔۔۔۔۔۔میں خان کے ساتھ درخواست دینے آئی تھی مگر اس نے آپ کو اور ہی تاثر دیا وہ اپنی دشمنی نکال رہا تھا ۔۔۔ آپ کے جانے کے بعد اس نے میری عزت اچھالی تو ہم مجبور ھو کر شہر چلے آئے ۔۔۔ بہرحال اب سب ٹھیک ھے ۔‘‘

اس نے پرسکون آواز میں کہا۔

’’آپ میرے بارے میں کیا رائے رکھتی ہیں؟‘‘

یہ سوال اچانک تھا ۔۔۔ اس نے نظریں نہیں اٹھائیں ۔

’’آپ ایک اچھے انسان ہیں‘‘

عمر اس جواب کی توقع نہیں کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔اچھا۔

’’ہاں اس لئے کہ اس شام آپ نے پی رکھی تھی یہ آپ کا ذاتی فعل ھے مگر مجھے کوئی نقصان نہیں دیا ۔۔۔۔۔ اللہ سے آپ کو بھی اتنا ہی پیار ھے جتنا مجھے ۔۔۔۔ میں آپ کو برا نہیں کہہ سکتی‘‘

وہ چپ ھو گئی ۔۔۔۔۔۔اس نے عمر کو بری کر دیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جو تہمت اس پر عمر کی وجہ سے لگی اسے جتایا ہی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دونوں چپ چاپ اٹھ گئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔کہانی یہاں ختم نہیں ھوئی اچانک بابا کو اسکی شادی کی فکر ستانے لگی کچھ ہی عرصہ بعد اس کی شادی میجر حمزہ سے ھو گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔زندگی مسکرانے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن ایک شام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حمزہ دیر سے آئے ۔۔۔۔چائے پلواو یار ۔۔۔۔۔اچھا ۔۔۔۔۔اس نے چائے بنائی اور کمرے میں ہی لے آئی ۔۔۔۔۔ آج دیر نہیں کر دی ۔۔۔۔۔۔۔ہاں ایک دوست کی ڈیتھ ھو گئی حادثے میں ۔۔۔۔۔۔مجھ پر ایک احسان یہ بھی تھا کہ تم سے شادی کروائی ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ کہتا تھا اگر میں شادی شدہ نہ ھوتا تو خود کر لیتا ۔۔۔ کیا پیارا دوست سے تھا ۔۔۔ابھی دو سال سے باقاعدہ نماز اور روزے رکھنے لگا تھا ۔۔۔۔۔ پینا چھوڑ دی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔دیکھو آج بھی روزے میں رخصت ھوا ۔۔۔۔۔۔۔۔ گل کو لگا اسے سانس نہیں آ رہی ۔۔۔۔۔۔وہ کہتا تھا۔

’’یار کسی نے مجھے اچھا کہہ کر خرید لیا ھے اب میں کوئ غلط کام کر ہی نہیں سکتا‘‘ ۔۔۔۔۔۔۔۔کیا نام تھا ان کا؟ ’’عمر ‘‘

اچھا اللہ ان کی مغفرت کرے آپ پرسکون ھو جائیں آپکا لاڈلا اٹھنے والا ھو گا ۔۔۔۔۔۔۔وہ جلدی سے کتابیں ،چیزیں بلاوجہ سیٹ کرنے لگی ۔۔۔آنکھوں سے برسات جاری تھی ۔۔۔۔۔کتنے احسان کر گئے تم مجھ پر عمر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کتنے ۔۔ وہ بے آواز روئے جا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ باہر بارش کے شور نے اسکے آنسوؤں کی لاج رکھ لی تھی

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post