ماسک : فریدہ غلام محمد

میں دیکھ رہا تھاکہ وہ نم آنکھوں کے ساتھ میری جانب جھکے ۔ میں نے آنکھیں موند لیں۔میں کسی سے بات نہیں کرنا چاہتا تھا ۔۔۔۔۔ میں نے موت کو اتنے قریب سے دیکھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ وحشت زدہ گارڈ جس سے میں الجھ پڑا تھا ۔۔ میں حق پر تھا ۔۔۔ میں اسے بتا رہا تھا ۔۔کرونا جیسی وبا میں وہ بغیر دستانوں اور ماسک کے کیوں ٹھہرا ھے ۔۔۔ میں اس کے لیے کہہ رہا تھا یا مجھے اپنی فکر تھی ذہن ماؤف تھا ۔۔۔۔۔میں نے بےبسی سے آنکھیں بند کر لیں ۔

نم انکھیں اوجھل ھو گئیں ۔۔۔۔ کیا کرتا میں ان کو دیکھ کر۔۔۔۔۔۔۔۔سر آئیں ڈاکڑ صاحب ھوش میں آ رہے ہیں ۔۔۔ پھر وہی نم آنکھیں ۔۔بےچارگی ۔۔۔ ہاں یاد آیا جب میں اسے ڈانٹ دیا تھا اسکی عزت نفس کی دھجیاں اڑا رہا تھا تو ایسی بے چارگی تھی اس کے چہرے پر ۔۔۔۔۔۔کتنی بےبسی تھی اس کی آنکھوں میں ۔۔۔۔ ۔ وہ چیخ رہا تھا ۔۔۔۔                   ’’تم نہیں جانتے ماسک کتنے کا آرہا ھے تمہارا تو محل ھے نا جو تم نے غریبوں کے خون سے بنایا ھے ۔۔۔۔ تم مسیحا نہیں ھو ۔۔۔تم میں درد نہیں ھے تم بےدرد ھو ورنہ سامنے والے کا درد محسوس کر سکتے ۔۔۔ارے جتنے کا ماسک اور دستانے ملیں گے اتنے میں ،میں اپنے بچوں کا ایک وقت کا کھانا لے لوں گا ۔۔ بہت فکر ھے میری بولو‘‘

وہ پھٹ پڑا تھااس کی آنکھیں لہو رنگ ہوگئیں ۔

’’بولو سچ بولو ۔۔۔تمہیں اپنی فکر ھے تم کو ڈر ھے کہیں یہ خون آشام وبا تمہیں اپنے چنگل میں نہ لے لے ۔۔۔۔۔ارے قیامت کب آئے گی ۔۔۔۔ اس آفت نے تم لوگوں کے جذبات کو نہیں بدلا پھر کب بدلو گے۔۔۔۔۔۔۔ ‘‘

بکواس بند کرو ۔۔۔۔ یہ میں تھا ۔۔۔۔میری انا زخمی ھوئی تھی ۔۔۔میں جانور بن گیا تھا ۔۔۔۔شاید میں نے اس کے منہ پر زور کا تھپڑ جڑ دیا تھا اور اسکی بندوق سے نکلی گولی میرے بازو میں پیوست ھو گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ مجھے نہیں پتہ پھر کیا ھوا ۔۔۔ وہ تو انسان تھا ۔۔۔۔ میں انسانیت کے دائرے سے باہر آ گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ دس بندے جو اس کے بولنے پر جمع ھوئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ان میں تماشا بنا دیا تھا اس نے ۔۔۔۔۔۔۔۔تمہیں اپنی فکر ھے علی۔۔۔۔مجھے جھرجھری سی آ گئ ۔۔۔۔۔بیٹے ۔۔۔۔۔ وہ نم آنکھیں ۔۔مجھے پولیس سے بات کرنی ھے ۔۔میں چھت پر نظریں جمائے تھا۔کیوں تکلیف دے رہے ھو وہ حوالات میں بند ھے مقدمہ بنے گا اسکا حشر ھو جائے گا ۔۔۔۔۔۔ ایک طاقتور کی آواز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پولیس کو بیان دینا ھے مجھے ۔۔۔۔۔۔۔اچھا اچھا ٹھیک ھے ۔انھوں نے سیل فون پر پولیس آفیسر کا نمبر ملایا۔۔ میرا بیٹا بیان دینا چاہتا ھے ابھی ۔۔۔۔۔ فورا”بھیجیں اپنے بندے کو ۔۔۔۔۔۔۔ میں نے نرس کو اشارا کیا تکیے سے ٹیک لگوا دے ۔۔۔۔۔۔۔پولیس پہنچ گئی ۔۔۔۔جی سر۔۔۔۔۔اس کو چھوڑ دیجیے ۔۔ جی لکھنے والے کا قلم رکا ، وہ نم آنکھیں پھٹ سی گیئں ۔۔۔۔اس کا کوئی قصور نہیں ھے ،تھپڑ میں نے مارا ،میں بےقابو ھوا ۔۔۔وہ بیچارا مجھے روک رہا تھا اسی اثنا میں شاید بندوق چل گئی اس کو چھوڑ دیجیے ۔۔۔۔۔۔۔یہ کیا کہہ رہے ھو بیٹا ۔۔۔۔پاپا آگے بڑھے ۔۔۔ جذباتی ھونے کی ضرورت نہیں تب آپ وہاں نہیں تھے ۔۔۔ اور لوگ تو تھے ۔۔۔۔۔ وہ اس غریب کا ساتھ کیوں دیں گے ۔۔۔۔اب میں ان کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر دیکھ رہاتھا۔۔۔۔۔۔اور آپ اس کو چھوڑ دیں اور میرے پاس لے آئیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پاپا کو میری ہوش مندی پر شک ھو چلا تھا ۔۔۔ اوکے سر ۔وہ بیان لے کر جا چکا تھا ۔۔۔۔۔آپ جیسے سیٹھ تو ذخیرہ اندوزی کرتے ہیں ۔۔۔۔مگر مجھے مسیحا بنانے کی بجائے کیوں جانور بنا دیا ؟جواب ھے آپ کے پاس ۔۔۔۔۔ فلاں کمپنی کی ادویات لکھو۔ باہر کی سیر کرو ۔۔۔۔گاڑی گفٹ لو،۔۔اے ۔سی لگواو ۔۔۔۔۔۔۔ دنوں میں آسمان کی بلندیوں پر پہنچ جاؤ گے ۔۔۔۔ میں نے مریضوں کے چہرے دیکھنے چھوڑ دیے کہیں ان کی حسرتیں نہ نظر آ جائیں۔۔۔۔بےچارگی نہ دکھ جائے ۔۔۔۔۔ میں مسیحا کہاں رہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ میں تو وحشی بن گیا تھا ۔۔۔۔۔۔ میری ماں کی باتیں اس کے دنیا سے جانے کے بعد مجھے یاد آتی تھیں مگر میں سر جھٹک دیتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مجھے کیا بنا دیا آپ نے ۔۔۔۔ میں رو رہا تھا ۔۔۔۔ وہ سر جھکائے کھڑے تھے ۔۔۔اتنے میں دروازہ کھلا ۔۔۔۔۔وہ میرے سامنے تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ اس کے اندر کی گھٹن ختم ھو گئی تھی ۔۔ غبار نکل چکا تھا ۔

وہ عجیب کیفیت میں تھا ،شرمندہ تھا ۔۔۔ٹوٹا ھوا تھا ۔جیسے کسی نے موت کے پنجے میں جاتے جاتے اسے زندگی کی طرف کھینچ لیا تھا۔۔۔۔۔ آپ نے مقدمہ واپس لے لیا۔۔۔۔۔۔ ہاں تم نے کچھ نہیں کیا ۔۔۔۔۔۔۔یہ بات ہمیشہ یاد رکھو ۔۔۔۔ کاؤنٹر پر جاؤ وہاں سو ماسک اور پچاس جوڑی دستانوں کی لیتے جانا اور ہاں ۔۔۔ کچھ روپے ھوں گے ان سے بچوں کا کھانا بھی لے جاو۔۔۔ اس کی آنکھوں میں حیرت تھی ۔۔ وہ بولنے کی کوشش کر رہا تھا مگر زبان ساتھ نہیں دے رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ایک کام ذمے ھے تمہارے میں نے اسے مسکراتے ھوئے دیکھا ۔۔۔ جی حکم۔ ۔۔۔ حکم نہیں درخواست ھے ۔۔۔۔۔ تمہارے جتنے ساتھی ڈیوٹی پر ہیں اور ان کے پاس یہ اشیا نہیں ۔۔۔۔۔کل مجھے نام اور پتے دے جانا سب کو مل جائیں گے ۔۔۔ اللہ آپ کو جزا دے صاحب ۔۔۔۔۔اللہ تمہیں بھی جزا دے یہ کہہ کر میں نے آنکھیں بند کرلیں ۔۔۔۔۔

ایک گولی لگی تھی اس نے تو میرے بازو پر ماری تھی ۔۔۔۔۔مجھے ضمیر پر لگی ۔۔۔۔ میں نے اس جانور کو ہمیشہ کی نیند سلا دیا تھا اب میں ایک انسان تھا ،عام انسان ۔۔۔جس کو چہروں کے دکھ پڑھنے آگئے تھے ۔۔۔۔۔۔ جلد ہی ہاسپٹل کے دو حصے کروا دیجیے پاپا ۔۔ ایک بالکل مفت علاج کا حصہ ھو گا جہاں سے ہر کوئی اچھی دوا مفت لے کر جائے گا ۔۔۔۔۔۔ کوئی نسخہ اس لئے پھاڑ کر نہیں جائے گا کہ اس کے پاس روپے نہیں ۔

میں سامنے کھڑے اپنے باپ کو دیکھا ان کی آنکھوں میں آنسو تھے ۔۔۔ اور میں اتنا فرق تو محسوس کر ہی سکتا تھا یہ خوشی کے آنسو تھے

 

You might also like
Loading...