خواب : فریدہ غلام محمد

میں اجازت ملتے ہی کمرے میں داخل ھوئی ،سادہ سا کمرہ۔۔۔۔ہلکے نیلے رنگ کے پردے ۔۔۔۔ان میں سے دھوپ چھن کر آرہی تھی ۔۔۔۔۔۔سادہ سا براؤن صوفہ ،صاف ستھری لکڑی کی میز ۔۔۔۔۔۔۔میں کہاں بیٹھوں بھلا ۔۔۔ خود سے ہمکلام تھی ۔۔۔۔۔۔پھر اکیلے صوفے پر بیٹھ گئی ۔

وہ داخل ھوئے تو میں بےساختہ کھڑی ھو گئی ۔۔۔ان کے چہرے پر مسکراہٹ تھی ،ارے بیٹھو ۔۔۔۔۔۔۔ان کے لہجے میں شفقت تھی ،گندمی رنگ ۔۔۔۔۔۔ہلکی سی داڑھی ۔۔۔چمکتی آنکھیں ۔۔۔۔۔۔وہ بیٹھ گئے ۔۔ وہ، میں سول سروس میں آئی ھوں تو سوچا کچھ مشورہ کر لوں ۔۔۔۔۔۔۔

’’نماز پڑھتی ھو؟‘‘

جی سوال گندم جواب چنا ۔۔۔۔۔ہاں جی ۔۔۔۔۔۔

ڈیوٹی سمجھ کر یا شوق سے۔۔۔۔۔۔ایک ایک لفظ آہستہ آہستہ بول رہے تھے ۔۔۔۔۔کبھی فرض سمجھ کے ۔۔کبھی ذرا شوق سے مگر شوق سے پڑھنے سے گھبراتی ھوں ۔۔۔ کیوں ؟رونا بہت آتا ھے ،رقت طاری ھو جاتی ھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔انھوں نے سر جھکا لیا ۔۔۔۔۔۔۔میں ان کی خاموشی سے گھبرا گئی ۔۔۔

تم سول سروس کے قابل نہیں ھو ۔۔ جی ۔۔۔ میں چونکی۔۔۔۔۔میرا مشورہ ھے تم کسی کالج میں پڑھاؤ ۔۔۔ تیز دھاری تلوار پر چلتے چلتے لہولہان ھو جاؤ گی ۔۔ یہاں بولنا کچھ اور کرنا کچھ پڑے گا ۔۔ دل کو تسلی دو گی کہ یہ میری نوکری کا تقاضا ھے مگر جونہی تنہا ھو گی ۔۔ضمیر ملامت کرئے گا ۔۔۔۔۔ ہاں یا پھر میری طرح بن جاؤ جس میں اتنی ہمت ھو کہ ملکہ برطانیہ کے سامنے کہہ سکو ۔۔۔ رمضان ھے ہم ظہرانے میں شامل نہیں ھو سکتے۔۔ اور پاکستانی صدر تم کو گھورتے رہ جائیں یا پھر ہر روز کی ٹرانسفر کے لئے تیار رہو ۔۔۔۔ اب وہ چپ ھو گئے ۔۔۔یہ چپ ہم میں کافی دیر حائل رہی ۔۔۔ میں اٹھی ۔۔۔ تو وہ بھی کھڑے ھو گئے برا لگا۔۔۔۔۔نہیں سر ۔۔۔۔۔اب اجازت چاہوں گی۔۔۔۔۔۔جیسے تمہاری مرضی ۔۔بےنیازی بھی تھی اب حد درجہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کچھ دیر بعد میں جہاں تھی وہاں قہقہے بھی تھے ،باتیں بھی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔جاو سرمد چائے لے آ ۔۔دیکھ کتنا اداس منہ بنایا ھویا اس کڑی نے ۔۔۔آ ایتھے آ کے بہ جا ۔۔۔۔۔۔ انھوں نے اپنے ساتھ جگہ بنائی معصوم سا چہرہ ۔۔۔۔۔۔۔۔زندہ ہنسی ۔۔۔ عجب طرح کا پاکیزہ ماحول ۔۔۔لڑکیاں بیٹھی تھیں ،لڑکے بھی تھے مگر ۔۔ جیسے حرم میں کسی کو کسی کی خبر نہیں ھوتی،یہاں بھی کسی کو کسی کا پتہ نہیں تھا سب بیٹھے تھے ،ان کی معصوم باتوں میں گم ۔۔۔۔۔۔۔۔کڑئیے سامنے ویکھ۔۔۔۔انھوں نے انگلی سے اشارہ کیا ۔۔۔۔دروازے کے اوپر ان کے گرو کی تصویر تھی ۔۔۔۔۔اس کا پتہ ھے تم کو ۔۔۔۔۔۔۔ ہاں جی ۔۔۔ میں نے سر جھکا لیا ۔۔۔۔۔۔۔میں نے اس سے بہت کچھ سیکھا ۔۔ ۔۔۔۔میں نے اسکو اپنا گرو مانا ۔۔۔ کس میں جرات ھے جو مجھے اس کو گروماننے سے روکے ۔۔۔۔۔۔۔ کسی کی نہیں سب بولے یہ لیں آپ کی چائے ۔۔۔۔۔ ایس واسطے وی لے آؤ ۔۔۔ اچھا دس مسلہ ۔۔۔۔۔۔۔میں نوکری کرنا چاہتی ھوں۔۔۔۔ سول سروس کی ۔۔۔۔ فیر ۔۔ کچھ نہیں وہ کہتے ہیں میں پڑھاوں ۔۔۔۔ اچھا اچھا ۔۔۔۔ وہ ہنس پڑے ۔۔۔ پڑھاؤ پھر یہی ٹھیک ھے جو انھوں نے کہا بس ایک بات ھے تم میں لکھنے کی بہت طاقت ھے لکھ اور لکھدی رہ ۔۔۔۔۔۔۔ اچھا لکھنا وی اک نیکی اے۔۔۔دنیا کہانیوں سے بھری پڑی ھے ۔۔۔۔ دکھ بھری کہانیاں ۔۔۔ کہیں خوشیاں ہیں ۔۔۔۔ کہیں ظالم ہیں،کہیں مظلوم ہیں کڑئیے میری گل سن اے دنیا ست رنگی اے تو چاہیں تے اٹھوا ں رنگ وی بھر دے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں ۔۔۔۔۔۔۔اچھا جی میں چلوں ۔۔ اس طرح نہیں چل چا پی انھوں نے پیالی مجھے پکڑا دی ۔۔ جلدی جلدی پی کر اٹھی تو انھوں نے بہت محبت سے رخصت کیا۔۔۔۔چار قدم پر میں وہاں تھی ۔۔۔۔۔میں نے گیٹ کھلا دیکھا تو خود ہی اندر چلی آئی ۔۔۔وہ سامنے ہی پودوں کو پانی دے رہے تھے ۔۔۔۔۔آو بیٹا ۔۔۔۔۔۔کیسی محبت میں گندھی آواز۔۔۔۔ دودھ کی طرح سفید ،درمیانہ قد ۔۔۔۔۔انھوں نے پائپ مالی کے حوالے کی اور مجھے اندر آنے کا اشارہ کیا ۔۔۔۔۔۔ارے بیٹھو ۔۔۔۔۔دیکھو تو کون آیا ھے ۔۔۔۔۔۔۔ان کی آواز پر وہ شفیق چہرہ کمرے میں داخل ھوا ۔۔۔۔۔ انھوں نے میرے سر پر ہاتھ پھیرا اور تخت پوش پر اپنے ساتھ بٹھا لیا ۔۔۔۔ کیسی ھو ؟جی ٹھیک ھوں۔ پڑھتی ھو یا پڑھاتی ھو؟یہ آواز ان کی تھی جو مجھے اندر لائے تھے ۔۔۔۔۔۔۔پڑھ لیا جی ۔۔۔۔اچھا اب پڑھاؤ گی ۔۔۔۔۔ وہ مسکرائے ۔۔۔ مطلب سوال کی گنجائش باقی نہ تھی ،میں کبھی اتنی بےبس نہیں ھوئی تھی جتنی اب ھوئی ۔۔۔۔۔۔۔مجھے لگتا تھا وہ ایک سوال جو میں نے سب سے پہلے کیا تھا شاید لاؤڈ اسپیکر پر کیا تھا ۔۔۔کبھی کچھ لکھا بھی ھے ۔۔۔۔۔اب وہ پیاری خاتون بولیں جن کی آواز میں کوئ سحر تھا ،شفا تھی۔۔ ہاں جی مگر سوچتی ھوں یہ مردوں کی حاکمیت ،عورت کی شہرت سے جلتی تو ھو گی؟ ہاں جلتی ھے وہ مسکرائیں ۔۔۔ تم اس کی پرواہ نہ کرو ورنہ ہر قدم پر سوچنا پڑے گا ۔۔۔وقت کو استعمال کرو ۔۔۔۔۔۔۔اپنا مشاہدہ تیز کرو لکھنے میں مدد ملے گی ۔۔کچن میں،بیڈ کی سائیڈ پر ہر جگہ کاغذ قلم ھونا چاہیے ۔۔انھوں نے شفقت سے مجھے سمجھایا ۔۔۔۔ تب ہی وہ بولے ۔۔۔۔۔۔۔وہ کاغذ قلم کا اس لئے بھی کہہ رہی ھے ۔۔۔جہاں خیال آئے وہیں بیٹھ کر لکھ لو۔۔۔۔۔ارے کیا لو گی ؟وہ چونک کر اٹھیں ۔۔۔۔کچھ نہیں پلیز میں پھر آؤں گی ۔۔۔۔۔۔ آتی رہنا اب وہ بولے تھے میں خداحافظ کہہ کر باہر نکلی ۔۔۔مڑ کر دیکھا وہ پودوں کو پانی دے رہے تھے یہ گھنے درختوں کی مانند سایہ دینے والے لوگ کتنے پیارے ھوتے ہیں ۔۔۔کافی دیر چلتے چلتے وہ میرے سامنے آگئے جن کو میں نے تب پڑھا جب میں خودکشی کی کوشش کرتی تھی ،جن دنوں میں سردیوں کی اداس شاموں میں پھوٹ پھوٹ کر روتی تھی ۔۔۔۔۔۔مجھے جینے کا مقصد نظر نہیں آتا تھا ۔۔۔۔انھوں نے کمال شفقت سے میرے سر پر ہاتھ رکھا ۔۔۔ کیا سیکھا زندگی سے پھر؟وہی جو آپ نے فرمایامیں نے اپنی رضا کو اللہ کی رضا میں ضم کر دیا ھے ۔۔۔۔وہ جو چاہتا ھے وہی بہتر ھے جو بھی مصیبت آئے وہ سزا نہیں آزمائش ھوتی ھے جسے صبر و شکر کے ساتھ سہنا چاہیےاور میں نے پڑھ بھی لیا مشورہ دیں گے میں نے نظریں جھکا لیں ۔۔۔پڑھاو ۔۔۔لکھو ہمارے ہاں تعلیم اور علم کی کمی ھے وہ مسکرا رہے تھے ۔۔آپ سب کون ہیں سرکار ۔۔ایک ہی بات ،ایک ہی مشورہ انھوں نے لب وا کئے۔۔۔۔اسی وقت کسی نے دروازہ بجایا۔۔۔۔ اور گفتگو ادھوری رہ گئ میں ہڑبڑا کر اٹھ بیٹھی ۔۔۔۔۔۔۔۔بوا سامنے دو لفافے لئے کھڑی تھیں ۔۔۔ یہ لفافے تمہاری اماں نے دیے ہیں کہہ رہی تھیں ڈاکیا دے گیا ھے اچھا میز پر رکھ دیں ۔۔۔۔۔۔۔میں نے جوتے پہنے اور جلدی سے وضو کیا ،باہر اماں بچوں کو قرآن پڑھا رہی تھی ۔۔۔۔۔جلدی سے نماز کی تیاری کی ۔۔۔۔۔پڑھ کر دعا مانگی اور پھر چائے بنانے کچن میں چلی گئ ۔۔۔بوا جی یہ اماں کو دے آئیں اور پھر خود بھی پی لیں ۔۔۔ان کو دے کر اپنا کپ لے کر کرسی پر بیٹھی ۔۔۔۔۔۔۔کیسا خواب تھا ۔۔۔۔وہ سب لوگ۔ ترتیب بنانے لگی پہلے قدرت اللہ شہاب صاحب کے پاس گئ ۔۔۔۔۔انھوں نے تو فیصلہ ہی سنا دیا ۔۔۔۔ممتاز مفتی صاحب نے تو توسیع فرما دی بس پڑھانا ھے ،لکھنا ھے اور بانو آپا اور اشفاق احمد بابا جی نے بھی اسی بات کو سامنے رکھا ۔۔حضرت واصف صاحب ایک پل ملے مجھ سے میرا سبق سنا اور وہی مشورہ دیا پھر آنکھ کھل گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔یک لخت لفافوں پر نظر پڑی ۔۔۔۔۔۔جلدی سے اٹھائے ۔۔۔۔۔۔۔ایک کھولا ۔۔۔۔سول سروس کی ٹریننگ کا تھا ،دوسرا پبلک سروس والوں کا مجھے لیکچررشب مل گئی تھی ۔۔۔۔۔کیا خواب آنے والے دنوں کی پشین گوئی کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔میرے دل میں اک خوف تھا کیا کرنا چاہیے ۔۔۔۔۔اماں سے پوچھا تو انھوں نے مجھ پر چھوڑا ۔۔ کیا یہ سب ۔۔۔اللہ کی طرف سے تھا ۔۔۔۔سوال در سوال اپنی رضا کچھ نہیں بس اللہ کی رضا میں ضم کر دو ،پڑھاو علم دو بہت کمی ھے یہاں علم کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یاخدا۔۔۔۔ میں نے ٹریننگ والا لفافہ پھاڑ ڈالا اور پرسکون ھو گئی ۔۔۔۔۔فیصلہ تو سب نے سنا دیا تھا اب اسے اللہ کا فیصلہ سمجھ کر ایک دم تھکن اتر گئ ۔۔۔۔۔۔۔۔ابھی ایک ہفتہ ھے اس میں ساری تیاری بھی کرنی ھے اور پھر پہلے دونفل شکرانے کے بھی ۔۔۔۔اب کوئی الجھن نہیں تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔راستہ صاف تھااور منزل بھی،

 

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post