کُچھ دوھے


از: نوشی ملک
بےدرداں، بے لجاں دے سَنگ کدی نہ لائیو لاگ
تن من جل سَواہ ہو جاوے  بِن دُھونی بِن آگ
(بے درد اور بے وفا لوگوں کے ساتھ کبھی بھی تعلق نہ جوڑیں ،
جسم اورجان بغیر آگ اور شعلوں کے راکھ بن جاتے ہیں)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جس کے من میں گُھپ اندھیرا، دیپ جلا نہ کوئی
اُس مورکھ کی کالی قسمت ، دیکھ  دیکھ   میں روئی
(جس کے دل میں گہرااندھیرا ہے ،کوئی چراغ روشن نہیں ۔
اُس نادان کی بدقسمتی دیکھ کر میں رَو دی)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دَھن دولت کے پیچھے پیچھے بھاگے جائیں لوگ
مَن کی پریت پیاری  لیکن کال پڑا سنجوگ
(لوگ دولت کے پیچھے بھاگے جارہے ہیں ۔
من کی محبت،پیاری ہے لیکن مِلن کا کال پڑ گیا ہے)

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post