مری زباں پہ جاری ہے آج ذکرِ حُسین


شاعر: کوثر نیازی​
دل و دماغ     میں مہر و وفا کے افسانے
تصورات میں روشن فضائے بدر و حُنین
خوشا یہ اوجِ مقدر، زہے یہ عز و شرف
مری زباں پہ جاری ہے آج ذکرِ حُسین
نہ فکر سود و زیاں کی، نہ ذکرِ تیغ و تبر
حُسین  ، راہِ خدا    میں    تری یہ بے تابی
بہار    گلشنِ    اسلام    میں    پلٹ    آئی
کہ تیرے خون سے قائم ہے اس کی شادابی
کہیں    بھی    اہلِ محبت    کی تشنگی    نہ بجھی
فرات و نیل کے ساحل سے تابہ گنگ وجمن
برائے    لالہ و گل    اجنبی    ہے فصلِ بہار
خزاں کے دستِ تصرف میں آگیا ہے چمن
ہر ایک سمت میں عفریت ظلم کے رقصاں
خدا    کے    دین    کا   حلقوم ہے تہِ شمشیر
نئے    یزید  ،    نئی    کربلا    ہوئی    پیدا
زمانہ    ڈھونڈ    رہا    ہے    کوئی    نیا شبّیر

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post