احمدندیم قاسمی کے دس اشعار


اشعار: احمد ندیم قاسمی
انتخاب از: سیماب شیخ
ابھی ’’کُن‘‘ کہتے کہتے رہ گیا ہوں
محبت    میں    عجب عالم   ہوا    ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لہر اُٹھتی ہے نہ دریا میں بھنور پڑتے ہیں
کوئی    چارہ    نہ رہا    پار   اُترنے کے سوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آندھیوں میں چراغ لے کے چلوں
اور    عناصر    کو دنگ دنگ کروں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تھک کے ٹیلوں پہ اُتر آئی ہیں پیاسی چڑیاں
جیسے صحراؤں میں چشمے ہوں    اُبلنے    والے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو شاخ تنے کی نفی کر دے
اس شاخ پہ کیا    گلاب آئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سونی سونی گلیاں ہیں، اُجڑی اُجڑی چوپالیں
جیسے کوئی آدم خور، پھر گیا ہو گاؤں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات عجیب رات تھی، ہم تھے خدا کی ذات تھی
چاند بھی زَرد زَرد تھا، تارے بھی خال خال تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اتنا مانوس ہوں سناٹے سے
کوئی بولے تو برا لگتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گو ہم کو خدا نہ ہاتھ آیا
امکان کے بیج بو گئے ہم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاعر ہو    کہ    حکمراں    کہ صوفی
اِس دور میں سب کا رنگ فق ہے

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post