کُچھ کھٹی میٹھی یادیں(48) : نیلما درانی


نیلما ناہید درانی
چار دوست جو گھر سے نکلے۔۔۔۔آگئے سب لاہور
حیدر آباد کی چوڑیاں، حیدرآباد کی مہندی۔۔۔۔اور حیدر آباد کی ساوتری۔۔۔۔تینوں سے مجھے الفت رھی ہے۔۔۔۔ساوتری مجھے کیسے ملی۔۔۔۔یہ بھی ایک عجب داستان ہے۔۔۔۔خواب اور جادو بھری کہانیوں جیسی۔۔۔۔۔ذوالفقار علی بھٹو کے دور میں ۔۔۔۔کراچی میں طلبا کنوینشن کا انعقاد ھوا۔۔۔جس میں ملک بھر سے طالب علم شریک ھوئے۔۔۔۔ایک ٹرین لاھور سے طالب علموں کو لے کر کراچی کی جانب روانہ ھوئی۔۔۔
جس میں طالبات کے لیے الگ ڈبے مخصوص تھے۔۔۔
میں ٹرین چلتے ھی اوپر والی برتھ پر جا کر سو گئی۔۔۔لیکن کچھ دیر بعد ٹرین ایک جھٹکے سے رک گئی۔۔۔
پتہ چلا کسی طالب علم نے زنجیر کھینچ دی ہے۔۔۔۔کیونکہ ٹرین اس کے گاوں کے قریب سے گزر رھی تھی۔۔۔وھاں کوئی ریلوے اسٹیشن بھی نہیں تھا۔۔۔۔لہذا اس نے زنجیر کھینچ کر ٹرین رکوائی۔۔۔اور اپنے چند دوستوں کے ساتھ۔۔۔۔۔اپنے گھر والوں سے ملنے چلا گیا۔۔۔۔۔جب تک وہ واپس نہیں آیا۔۔۔۔ٹرین اس کے انتظار میں رکی رھی۔۔۔۔
سارے کالجوں اور یونیورسٹی کے سٹوڈنٹ لیڈر۔۔۔پریشان رھے۔۔۔۔مگر سب کا خیال رکھتے رھے۔۔۔۔
خدا خدا کر کے ٹرین چلی۔۔۔۔میں نے اوپر والی برتھ سنبھالی اور سو گئی۔۔۔ایکبار پھر ٹرین ایک جھٹکے سے رک گئی۔۔۔اس بار باھر کینو سے لدے باغات تھے۔۔۔۔ٹرین کی زنجیر کھینچ کر۔۔۔۔طالب علم۔۔۔۔باغوں سے کنو اتارنے چلے گئے تھے۔۔۔۔
اتنے سارے ھجوم کے آگے ریلوے کا عملہ بھی بے بس تھا۔۔۔۔سارا سفر ایسے ھی گزرا۔۔۔۔دو دن بعد کراچی پہنچے۔۔۔۔
ابھی ابھی صبح ھوئی تھی۔۔۔۔ھر طرف جگمگ کرتی روشنیاں تھیں۔۔۔سارے شہر پر ایک خواب آلود سحر طاری تھی۔۔۔۔جنوری کی خنک ھوا ۔۔۔نے ماتھا چوما۔۔۔۔تو اس شہر سے عشق کا آغاز ھوا۔۔۔۔
مجھے شہر ، دریا ،پہاڑ اور کبھی کبھار درخت بھی اپنے سحر میں جکڑ لیتے ھیں اور میں مدتوں ان میں مبتلا رھتی ھوں۔۔۔۔
طالبات کو ایک پہاڑی پر واقع ھوسٹل میں ٹھہرایا گیا۔۔۔۔جبکہ طلبا کے لیے مختلف جگہوں پر انتظام کیا گیا تھا۔۔۔۔کراچی کے انتظامیہ لڑکے بہت مستعد تھے۔۔۔۔
انھوں نے بتایا کہ ھم لوگ صبح آٹھ بجے تک تیار رھیں۔۔۔۔کنونشن میں جانے کے لیے۔۔۔۔گاڑیاں آ جائیں گی۔۔۔میں نے کمرے میں پہنچتے ھی ۔۔۔۔ ٹھنڈے پانی سے نہا لیا۔۔۔۔تاکہ راستے کا گرد و غبار دھل جائے۔۔۔اور کنونشن میں ھم تھکے ھوئے نا دکھائی دیں۔۔۔۔
اس کے بعد کچھ ھوش نہیں رھا۔۔۔۔جب آنکھ کھلی تو ایک سانولی سلونی۔۔۔۔خوبصورت آنکھوں والی۔۔۔لڑکی میرے پاس بیٹھی تھی۔۔۔۔اس نے بتایا سب لوگ کنونشن میں جا چکے ھیں۔۔۔۔آپ کو تیز بخار تھا۔۔۔۔اس لیے میں آپ کے پاس رکی ھوں۔۔دو بار ڈاکٹر بھی آ کر آپ کو دیکھ چکے ھیں۔۔۔۔
اس پیاری لڑکی کا نام ساوتری تھا۔۔۔اور وہ حیدر آباد سے آئی تھی۔۔۔۔اس نے بتایا۔۔۔اس کی والدہ حیدر آباد ریڈیو پر کام کرتی ھیں۔۔۔۔
کراچی میں کنونشن کے دن کیسے گزرے۔۔۔کیا ھوا مجھے کچھ معلوم نہیں۔۔۔۔لیکن ساوتری میری دیکھ بھال کرتی رھی۔۔۔
کنونشن انتظامیہ کے لوگ میرا حال ہوچھتے رھے۔۔۔اور ڈاکٹر بھی مجھے چیک کرنے آتے رھے۔۔۔۔
واپسی کے سفر میں۔۔۔۔زیادہ خوارئ نہیں ھوئی۔۔۔شاید سب لوگ تھک چکے تھے۔۔۔۔ٹرین کہیں رکے بغیر وقت سے پہلے لاھور پہنچ گئی۔۔۔۔
ساوتری سے کئی برس خط کے ذریعے رابطہ رھا۔۔۔۔
حیدرآباد ریڈیو سے چار دوست۔۔۔۔لاھور آئے تھے۔۔۔
محمد علی۔۔۔مصطفے قریشی ۔۔۔رفیق احمد وڑائچ۔۔۔طاھر رضوی۔۔۔
محمد علی لاھور آکر لاھور ریڈیو سے وابستہ ھوئے۔۔۔ذیڈ اے بخاری کی شاگردی اختیار کی۔۔۔۔اور پھر فلمی ھیرو بن کر پاکستانی فلموں میں راج کیا۔۔۔ مقبول ترین فلمی ھیروئن زیبا بیگم سے شادی کی۔۔۔۔اس فلمی جوڑے نے علی زیب ۔۔۔کے نام سے اپنی پہچان بنائی۔
مصطفے قریشی بھی فلمی دنیا میں شامل ھوئے۔۔۔اور مقبول ولن بن کر کئی دھائیوں تک فلموں میں کام کیا۔۔۔ ان کی بیگم روبینہ قریشی حیدر آباد ریڈیو پر گلوکاری کرتی تھیں۔۔۔
رفیق احمد وڑائیچ پی ٹی وی پر کلرک بھرتی ھوئے۔۔۔پھر پروڈیوسر بنے۔۔۔ پروگرام مینجر ۔اور جنرل مینجر کے عہدے تک پہنچے۔۔۔۔
گڑھی شاھو کے کرایے کے مکان سے ڈیفنس میں گھر بنایا۔۔۔زیبا بیگم، محمد علی، مصطفے قریشی اور روبینہ قریشی سے میری ملاقات۔۔۔۔ان کے گھر پر ھی ھوئی
طاھر رضوی پی ٹی وی کے پروڈیوسر بنے۔۔۔۔ایک پروفیسر خاتون سے شادی ھوئی۔۔۔
ضیا الحق کے مارشل لا کے خلاف احتجاج کرنے والے پی ٹی وی کے کارکنوں میں شامل تھے۔۔۔نوکری سے برطرف ھوگئے۔۔۔۔
برسوں بعد بحال ھوئے۔۔۔۔۔بیوی وفات پا گئی۔۔۔۔دو بیٹیاں تھیں ۔۔۔اولاد نرینہ نہ تھی۔۔۔دوبارہ کراچی واپس چلے گئے۔۔۔۔
ان چار لوگوں میں سے محمد علی اور رفیق وڑائیچ وفات پا چکے ہیں۔۔۔۔۔مصطفے قریشی بفضل خدا ٹھیک ھیں۔۔۔۔لیکن طاھر رضوی کے بارے میں عرصے سے کچھ خبر نہیں۔۔کہ وہ کس حال میں ھیں۔۔؟
(جاری ہے)
نیلما ناہید درانی

You might also like
Loading...