کُچھ کھٹی میٹھی یادیں (۴۶)


نیلما ناہید درانی
یونانی دیوتا یا پری پیکر۔۔۔۔۔ وزیر اعظم
وہ تالیاں بجا رہی تھیں ۔۔۔ہنس رہی تھیں۔۔۔گا رہی تھیں۔۔۔اور پھر منتیں کر رہی تھیں۔۔۔۔ایک بار۔۔۔بس ایک بار۔۔۔وہاں تک جانے دو۔۔۔۔جہاں وہ شہزادہ کھڑا ہے۔۔۔۔یا پویلین کے آس پاس۔۔۔۔اس کی ایک جھلک دیکھنے دو۔۔۔۔قریب سے۔۔۔ بس ایک جھلک۔۔۔۔ دیکھو ہم کالج سے کلاسیں چھوڑ کر آئی ہیں ۔۔۔اس کو دیکھنے کے لیے۔۔۔۔۔۔کچھ دیر بعد ہمارے بابا یا بھائی ہمیں لینے آجائیں گے۔۔۔۔۔
آپ کتنی اچھی ھیں۔۔۔آپ کتنی سندر ھیں۔۔۔۔یہ پولیس یونیفارم آپ پر بہت جچتا ہے۔۔۔۔بس ایک بار ۔۔۔اس کو قریب سے دیکھنے دو۔۔۔۔کتنا ظالم ہے فیلڈنگ کے لیے بھی گراونڈ کے دوسری طرف کھڑا ہوتا ہے۔۔
کرکٹ میچوں کے دوران میری ڈیوٹی اکثر وی آئی پی لاونج میں لگتی۔۔۔۔۔میں جب بھی اپنی ساتھی افسروں سے ملنے خواتین کے حصے کی طرف جاتی تو یہ مناظر مجھے گھیر لیتے۔۔۔۔وہ سب بہت حسین تھیں، نوخیز تھیں۔،نو عمر تھیں۔۔۔۔ان کی موجودگی سے سارا سٹیڈیم رنگ اور خشبو سے بھر جاتا۔۔۔۔ان کی ھنسی، ان کے قہقہے۔۔۔۔ان کے گیت۔۔ان کی تالیاں۔۔۔۔۔وہ ہی تو میرے شہر کی رونق تھیں ۔۔۔جو اس کی ایک جھلک دیکھنے کو جمع ھوتیں۔۔۔۔۔۔میں ھنس ھنس کر ان کو ٹالتی رہتی۔۔۔۔وہ میرا ھاتھ پکڑ لیتیں۔۔۔۔۔گھٹنوں کو ھاتھ لگاتیں۔۔۔۔پیارے پیارے ناموں سے پکارتیں۔۔۔۔دیکھو آپ بھی تو ھمارے جیسی ہو۔۔۔۔ھماری ہم عمر۔۔۔۔پھر آپ سمجھتی کیوں نہیں۔۔۔۔۔کیا آپ کو وہ اچھا نہیں لگتا۔۔۔آپ تو اس کے قریب جا سکتی ھیں۔۔۔وی وی ائی پی گیٹ۔۔۔پویلین کے پاس۔۔۔۔بس ھمیں ساتھ لے جائیں۔۔۔۔یا پھر ھماری آٹو گراف بک پر اس کا آٹو گراف لا دیں۔۔۔۔۔
عاصمی خان سب انسپکٹر ان سے آٹو گراف بکس لے لیتی۔۔۔۔میں اسے پوچھتی ایسا کیوں کر رھی ہو۔۔۔وہ کہتی یہ ماننے والی نہیں ھیں۔۔۔اب آرام سے بیٹھ جائیں گی۔۔۔۔ شام کو واپس کر دیں گے۔۔۔
میں واپس اپنے ڈیوٹی پوائنٹ وی وی ائی پی لاونج میں آجاتی۔۔۔۔میچ کا وقت ختم ھوتا تو ھم اپنی بانہوں کا حصار بنا کر پویلین گیٹ کے باھر کھڑے ھو جاتے۔۔۔عوام کا ہجوم گیٹ کے باھر سمٹ آتا۔۔۔۔
کھلاڑی گزرتے رہتے۔۔۔کچھ دیکھتے، کچھ ہاتھ ہلاتے۔۔۔مگر وہ سب سے لاپرواہ اپنی ہی دھن میں مگن۔۔۔بے نیاز سا ۔۔۔بغیر کسی طرف دیکھے گزر جاتا۔۔۔۔لڑکیاں جو کھیل ختم ھوتے ھی یہاں آچکی ھوتیں۔۔۔ایک دوسرے کو دھکے دیتیں۔۔۔شور مچاتیں۔۔۔نعرے لگاتیں۔۔۔۔مگر وہ نظر اٹھا کر بھی نا دیکھتا۔۔۔۔مغرور کہیں کا۔۔۔۔۔۔کراچی سے نکلنے والے ماہنامے ” کرکٹر” کے ٹائٹل پر اس کی تصویر چھپی۔۔۔تو ھر کسی کے ھاتھ میں وہ رسالہ نظر آیا۔۔۔۔جس میں اسے ” یونانی دیوتا ” لکھا تھا۔۔۔
ان دنوں پاکستانی کرکٹ ٹیم سٹارز سے بھری ھوئی تھی۔۔۔مشتاق محمد۔۔جاوید میاں داد۔ ماجد خان۔۔وسیم باری۔ ظہیر عباس۔ آصف اقبال۔۔۔۔۔عمران خان
بھارت کی ٹیم آئی تو۔۔۔سنیل گواسکر۔۔کپل دیو۔۔کرمانی۔ بشن سنگھ بیدی بھی آئے۔۔۔۔میری ڈیوٹی صدر پاکستان ضیاالحق کے ساتھ تھی۔۔۔بھارت سے منصور پٹودی اور ان والدہ۔۔بیگم نواب پٹودی بھی میچ دیکھنے آئی تھیں۔۔۔فلمی اداکاروں میں۔۔منوج کمار اور شتروگھن سنہا موجود تھے۔۔۔مجھے سارا وقت وی وی ائی پی لاونج میں رہنا پڑا۔۔۔۔لڑکیوں کے اصرار پر سب انسپکٹر شگفتہ نے کپل دیو سے آٹو گراف لے لیا۔۔۔کسی اخباری فوٹوگرافر نے یہ تصویر بنا لی جو دوسرے روز اخبار میں چھپ گئی۔۔۔۔۔شکر ہے اس دور میں یہ میڈیا نہیں تھا صرف ٘پی ٹی وی تھا۔۔جو اپنے تین کیمروں سے میچ کی کوریج کرتا تھا۔۔۔ورنہ نجانے اس واقعہ کو کس کس طرح اور کس کس اینگل سے ٹی وی پر دکھایا جاتا۔۔۔اور اس پر کس کس طرح کے تجزیے ہوتے۔۔۔
شگفتہ کے خلاف انکوائری ہوئی۔۔۔اس کو ایس ایس پی لاھور سعادت اللہ خان کے سامنے پیش کیا گیا۔۔۔جنہوں نے یہ کہہ کر انکوائری داخل دفتر کر دی۔۔۔کہ آئیندہ ڈیوٹی کے دوران کسی کرکٹر سے بات نہ کریں۔۔خاص طور پر بھارتی کرکٹرز سے دور رہیں۔۔۔۔
سیالکوٹ میں پاکستان اور ویسٹ انڈیز کی کرکٹ ٹیموں کے درمیان میچ تھا۔۔۔۔مجھے خواتین پولیس کی انچارج ھونے کے ناطے جانا پڑا۔۔۔۔ھماری رہائش کابندوبست گورنمنٹ گرلز کالج میں لڑکیوں کے ھاسٹل میں تھا۔۔۔یہاں بھی لڑکیوں کی وہی فرمائشیں تھیں۔۔۔۔بس ایک بار اس سے بات کرنے دیں۔۔۔یا ھمیں اس جگہ بیٹھنے دیں جہا ن سے وہ دکھائی دے۔۔۔۔ھم تو صرف اس کو دیکھنے جائیں گی۔۔۔سیالکوٹ میں سٹیڈیم نہیں تھا۔۔۔یہ میچ ایک گراونڈ میں کھیلا جانا تھا۔۔۔اس لحاظ سے یہ ڈیوٹی زیادہ مشکل تھی۔۔۔۔
دوسری صبح میچ شروع ہوا۔۔۔
ویسٹ انڈیز کے کپتان کلائیو لائیڈ کی وجاھت کے سامنے سارے گورے چٹے پاکستانی پھیکے لگ رہئے تھے۔۔۔مگر لڑکیاں اسی کے گن گا رہی تھیں۔۔۔وہ جو سب سے الگ تھا۔۔۔چنی آنکھوں والا۔۔۔جس کی آنکھیں دھوپ میں بند دکھائی دیتی تھیں۔۔۔یا شاید وہ اتنا خود پرست تھا۔۔۔کہ اپنے علاوہ کسی کو دیکھنا نہیں چاھتا تھا۔۔۔۔
ویسٹ انڈیز ٹیم کے مینجر سابق کپتان۔۔روھن کنہائی۔۔نے پاس سے گزرتے ھوئے میری تعریف کی۔۔۔۔” میں نے یونیفارم میں اتنی خوبصورت آفیسر کبھی نہیں دیکھی۔”۔۔۔ میں شکریہ بھی نہ کہہ سکی۔۔۔کیونکہ ہمیں ان سے بات کرنے کی اجازت نہیں تھی۔۔۔۔۔۔۔
ہمارے دوپہر کے کھانے کا انتظام سیالکوٹ کے ایس ایس پی طاھر انوار پاشا کی طرف سے تھا۔۔۔۔گرلز ھاسٹل میں رھائش اور ناشتہ کا بندوبست بھی انھوں نے کیا تھا۔۔۔شام کو میچ ختم ھوتے ھی ھم لاھور کی طرف روانہ ھوئے۔۔۔۔۔ھماری یہ ڈیوٹی ایک پکنک کی طرح یادگار تھی۔۔۔گو ھاسٹل کی لڑکیاں ھم سے ناراض تھیں کہ ھم نے ان کو گراونڈ میں سختی سے روکے رکھا تھا۔۔۔۔
پاکستان ٹیلی ویژن کے جنرل مینجر محمد نثار حسین نے پی ٹی وی پر ایک نئے پروگرام کا آغاز کیا۔۔۔۔سٹوڈیو ون۔۔۔اس کے میزبان محمد ادریس تھے۔۔۔۔محمد ادریس صحافی تھے۔۔۔روزنامہ پاکستان ٹائمز میں کام کرتے تھے۔۔۔ کرکٹ کے کمینٹیٹر تھے۔۔۔ان کے پروگرام میں مختلف شعبوں کے لوگوں کو بلایا جاتا۔۔۔ان سے بات چیت کی جاتی۔۔۔۔میں ان دنوں پاکستان ٹیلی ویژن پر اناونسر تھی۔۔۔دن میں پولیس کی ڈیوٹی کرتی۔۔شام کو ٹیلی ویژن پر اناونسمنٹ کرتی۔۔۔۔جن دنوں پولیس سے چھٹی ھوتی تو کرکٹ کے ٹسٹ میچوں کی ٹرانسمیشن پر ڈیوٹی لگ جاتی۔۔۔۔
یہ دن میرے لیے بہت بورنگ ہوتے۔۔۔صبح سویرے تیار ھوکر کیمرے کے سامنے اناونسمنٹ کرنی ھوتی۔۔۔۔” ھم آپ کو ۔۔۔۔۔سٹیڈیم لیے چلتے ہیں ۔۔جہاں سے آپ ٹسٹ میچ کے پہلے دن کا میچ ملاحظہ فرمائیں گے۔۔۔۔اور پھر سپانسر کرنے والوں کی فہرست بتانی پڑتی۔۔۔۔”
بارہ بجے کھانے کے وقفے کی اناونسمنٹ کے بعد دو تین گانے لگائے جاتے۔۔۔۔اور پھر ناظرین کو دوبارہ سٹیڈیم چلنے کی اناونسمنٹ کرنی ہوتی۔۔۔۔
شام پانچ بجے میچ کے اختتام پر ناظرین سے اجازت لیتے۔۔۔۔اور ٹی وی کی باقاعدہ نشریات کا آغاز ھوتا۔۔۔۔
سارا دن صوفے پر بیٹھ کر میچ دیکھنا اور اناونسمنٹ کا انتظار کرنا۔۔۔کافی تھکا دینے والا کام تھا۔۔۔ مگر جب آھستہ آھستہ کھیل کی سمجھ آنے لگی۔۔۔کرکٹرز کے نام اور چہرے جانے پہچانے لگنے لگے۔۔۔تو بوریت کم ھونے لگی۔۔۔ ایک شام میں پی ٹی وی میک اپ روم کے باھر کوریڈور میں کھڑی تھی کہ اچانک وہ سامنے آگیا۔۔۔دراز قد، گھنگریالے بالوں مندی ہوئی آنکھوں سے ادھر ادھر دیکھتا ھوا۔۔۔”سٹوڈیو ون کہاں ہے۔”۔۔اس کے ساتھی نے پو چھا۔۔۔
میں نے دائیں طرف اشارہ کیا اور وہ دونوں اس طرف چلے گئے۔۔۔۔پوچھنے والا ماجد خان تھا۔۔۔ڈاکٹر جہانگیر خان کا بیٹا۔۔۔اس کا خالہ زاد بھائی۔۔۔۔پروگرام کی ریکارڈنگ شروع ھوئی۔۔۔۔۔محمد ادریس نے کہا۔۔۔۔کیری پیکر ھمارے پری پیکر لے گیا ہے۔۔۔۔آج میں نے اپنے پروگرام میں ان ” پری پیکروں کو مدعو کیا ہے۔۔”
2009 میں ۔۔۔۔میں یو این مشن پر سوڈان گئی تو گھانا سے آئی ھوئی پولیس آفیسر انجلینا نے مجھے کہا۔۔۔۔پلیز عمران خان تک میرا سلام پہنچا دینا۔۔۔۔۔۔اس کے ساتھ کھڑی سنتھیا جس کا تعلق نمبیبیا سے تھا۔۔۔ھماری طرف متوجہ ہوئی۔۔۔۔۔اس نے کہا۔۔۔۔میں بھی اس کی فین ہوں میرا سلام بھی ضرور پہنچانا۔۔۔۔۔
جب وہ وزیر اعظم بنا تو میں نے ان کو واٹس ایپ پر مبارکباد دی۔۔۔۔۔کہ ان کا نادیدہ محبوب اب پاکستان کا وزیر اعظم بن گیا ہے۔۔۔۔۔وہ دونوں خوشی سے نہال ہو گئیں۔۔۔۔
2019 یو این جنرل اسمبلی میں اس کے دلیرانہ خطاب کے بعد۔۔۔۔اس کے دشمن بھی اس کی تعریف کرنے پر مجبور ہو چکے ہیں۔۔۔۔۔ماضی کا پری پیکر۔۔۔۔عالم اسلام کا قوی پیکر بن گیا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نیلما ناہید درانی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  جاری ہے۔

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post