Torment of the Morning

Translated into English: Salma Jilani

Poet: Younus Khayyal

 Torment of the Morning

Trembling
Office door
deserted Table
as if opened the file will burst
like a bomb explosion
The sound of bells
sharper than the Kalashnikov’s tarh tarh tarh tarh
if I write with pencil
seems like a sanguinary writing
The smell of gunpowder in breaths
and
in telephone wires
screaming human noise
I’m wondering why is that so
why are my feet so cumbersome?
Why are my eyes burning?
Perhaps
this morning the first thing I did
read today’s news paper
صبح کا عذاب
(شاعر : یونس خیال)
دفتر کا دروازہ
لرزاں
ٹیبل ویراں
فائل کھولوں تو پھٹ جائے
جیسے بم کا ایک دھماکا
گھنٹی کی آواز
کلاشنکوف کی تر تر ، تر تر سے بھی تیز
پنسل سے لکھوں تو جیسے
اک خونی تحریر
سانسوں میں بارود کی بُو
اور
ٹیلیفون کے تاروں میں ہے
چیختے انسانوں کا شور
سوچ رہا ہوں ایسا کیوں ہے
میرے پاؤں بوجھل کیوں ہیں؟
میری آنکھیں جل تھل کیوں ہیں ؟
میں نے شاید
آج سویرے ، سب سے پہلے
اک تازہ اخبار پڑھا تھا ۔

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post