بہتان


شاعرہ: نائلہ خاور 
پیالہ بھر مصفّا پاک
آبِ شفاے خاص میں
محض قطرہ برابر زہر بھی
مل جاے تو
دھرا رہ جاتا ہے سب کچھ
مصفّا ، پاک ، شفاے خاص
باقی کچھ نہیں بچتا
بدل دیتا ہے یکسر یہ
مقاماتِ ازل کو یوں
مصفّا صاف نہیں رہتا
نہ کچھ پھر پاک بچتا ہے
اچھی بھلی کلکارتی جو زندگانی تھی
وہ اک ساعت میں رک جاتی ہے
جامد موت کے سناٹے میں
یونہی پل بھر میں اتر جاتی ہے
ذرا سا زہر کا قطرہ
مقاماتِ ازل کے سب چہرے
بدل دینے میں ماہر ہے۔

You might also like
  1. Mian Gulzar Ali says

    بہت عمدہ تحریر

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post