The boatman’s blues

Poem: The boatman’s blues

Translated  by Salma Jilani

Urdu Poem by Khalid Mahmood

Once river was the boatman’s estate
Now dogs sleep on the river’s coffin
The boatman has exhausted
while wailing about the river
His back been bent with huge unseen lumber
There is no corner left of the river’s shroud
Where the boatman’s hunger hasn’t been recorded
On the dried body of the river
the boats lying still with thirst
On the sandy grounds there is no one to remember the boatman
Now the nightmares of broken rudders haunt him
There is no one to claim his legacy
On the river’s muddy bed hope has ceased to float
The boatman feels blues
 ملاح اداس ہے
از : خالد محمود
کبھی دریا ملاح کی جاگیرتھا
اب دریا کے تابو ت پر
کتے سوئے رہتے ہیں
دریا کا نوحہ کہتے کہتے
ملاح تھک گیا ہے
ایک انجانے بوجھ سے اس کی کمر دوہری ہوگئی ہے
دریا کے کفن کا کوئی کونا ایسا نہیں رہا
جس پر ملاح کی بھوک درج نہ ہو
دریاکےسوکھے بدن پر
پیاسی کشتیاں بے سدھ پڑی ہیں
ریتلی زمین پر ملاح کا نام لیوا کوئی نہیں ہے
اب اسے ٹوٹے ہوئے پتواروں کے ڈراونے خواب دکھائی دیتے ہیں
اس کی وراثت کا کوئی دعویدار نہیں ر ہا
دریائی زمین پر اس کی امیدوں نے تیرنا چھوڑ دیا ہے
ملاح اداس ہے

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post