پاگل خانہ : فریدہ غلام محمد

وہ ٹھیک شام چھ بجے پاگل خانے کے سامنے اتری تھی ۔جاڑے کے دن تھے اچھی خاصی سردی تھی ،شال کو اچھی طرح لپیٹ کر وہ گیٹ کراس کر گئی ،گیٹ والے نے اسے نہیں روکا ،یہ اسکا ہر ہفتے کا معمول تھا ،اس کے ایک ہاتھ میں شاپر اور دوسرے ہاتھ میں ٹفن کا ڈبہ تھا ۔۔۔۔۔۔ اندرونی دروازے سے ایک خاتون نے اس کے ہاتھ سے اشیاء لے لیں اور دونوں ساتھ ساتھ چلتیں ایک اندھیری کوٹھری کے سامنے پہنچ گئیں ۔۔اس عورت نے دروازہ کھولا ۔۔۔۔۔وہ بےتابی سے اسکی طرف بڑھی ۔

’’میری سنبل ،میری جان‘‘ ۔۔۔۔۔اس لڑکی نے آواز سن کر مڑ کر دیکھا ۔۔۔۔۔۔ہائے کتنی خالی آنکھیں ۔۔۔۔چہرہ زرد ۔۔۔۔۔بکھرے بال۔۔۔۔آپ ماما ہیں نا میری ۔۔۔۔۔۔۔آواز میں لرزش تھی ۔۔۔۔’’ہاں میری بچی ادھر آؤ‘‘۔۔۔۔۔اس نے بازو پھیلا دئیے ۔۔۔وہ ان کی آغوش میں آگئی۔۔۔۔۔۔۔

’’آپ لے جائیں مجھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماما یہ بہت بری جگہ ھے ۔۔۔۔۔۔یہاں شور سے میرے کان پھٹتے ہیں مگر جب میں بھی چیختی ھوں تو مزہ آنے لگتا ھے‘‘۔۔۔۔اس کی آنکھیں رو رہی تھیں ،دل پھٹ رہا تھا اچھا زرا روشنی کرو ۔۔۔۔۔اس نے خاتون سے کہا واش روم میں اسکا منہ دھلوایا ۔برش کروایا پھر واپس آکر اس کے بال بنانے لگیں ۔۔۔۔۔۔لانبے بال کافی الجھے ھوئے تھے ۔۔۔۔۔ پھر لوشن ہاتھ میں لے کر اس کے چہرے پر لگایا ۔۔۔۔۔۔۔ارے میری جان کتنی پیاری لگ رہی ھے ۔۔ اس نے سنبل کو بےساختہ پیار کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کھانا لے آؤ ؟خاتون نے جلدی سے پلیٹس لگائیں ۔۔۔کھانا لگایا اس دوران انھوں نے خاتون کو واش روم صاف رکھنے پر شاباش بھی دی ۔۔۔چلو چاول کھاؤ ۔۔۔ سنبل چاول کھانے لگی ۔۔۔وہ چپ چاپ دیکھتی رہی ۔۔۔۔۔پھر اس نے میٹھا لیا ۔۔۔۔۔۔اس کا منہ بھر گیا تھا ۔۔۔۔ اس نے جلدی سے تولیے سے اس کا منہ صاف کیا ۔ہاتھ صاف کیے ۔۔ وہ خاتون شاید پہلے سے جانتی تھی ۔۔۔۔ کپڑے ۔۔ گندے برتن سب شاپر میں ڈال کر باہر چلی گئ اب وہ اور سنبل تھے ۔۔۔۔۔۔

’’ماما میں نے پڑھا تھا اور کتنا؟ اے بی سی تک۔۔۔نہیں زیادہ میری آنکھیں اس ماسڑ آف کمپوٹر کے سامنے جھک گئیں آوے اے سے زیڈ تک نا وہ مسکرائی‘‘

ہاں ان کے آنسو رخساروں پر بکھر گئے ۔ضبط سے آنکھیں انگارہ تھیں ۔۔ وہ 25سال کی نوجوان بچی ان سے جو سوال کر رہی تھی ،یہ اسکا معمول تھا ۔۔۔ اچھا پھر کب آئیں گی ۔۔۔ جلدی انشااللہ ۔۔۔۔ میں نے سونا ھے ۔۔۔۔ ہاں پہلے یہ میڈیسن کھا لو ۔۔۔۔انھوں نے پیار سے اس کے بالوں میں ہاتھ پھیرا۔۔ وہ اٹھ بیٹھی ۔۔۔۔دوا کھائی پھر ان کی گود میں سر رکھ کر آنکھیں موند لیں ۔۔ ان کو معلوم تھا اب وہ سو جائے گی۔۔۔۔ انھوں نے اس کے پھول جیسے چہرے کو دیکھا ۔۔۔۔کتنی ذہین ،کتنی چلبلی تھی ۔۔۔۔۔۔زندگی سے بھرپور۔۔۔۔۔بلند ارادے ۔۔۔۔۔۔۔مودب ۔۔۔سب کی جان ۔

’’ماما وہ لڑکا بہت اچھا ھے آپ اس سے مل لیں اگر اچھا لگے تو ٹھیک وگرنہ نہ کر دیجئے گا‘‘

روز ہی عفان کا ذکر ھوتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔انھوں نے اس کے بابا سے ذکر کیا تو انھوں نے یہی کہا وہ مل لے پہلے ۔۔فائنل ھو گیا تو پھر وہ بھی اوکے کر دیں گے ۔۔۔۔ آج شام وہ آنے والا تھا ۔۔۔انھوں نے خاص طور پر چائے کے لوازمات خود تیار کئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔مگر شام رات میں بدلی وہ تو نہیں آیا البتہ وحشت زدہ سنبل آ گئی ۔۔۔۔۔۔کیا ھوا ۔۔۔ ماما۔۔۔وہ ان کی بانہوں میں جھول گئ ۔۔۔۔۔۔۔دو دن بعد جب ہوش میں آئی تو وہ ٹوٹے پھوٹے لفظوں میں اتنا کہہ سکی ۔۔۔۔۔۔۔وہ عفان نے کہا جو لڑکیاں پہلے ہی اپنی عزت گنوا دیتی ہیں ان سے کون شادی کرتا ھے ۔۔۔۔۔ اس پر تو جیسے کئی طوفان آ کر گزر گئے ۔۔ کب بھول ھوئی مجھ سے ۔۔۔ سنبل نے اتنی بڑی بھول کی اور کیوں ۔۔۔۔۔۔۔۔ اس کے بعد یکے بعد دیگرے سنبل نے خود کو مارنے کی کوشش کی ۔۔۔۔۔۔اس کے پاپا اس بات سے لاعلم تھے مگر اس کی ذہنی حالت خراب ھوتی جا رہی تھی ۔۔۔۔۔کوئی دوا اسے سکون نہیں دے رہی تھی ۔۔۔۔۔۔آخر خاموشی سے اسے مینٹل ہاسپٹل داخل کروا دیا گیا ۔۔۔۔۔ان کو کسی پل چین نہیں تھا ۔۔۔۔وہ ڈپٹی کمشنر تھیں ۔۔۔ انھوں نے بہت جلد عفان کو ٹریس کروا لیا ۔۔۔وہ خوفزدہ ان کے سامنے تھا اور وہ اسے دیکھ رہی تھیں خاموشی سے ۔۔۔۔ان کی اکلوتی اولاد اس کی ہوس کی بھینٹ چڑھی تھی ۔۔۔۔۔وہ پاگل خانے کی تاریک کوٹھری میں تھی ۔۔۔۔۔۔وہ جیتے جی مر گئے تھے ۔۔۔۔۔۔اسکے بابا کا سماجی حلقہ نہ ھونے کے برابر رہ گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔وہ اعتراف کر رہا تھا اس نے کس طرح جوس میں نیند کی گولیاں ڈالیں ۔۔ مگر اسکو چھوا نہیں ۔۔۔۔۔۔ جاگنے پر اسکو بتایا تو ٹوٹ گئی ۔۔اس نے ایسا اس لئے کیا کیونکہ وہ شادی کے قابل ہی نہ تھا وہ اکثر معصوم لڑکیوں کو شکار کر کے جھوٹ بول کر اپنی تسکین کرتا تھا ۔۔ لیکن ہر لڑکی سنبل نہیں ھوتی وہ پاگل ھو گئی میں نے اسکے چہرے پر طمانچہ مارا ۔۔۔۔۔نکل جاؤ اور کبھی نظر نہ آنا۔۔۔۔۔ اس کے بعد کتنا عرصہ سنبل کو جا کر سمجھاتی تمہاری عزت محفوظ ھے تم نے ایک جھوٹ پر یقین کیا ۔۔ وہ میری اس بات پر بس ٹکر ٹکر دیکھتی ۔۔۔۔۔۔۔۔اس کا معمول تھا دو دن چھوڑ کر اس کے پاس جاتیں ۔۔۔۔۔گھر آکر پھر اس کے پاس جانے کا انتظار کرتیں ۔۔۔۔۔نجانے ایسا کیوں ھو گیا ۔۔۔۔۔۔وہ اکثر خود سے سوال کرتیں ،کیا عفان جیسے لڑکوں کی جگہ پاگل خانے میں نہیں ھونی چاہئے جو اپنی خامی کو اسطرح چھپاتے ہیں ۔۔کیا ان کے ماں باپ۔ انکا علاج نہیں کروا سکتے ،سنبل جیسی معصوم بچیاں ذہنی بیمار ھو کر اندھیروں میں کھو جاتی ہیں کیا ایسی معصوم بچیوں کا کوئ خون بہا ھےیا نہیں ؟

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post