لاحاصلی : فریدہ غلام محمد

وین اپنی مخصوص رفتار سے چل رہی تھی ۔۔۔۔۔ مگر دھیان اِس سفر سے زیادہ اُس سفر پر تھا جو میں اب تک کر چکی تھی ۔۔ زندگی کا سفر جس میں دکھ زیادہ سکھ کم تھے ۔۔۔۔۔جس میں اپنے کم پرائے زیادہ تھے ،جس میں وچھوڑے زیادہ تھے ،آنسو زیادہ تھے ۔۔۔۔۔۔شام گہری ھو چلی تھی ۔۔۔ میں نے کھڑکی سے باہر جھانکا ۔۔۔ دور دور اندھیرا بکھرتا جا رہا تھا مگر اچانک کسی جگہ سے کوئی روشنی نظر آتی تو مجھے لگتا شاید ابھی امیدوں کے چراغ بجھے نہیں ،زندگی ابھی بھی کہیں چھپ کے مسکرا رہی ھے۔

سڑک سے زرا پرے بنے گھروں میں لگے بلب بھی غنیمت ھوتے ہیں میں نے پھر سیدھے ھو کر آنکھیں موند لیں ۔۔۔۔رابی۔۔۔۔۔ میری محبت پر یقین ھے نا تم کو ۔۔۔۔۔۔۔دو خوبصورت آنکھوں میں ،میرا جواب سننے کا اشتیاق تھا ۔۔۔میں نے بہت سنجیدگی سے اسے دیکھا اورکہا۔

’’میں محبت نہیں کر سکتی‘‘

۔۔۔۔۔کیوں؟

’’ارے بدھو محبت ھوتی ھے ،یہ کی نہیں جاتی‘‘

اچھاچلو ایک بار چاند کی جانب دیکھو۔

ہم چھت کی منڈیر کے ساتھ ہی کھڑے تھے ۔۔۔ چودھویں کا چاند بہت خوبصورت لگ رہا تھا ۔۔ مگر میں نے بےنیازی سے کہا ۔

’’کیا دیکھوں اس میں بھی داغ ھے ۔‘‘

تم بہت عجیب ھو ۔۔۔ اب خفگی ظاہر ھو رہی تھی ۔۔۔۔میں عجیب و غریب ھوں۔
اچھا میری آنکھوں میں جھانکو۔ اس نے شانوں سے پکڑ کر مجھے اپنی جانب کیا اور میری آنکھوں نے اس کی آنکھوں میں جھانکا ۔۔۔ وہ آنکھیں نہیں تھیں ،سمندر تھا گہرا ۔۔۔ ہر جگہ میری محبت لکھی تھی ۔۔ میں پڑھ سکتی تھی ہر تحریر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کہاں ھو ۔۔۔ وہ فاتح عالم بنا میری آنکھوں کے آگے ہاتھ ہلا رہا تھا ۔۔۔ وہ جیت گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میں ہار گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔کچھ ہی دن بعد میرا بیاہ ھو گیا ۔۔۔ وہ گھر چھٹ گیا جہاں میرے بابا تھے ،جہاں میری معصوم باتیں تھیں ۔۔۔۔۔۔صحن میں لگا جھولا ۔۔۔بہنیں ماں سب کو چھوڑ کر میں داؤد کے ساتھ ہمیشہ کے لئے آئی تھی ۔۔۔۔۔۔               میری سوچیں سفر کر رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عورت کی کہانی بھی کیا ھے ۔ ایک گھر سے دوسرے گھر تک کا سفر اور بس ۔۔۔۔ محبت تو شاید اسی دن مر جاتی ھے جب وہ سمجھوتے میں بدلتی ھے اور سمجھوتے پر دستخط بھی شاید صرف عورت کے ھوتے ہیں ۔۔۔۔ اپنی عزت کی خاطر،بچوں کی خاطر،سماج کی خاطر ۔۔۔۔سمجھوتوں کے انبار لگے ھوتے ہیں ایسے میں محبت کہاں نظر آتی ھے ۔۔۔ اتنے انبار کے نیچے دفن ھو جاتی ھے ۔۔۔۔۔۔

وین ایک دم رکی ۔۔۔۔مسافر اتر رہے تھے ۔۔۔۔۔ میں بھی اتری ۔۔۔۔۔۔رات گہری ھو چلی تھی ،ھوا میں قدرے خنکی تھی میں نے سڑک کے اس پار دیکھا ۔۔۔ ہر طرف تاریکی نے ڈیرے ڈال رکھے تھے ۔۔۔۔۔۔ہمشیر جان ۔۔۔۔۔۔۔۔فروا کی آواز پر میں مڑی ۔۔ ارے تم لینے آئی ھوئی ھو ۔۔۔ ہاں جی آئیں گھر چلیں۔۔اس نے گاڑی کا دروازہ کھولا ۔۔۔۔۔۔ گھر ۔۔۔ میری سسکی نکل گئ ۔۔۔۔۔۔۔رونا نہیں ہمشیر شاید اس کی آواز بھیگی ھوئی تھی ۔۔ گاڑی پورچ میں رکی ۔۔۔۔ ماں اور فروا کے ساتھ باتوں میں وقت کا پتہ ہی نہیں چلا ۔۔۔ شاید ہم تینوں میں سے کوئی سونا نہیں چاہتا تھا ۔۔۔۔اپنے ہی گھر میں آخری رات کون چاہے گا سونا اماں آپ نے دکھی نہیں ھونا ۔۔۔ فروا کے ساتھ آپ بہت خوش رہیں گی ۔۔ پھر میرے سے تو روز بات ھوتی ھے نا ۔ میں نے ماں کے پاؤں چومے ۔۔۔ کتنے آنسو ان پیروں پر گر گئے ۔۔۔۔۔ مت رو میری بچی ۔۔۔۔۔ میری شہزادی ۔۔۔۔ انکے کمزور ہاتھ میرے سر پر تھے ۔۔ شہزادی کہاں اماں کنیز جس کو جاتے ہی دیوار میں چنوا دیا گیا ۔۔۔۔۔۔۔ یہ تو اس کی زندہ لاش ھےنجانے کتنی انار کلیاں ایسے ہی دیواروں میں چنوا دی جاتی ھوں گی اماں ۔۔۔ ہم تینوں رو رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔ اذان ھوئی تو جیسے تینوں ہوش میں آگئے۔۔۔۔۔۔۔تینوں نے وضو کیا ۔۔ نمازپڑھی ۔۔۔۔۔۔ میں اور فروا چند چیزیں ہی اٹھا پائیں کچھ تصویریں ۔۔ بابا کا کپ ۔۔حج کا بیگ ۔۔۔۔۔۔۔۔اماں کی جاءنماز ۔۔۔۔۔ داؤد اور رحمان بھی آ چکے تھے ۔۔۔۔۔۔باہر نیلامی کے لئے بولیاں لگ رہی تھیں ۔۔۔ ہمارے کانوں میں جیسے کوئی سیسہ انڈیل رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ میں کبھی بھی تم کو دکھ نہیں دوں گا رابی بھلا خود کو کون دکھ دیتا ھے ۔۔۔ ایک پیار بھرا جملہ ۔۔ماضی میں سے نکل آیا ۔۔۔ چالیس کروڑ کا معاملہ ھے مجھے بزنس میں روپے کی ضرورت ھے ۔۔۔۔۔ اماں ،فروا کے پاس چلی جائیں ۔۔۔۔۔یہ فرعون کے لہجے میں بولنے والا کون تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس گھر میں رکھا کیا ھے ۔۔۔۔ کوئی سونا وونا تو دفن نہیں کیا ھوا تمہارے باپ نے ۔۔۔۔۔۔۔۔توہین ،تحقیر اور دل کو چیر دینے والی باتیں ۔۔۔۔ میرے آنسو بہہ رہے تھے ۔۔۔۔۔مبارک ھو ۔۔۔۔۔۔دونوں آ گئے تھے ۔۔ چالیس کروڑ پر سودا ھو گیا ھے ۔۔۔۔۔۔۔اماں کا حصہ الگ کر کے ہم دونوں باہم رضامندی سے برابر لے لیں گے۔۔۔ میں نے دیکھا ۔۔۔ خوشی سے ان کے چہرے دمک رہے تھے ۔

’’میرا حصہ رابی اور فروا کو دے دو ۔۔۔۔ مگر یہ ان سے لینا نہیں ‘‘۔۔۔۔اماں نے ان سے کہا تو خوشی اور جھلکنے لگی ان کے چہرے پر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نجانے کیوں وہ زہر لگ رہے تھے مجھے ۔۔۔۔۔۔۔ ہم ذرا کچہری سے ھو آئیں فروا تم ان کو گھر لے چلو۔ آؤ ہمشیر آتی ھوں تم اماں کو گاڑی میں بٹھاؤ ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ جونہی اوجھل ھوئی ۔۔۔ میں چھوٹے بچوں کی طرح ہر کمرے میں بھاگی ۔۔ کہیں بابا کے ساتھ لڈو کھیل رہے ہیں،کہیں کرکٹ دیکھی جا رہی ھے ،کہیں مہمانوں کی ضیافت ھے،کہیں اماں آواز دے رہی ہیں میں پچھلے صحن میں آ گئی تم کیوں کھڑی ھو ؟آپ بھی آئیں نا ۔۔۔۔۔آتا ھوں بس یہ دو پودے لگا لوں میں ہر درخت سے لپٹ کر رو رہی تھی ۔۔۔۔ یہ سب اب نظر نہیں آئے گا اب مجھے ۔۔۔۔ کیوں آخر لوگ جذبات نہیں سمجھتے ۔۔۔۔۔۔۔درد کی آواز نہیں سنتے ۔۔۔ یہ نشانیاں روند دی جائیں گی کیوں ۔۔۔۔ میں پوچھنا چاہتی ھوں داؤد سے جو میرے قصیدے پڑا کرتا تھا ۔۔۔ جو مجھے ہیر خود کو رانجھا کہتا تھا ۔۔۔۔ پھر مجھے کیوں رلایا اس نے ساری عمر ۔۔۔۔۔۔ روپے ،محبت پر حاوی ھو گئے ۔۔۔۔ کیا محبت کو روپوں میں تولا جا سکتا ھے ؟کیا جذبات کی قیمت لگائی جا سکتی ھے ۔۔۔ کون جواب دے ۔۔۔۔ میں پھوٹ پھوٹ کر رو رہی تھی ۔۔۔ ہمشیر یہ لیں چادر ،فروا نے مجھے زمین سے اٹھایا۔۔۔۔ میرے آنسو صاف کئے ۔۔۔۔۔۔ مجھے چادر اڑائی اور میرا ہاتھ پکڑ لیا ۔۔۔ اسکا ہاتھ بھی ٹھنڈا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ دیکھیں ہمشیر ۔۔۔۔۔۔۔دکھ کو دل کے کسی کونے میں دفن کر دیں ۔۔۔۔۔ جینا سیکھیں ۔۔۔اماں کا حوصلہ دیکھیں ۔۔۔۔۔۔ یہی زندگی ھے ۔۔۔۔۔۔۔اس نے بھیگی آواز میں کہا ۔۔۔۔۔میں اسے یہ نہیں کہہ سکی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ کرب اپنی جگہ ۔۔۔۔۔۔ اور محبت کے مرنے کا غم اپنی جگہ ۔۔۔۔۔۔۔ اس بےحس اور خودغرض دنیا میں ہم جیسوں کی شاید کوئی جگہ نہیں ۔۔۔ ہمیں محبت کی مٹی سے بنایا گیا ۔۔ ہمیں تو وفا کرنے کے سوا کچھ آتا ہی نہیں ۔۔۔ میں خاموشی سے اماں کے برابر جا کر بیٹھ گئ ۔۔۔اور ان کے شانے پر سر رکھ کر آنکھیں موند لیں۔

 

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post