نعت : مقصود علی شاہ

مقصود علی شاہ
مقصود علی شاہ
سارے سخن نواز کمالات جوڑ لوں
ممکن نہیں کہ پھر بھی تری نعت جوڑ لوں
تُو تو عنایتوں کی سحر ہے، عطا کی شام
مَیں کیسے عرض باندھوں، سوالات جوڑ لوں
لمحوں کے اتصال سے ہوتی نہیں ہے نعت
کچھ ایسا التفات کہ دن رات جوڑ لوں
اے کاش پھر سے کوئی نویدِ کرم مِلے
اے کاش پھر سے خوابِ مُلاقات جوڑ لوں
خوشبو ہے کیسے دستِ طلب میں سمٹ سکے
سیلِ رواں کے آگے کہاں ہات جوڑ لوں
شاید طلوع ہونے کو ہے ساعتِ نوید
مَیں ریزہ ریزہ صورتِ ساعات جوڑ لوں
چمکی ہے شہرِ خواب میں میلاد کی گھڑی
تارِ نفَس سے جذبوں کی بارات جوڑ لوں
اک حرفِ نعتِ نُور کی تابش کے رو برو
قرطاسِ دل پہ عجز کے رشحات جوڑ لوں
جذبوں کی صوت صوت سے مدحِ نبی لکھوں
حرفوں کی جوت جوت سے سوغات جوڑ لوں
ممکن نہیں کہ منظرِ حیرت کی ہو نمود
میں گرچہ جلوہ گاہِ خیالات جوڑ لوں
کھُلتے ہی آنکھ تابِ نظر ٹوٹ جائے گی
اے خوابِ دید آ کہ کرشمات جوڑ لوں
تُو نُطق دے تو شوق کو تدبیرِ حُسن ہو
تُو حرف دے تو اذن سے جذبات جوڑ لوں
مقصودِ کائنات ہے وہ اسمِ لازوال
اس جانِ کائنات سے ہر بات جوڑ لوں

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post