پروین شاکر کے دس منتخب اشعار


شاعرہ : پروین شاکر
انتخاب از : سیماب شیخ
تجھے مناوں کہ اپنی اَنا کی بات سنوں
اُلجھ رہا ہے مرے فیصلوں کا ریشم پھر
         ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رَس پھر سے جڑوں میں جا رہا ہے

میں شاخ پہ کب سے پک رہی ہوں

          ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رکھاہے آندھیوں نے ہی ہم کو کشیدہ سر
ہم وہ چراغ ہیں جنہیں نسبت ہوا سے ہے
         ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ اتنی رات گئے کون دستکیں دے گا

کہیں ہوا کا ہی اُس نے نہ رُوپ دھارا ہو

         ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عقاب کو تھی غرض فاختہ پکڑنے سے
جو گر گئی تو یونہی نیم جان چھوڑ گیا
        ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چاند بھی میری کروٹوں کا گواہ

میرے بستر کی ہر شکن کی طرح

           ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ کہیں بھی گیا لوٹا تو مرے پاس آیا
بس یہی بات ہے اچھی مرے ہرجائی کی 
            ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اپنے قاتل کی ذہانت سے پریشان ہوں میں

روز اِک موت نئے طرز کی ایجاد کرے

            ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سورج بھی اس کو ڈھونڈ کے واپس چلا گیا

اب ہم بھی گھر کو لوٹ چلیں  شام ہو چکی

            ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تری ہنسی میں نئے موسموں کی خوشبو تھی

نوید ہو کہ بدن سے پُرانے خواب اُترے

You might also like

Leave A Reply

Leave Your Comments for this Post